NEWS LETTER
Usman Public School System - Campus 3 | 2021-2022

In the name of Allah, the Most Merciful, the Most Benevolent

VISION STATEMENT

Nurturing generations to serve the role as leaders of Ummah.

MISSION STATEMENT

To motivate the students in becoming future leaders, capable of providing guidance to the Muslim Ummah in all spheres of life and lead the contemporary world in accordance with the teachings of Islam.

CORE VALUES

1. Taqwa (fear of Allah)
2. Following seerah of Rasoolullah
3. Enjoining good and forbidding evil
4. Research and Explore
5. Service to all creations
6. Protection of ideology of Pakistan

Quran and Knowledge.

In the name of Allah, the most gracious, the most merciful.

This Book, wherein there is no doubt, is a guidance for those who are the righteous, who believe in the unseen, and keep up prayer, and spend out of what we have given them, And who believe, in that which has been revealed before you, and who are sure of the Hereafter.

They are on guidance from their Lord, and they are the successful. Those who disbelieve, whether you warn them or warn them not-it is all one for them, they will not believe. Allah has sealed their hearts and their hearing; and on their eyes there is a covering; and for them there is a grievous punishment. (AL-BAQRA VERSE1-7)

Quran is the book which consists of the guidance you had prayed for. Allah is alone, Quran is an authentic book and says that the Book i.e. Quran, wherein there is no doubt, is a guidance for the righteous ones.

From the Principal’s Desk:

Dear parents and students! We welcome you to Usman Public School System, where we holistically groom our students and strive to make them a practicing Muslim. Alhamdulillah! Our zealous students participate in academic programs and competitions with full zest. Here we acknowledge our students to serve the world as Khalifa-Tullah. Recently, our lives and everything was in severe loss and a pandemic arose between us. Even though, in this epidemic, we are trying to give the best education to our devoted learners, who even in this pandemic are enthusiastic to learn. Not only our students, but also our teachers are working with full commitment in providing the finest knowledge and the way to lead the contemporary world in accordance with the teachings of the Holy Quran and Sunnah.

Undoubtedly the efforts of all the concerned parents are also appreciable, that they are making their level best to provide their wards with the best of everything to survive in this uncertain situation, especially in their education.

Rightly it is quoted by our beloved Prophet S.A.W:

“There is no gift a father gives his child more virtuous than good manners.’’ (Tirmidhi Hadith No.4977).

As we believe that education is an effort devoted by the teachers, parents and students. We strongly believe that we can ameliorate the world in every aspect of life and very soon will get rid of this pandemic. In Shaa Allah

(PRINCIPAL UPSS C-3)
Bullying in school: Causes and Effect:

Bullying is a serious problem in schools today. Most of the children have become bullies due to stress, tension etc, maybe the bully was bullied by someone else earlier in life or they are having trouble with their academics. Bullying is to mistreat and abuse someone weaker, by someone stronger and more powerful. Repeated and continuous bullying can cause psychological distress to the victims. A child who is being bullied feels scared, helpless, insecure and alone.

There are 2 types of bullying; emotional bullying and physical bullying. Victims of physical bullying are usually physically weaker than the bullies. There are some forms of physical bullying that includes pushing, hitting, slapping, stealing, breaking or destroying victim’s things. Children that are physically bullied usually come home from school with bruises, cuts or other injuries. Their studies and academic performances are very affected.

Emotional bullying is when a person tries to get what he wants by taking others feel angry or afraid. Emotional bullying includes name call, tease, putting down, ignoring etc. Children that are being bullied stay depressed, sad and scared. Bullying ruins their self-confidence and assurance. Bullying can affect everyone, those who bully and those who witness bullying. Most people bully because they do not get attention or love of other. So simply we should give attention to the bully and show love to him. But a bully should also realize that he is doing wrong. Otherwise he will be left alone, no one will make friendship with him and no one will be there to help him in his dark times.

(Hadiya khan VII A)
Riddles

1. What has to be broken before you can use it?

Answers: 1. an egg

2. I am tall when I am young, and I am short when I am old. What am I?

Answers: 2. A candle

3. What question can you never answer yes to?

Answers: 3. Are you asleep yet?

4. What gets wet while drying?

Answers: 4. A towel

5. What can run but never walks, has a mouth but never talks, has a head but never weeps, has a bed but never sleeps?

Answers: 5. A river

(Asma Muneeb IX B)
MY LORD

*My lord is the creator of heaven
The only who made men live in cavern

*The one who gave us Salah to pray
Allah Hu Akbar, he made us say

*For guidance he gave us Quran to recite
The book which showed way to light

*He loves us whether day or night
Allah is the only one who is always right

(HUMAIRA IJAZ VI A)
AUTUMN WALK

It was a bright afternoon. I had

No work to do. So, I decided to walk

In garden. Walking through I saw

Leaves that were shining brightly

Under golden rays of sun and birds

Like sparrows were chirping and were

Making surroundings beautiful. Time

Flew away and later I saw all birds

Going to their nests, I knew that

It is time to go back home. When

I was at the door, I smelled delicious

Dinner made by my mother and was

Making me feel hungry and mom

Called me for dinner, I was happy

As I enjoyed my autumn walk a lot!!!!!!!!

(BATOOL SIDDIQUI VI-A)
Essay Corona Virus

Corona Virus which is commonly called COVID-19 is an infectious disease which causes illness in the respiratory system in the humans. It is the new virus that is impacting the whole world badly as it is spreading through contact with the person.

COVID – 19 was first identified during December, 2019 in Wuhon city of China.

Its first case appeared in February 2020.In

March 2020, the World Health

Organization (WHO) declared COVID – 19, is now a cause of large number of deaths across the world. Till now no proper vaccine has been developed for treatment of this disease.

How does COVID – 19 Spread?

It spreads from person to person. The virus spreads from respiratory system from coughing or sneeze of a COVID – 19 patient. Here are some symptoms:

The most common symptoms are fever, Dry cough, chest pain, headache, diarrhea, loss of taste and smell, aches and pains and sore throat problem.

Here are some preventions.

• Wash your hands regularly with soap.

• Avoid unnecessarily outings on public places.

• Cover your face and mouth while sneezing or coughing.

• Wear mask when going outside.

• Maintain social distancing of 6m from a sick person or if somebody has symptoms.

• Avoid shaking hands.

• Maintain proper hygiene and cleanliness

• Avoid touching your eyes, nose mouth.

As a Muslims what is our duty? As Muslims our duty is to offer prayers on time, do Astaghfar as much as possible and we should not repeat that bad deeds again. We should protect ourselves from bad habits, we should be in wudu every time and ask forgiveness from Allah.

Corona Virus is a severe issue and people all around the world facing this problem. It is necessary that we should come out of this problem as soon as possible. We should maintain a proper hygiene. Together we all can bring an end to this pandemic.

(Zunaira Khurram Class XB)
Mother

Nothing in this world can be compared with the true love and care of our mother. She is the one and only woman in our lives who loves and cares so much. A child is everything for a mother. She always encourages us to do any hard things in the life whenever we become hopeless. She is a good listener and listens everything bad or good what we say. She makes us able to differentiate between good or bad.

Mother is another name of true love. Since the time she bore us, brought up, and gives us unconditional love. Nothing is precious than a mother which one can be blessed by God thus we should always be thankful to Allah. She is the embodiment of true love, care and sacrifices. She is the one who turns a house into a sweet home.

She is the one who starts our schooling first time at home and becomes a first and lovely teacher of our life. She teaches us moral lessons and true philosophies of the life. She gets us known to the existence of our life in this world means from her womb till she is alive. She gives birth to us after bearing lots of pain and struggles but in return she always gives us love. There is no love in this world which is so lasting, strong, unselfish, pure and devoted. She is the one who brings lights in our life by removing all the darkness.

She is always anxious about our health, education, future and our safety from other strangers. She always leads us towards right direction in life and most importantly she scatters true happiness in our life. She makes us strong human being mentally, physically, socially and intellectually .She always takes side of us and prays to God for our health and bright future throughout the life even after we make her sad sometimes.

May Allah give long life to our mothers and bless them with all amenities...Ameen

(Zainab mansoor vii B)
QUOTES:

Coming together is a beginning; keeping together is progress; working together is success.

Life isn’t about finding yourself. Life is about creating yourself.

COMPILED BY: Syeda Umaima Nadeem Class: VII-B
LEARNING FAIR!

Co-curricular activities are always a part of learning and they give us a chance to explore our talents.

So, that’s why we have many co-curricular activities, one of them is learning fair. Which gives us golden opportunity to explore our talents like every year this year we also had a series wise leaning fair, which was held from 16 Nov - 25 Nov. First day was our English learning fair, in which we had in class spellathon. Farwa & Fatima were winners of competition, so they were selected for final spellathon competition, that day we learned new vocabulary words and spellings, competition was very tough and fair.

Second day it was our Islamiat learning fair, topic was cleanliness (taharat) .We all made charts to display we shared information with teachers, and also had a” fun quiz” with them, that eventful day we learned hadiths and Quranic verses.

Third day of learning fair was my favourite subject science, we became scientists and made kaleidoscopes, all other teachers appreciated us a lot and we shared our presentations with them. That day was a memorable day in my life.

Fourth day was learn Maths and Urdu , for Maths we made different games on different topics including pumpkin puzzles, Sudoku puzzles , egg shells and ratio cups, teachers as visitors were solving those puzzle and we gave smiley stickers to them as a reward for winning games, in Urdu our topic was Nishan-e- Haidaer .

We made model, booklets and charts to display, we discovered much more about shaheeds, and spent a nice day sharing information.

We did not have learning fair of S.St, for which I was most excited, due to wide spread of COVID-19 and the closure of school.

We had fun in learning fair of all subjects and learnt a lot.

(BATOOL SIDDIQUI VI-A)
Riddles

1: I have foot but no legs? Can you guess who am I?

Answers: A SNAIL

2: If an electric train is travelling south, which way smoke is going?

Answers: There is no smoke because that’s an electric train!!

3: I have hands, but I cannot clap, dear kids! Can you guess who am I?

Answers: CLOCK!!

4: I am tall when I am young, i am small when I am old!! Who am I???

Answers: A CANDLE!

JOKES!!!!

1: HISTORY SIR: Why did pioneers of America cross country in wagons??
PUPIL: Because they did not want to wait for train for 40 years!!!!!!!!!!!!!!!!!!!

(BATOOL SIDDIQUI VI-A)
The Ice Cream ecstasy

We all scream for Ice-cream

It's very very yummy

So put in your tummy

As much as you can

It melts very quickly, and tickly

Eating ice cream on a hot blazing day

It was I wish,

Every lick that

Melts in my mouth

I simply cherish:

Of all the flavors, chocolate is the best,

It makes me excited, full of zest,

I went to have a hundred flavor cone,

Sitting in a king's throne of a factory that I own!

(Shiffa Javaid; IB)
THE CITY

The city is beautiful

Taking rides is wonderful

We can go to parks, it is joyful

Walking along with friends

Birds look peaceful

I love my city

(MASHAAL FATIMA 5 B)
SISTERS

Sisters are the best

Like a sweet chest

We live in a family

Like baby birds in a nest

She is a caring sister

And they are loving sisters

And they are loving sisters

She helps you when you need

She is a friend indeed

She is a friend indeed

(Mashal Fatima VB)
THE DEADLY YEAR 2020

It was new solar year 2020.All over the world, news of corona virus was spread. It started from China (Wuhan) city to all over the world.

I was not worried, but one day, 28 February 20 was the black day for the students of Sindh. It was a normal day. We usually sleep at 10.00PM. That day we could not watch news and slept. In the morning I prepared for my school and went down the stairs to pick my school van. Suddenly, I heard the voice of my mother, she was calling me upstairs. When I reached, she told me that lockdown has been announced and all the educational institutions are closed for 4 days. But school didn’t open after 4 days, even not after 1 month vacation. It was prolonged for 9 months. My God!! All the offices, parks, banquets, restaurants, even mosques got empty. Hajj and Ummrah are postponed. Oh! What was the horrible situation we never seen before.

At last! After a long worst period of 9 months , lockdown finished we happily went to the school and enjoyed our studies but now again we are prisoners in our houses because the second wave of the virus had attacked us.

May Allah prevent us from this worst situation and protect all the mankind from this deadly virus. AMEEN

(Mahrukh Fatima VB)
ONLINE CELEBRATION OF 14TH AUGUST 2020

• REPORT:

Every patriotic citizen loves his/her country with heart and soul and for him, his motherland is the top most priority. Every nation celebrates their freedom in their own way, on their own specific day.

Similarly, in the memory of the countless sacrifices, determination and strenuous work of our leaders, we celebrate our freedom on 14th of August every year, for having a sovereign state with great enthusiasm and zeal. But due to the global pandemic (Covid19) in order to maintain social distancing, we were compelled to celebrate this day virtually for the very first time ever in decades. Therefore, management had planned to celebrate 14th August virtually. Students were asked to record their particular performance which included speeches, national songs ( Taranas), and had to share them with their teachers. After that, on the Independence Day their recordings were live streamed, which were highly appreciated by everyone, by commenting sweet remarks for the performers instead of applause. Once the live streaming was ended, then our respected principal also made an online speech after that the virtual ceremony was completely ended. Everyone had enjoyed this unique celebration. However, as compared to that celebration in school, obviously, that enjoyment can’t be beaten, the flag raising ceremony was the major missed event. But, no doubt the precious efforts of students and teachers had made this event amusing and memorable.

(Uroosa Khan X.B)
Effective Personal Management

Reading the no. 1 Most Influential Business Book of the Twentieth Century, "7 habits of highly effective people", in the habit 3 'put first things first', I realized that effective people spend most of their time in activities which are important but not urgent, which results in few crisis and these activities are defined as quadrant II activities in this book, which is the heart of effective personal management.

Ask yourself for a minute "What one thing you could do now that if you did on a regular basis would make a tremendous positive difference in your personal life?" Then you would answer; exercising, reading an informative book, revising your school lectures on a daily basis and spending quality time with your family. Yes! These are quadrant II activities. Now you would ask how to start, simply plan your week because in your 'daily routine' you say no to many things. You don't need to define your daily routine of the week, you have to define the goals, the daily priorities such as when you'll exercise, when you'll prepare for your test, or when you'll complete your dead line projects. Stick to your weekly plan, believe me after some time you will start to feel the positive impacts of your planning, you'll notice that the tasks which were a headache are now completed, the excuses you had to make in school because of incomplete homework are now stories of the past, as because of planning you don't delay any single task.

"A goal without a plan is just a wish".

(Hafsa Arif VII A)
“You’re an eagle flight is your vocation,
You have infinite skies stretching out before you”

The stanza written above is written by our national poet Allama Iqbal. The stanza is a pearl of wisdom by Iqbal himself. The youth of Pakistan which includes you, me and every other youngster right now is called out to never ever stop your passion and hard work. He referred to a type of an eagle actually which flies the highest no matter what. It can also be said as the eagle has this occupation or passion for flying high. Iqbal has called out for us, the youth or you can say the younger generation of Pakistan to be like that eagle to fly the highest no matter even if the energy of yours is drained out, even if you’re worn out, no there’s no turning back because you have so many more obstacles in life and if we talk about happiness between them I believe ecstasy is something you can achieve in the process of doing something. For me it’s like, can’t fly, run. Can’t run, walk. Can’t walk, crawl but never ever give up.

There’s an old saying which goes as no matter what’s your goal and the plan not working according to it, change the plan but never the goal. I think sometimes we let ourselves down by thinking about the old mistakes we made in past which led us to failure at some extent of life but trust me, no matter who you are today is the result of the failure you’ve gone through. My advice to you would be, never mind we are too young and too immature to give up. Even when the clouds come and it rains and even after the rain stops you stand up looking up at the sky as the same you. “Too many stars, too many dreams, the reality is that in front of them I am just a speck of dust”. There will be a day when the flowers will wither but believe it’s not today. Start effort for the things you want. You will have a state of regret if you won’t do your best right now. It’s never too late so keep working on it. You may get depressed but it’s an evidence that you’re doing good. Good things will only happen, I won’t tell you that. See only good in everything, I won’t tell you that either. I won’t tell you that everything is always going to be okay because no matter who you’re you have to go through experiences in life which makes you numb to pain, numb to crying but remember the pain you’ll have to go through or you’ve gone through is to prepare you for the day you’ll fly even higher than the most. If you listen to people who tell you to quit you’ll be a failure. Let’s all remain, let’s dream a little more and let’s fulfill most of them. You know we all can have a taste of frustration with a bit of sprinkle of failure, it doesn’t matter because in life we hope for better days and that’s what makes us live moving to the point where we start dreaming and come to a stop where we have to fulfill them but that isn’t the end. So chill up because others will kill to see you fall and remember if hard work is your weapon success will be your slave.

Written by,Emaan Ashrafi.VII B, Arfa Haq VIII B
Riddles

What is the thing that you get free of cost twice and pay for the third time?

Answer: tooth

An elephant went into a river 10 ft. deep, how did he come back.

Answer: He got wet.

Which tree is without a stem?

Answer: Banana tree.

It copies and follows all your action, what is it?

Answer. Monkey

(Hareem owais, l-B)
Allama Iqbal

Sir Muhammad Iqbal was born on 9th November 1877.

He was a poet, scholar and politician from Punjab He did his FA from Scotch Mission College. He did his MA from Govt. College and Ph.D. from the University of Munich. His poetry in Urdu, Punjabi, and Persian is considered to be among the greatest of the modern era. His vision of an independent state for the Muslims of British India was to inspire the creation of Pakistan. He delivered a presidential address at Allahabad in 1930.

The address of Allama Iqbal proved a milestone in the struggle of Pakistan. It is commonly known as Allahabad Address. His famous books include Bang e Dra, Javed Nama, Hamdardi, and many other books. He wrote many books for the children. He died on 21st April 1938.

(Eshaal Fatima ll-B)
Karachi City by Momina Maryam IB

Karachi is the largest city of Pakistan. It is the capital of province of Sindh. It is Pakistan’s premiere industrial and financial center. It is known as the city of light. It is located on the Arabian Sea. Karachi has the biggest sea port that is Bin Qasim port. It has an international airport that is Jinnah international Airport.

THIS IS MY HOUSE: By Momina Maryam (I-B)

My house is very clean. There are five rooms in my house. Two bedroom and two living room, one dining room and one kitchen. There are two bathrooms. My mother cooks food in the kitchen; I help my mother in the kitchen and in cleaning house. I decorate my toys with my younger sister in living room and we play with our toys in the evening. I love my house.

MY SCHOOL: By Ayesha Musharraf II A).

My school name is Usman public school system. I like my school so much .I like to study in my school .I study in class II. My school is promoting an Islamic culture. It has many branches all over the city. It has a big garden having many beautiful flowers. There are many hard working teachers in my school .I am proud of my school.

My Mother

Dear Mother,

I always think about you, you’re and you will be the part of my life, heart and soul forever. You are the best MOTHER in the WORLD for me, I’m thankful to ALLAH (SWT) for blessing me with such an amazing MOTHER like you. I will always be with you.

(IRAJ FATIMA I-A)
RIDDLES

I. Which is the only number that has the same number of alphabets as the number itself?

Answer:four

Name the table we cannot revise?

Answer: Dining table

Which train has 24 stations in a day?

Answer: Clock

(Mashal FATIMA VB)
FRIENDS

My friends are the best

Sometimes, they may take a test

With them, I never rest

They are like a wonderful guest

Anaya lives in west

Although it’s not a bit best

You may have guessed

I had already expressed

My feelings; that how much I’m blessed

(Summiya Farooq VII. B)
Managing Time

Time is money,

So don’t waste it!

Time is pleasure,

To-Do list is must,

Schedule should be made.

Prioritize your work,

And don’t procrastinate.

Give time to Quran,

To your Allah SWT as well.

Hadith is practical,

As Prophet (PBUH) said.

Parents need you too,

Help them in chores.

Spend your leisure time as well

But reading books, not surfing mobile.

By (Sarah Obaid Class IX A)
Selfhood: Ego is a key to success

Today, I have gotten a chance to write my views on an influential topic which is primarily related to ourselves.

Here is a commonly asked question, what is ego? Is it deleterious or advantageous and are its effects adverse or beneficial? To venture into the answers, we first have to dive into a significant narration of Allama Iqbal done on an occasion:

Raise yourself so high that before every destiny

God Questions His men, tell me what is your pleasure?

This stanza declares that there are three stages in the development of ego to perfection. Ego is seen from a beneficial perspective over here and it lays bare that a person on arriving the final stage becomes a true vicegerent of Allah. The three stages revolve around:

1) Obedience of Law.

2) Self-control, which is the highest form of self-consciousness or ego-hood.

3) Divine vice regency.

That’s right, today, my topic on which I am here to present a monologue is

Selfhood: Ego is a key to success.

Iqbal has declared that the philosophy of “Khudi” is the ultimate way to understand the purpose of one’s existence on earth.

Now do you think that just by considering yourself superior or very faithful to God is the beneficial kind of ego? Do you think that ego equates to considering oneself as the most significant? Do you think that taking yourself to an elevated level will bring you the joys promised? No… No!

BELIEVE INTO YOUR SOUL AND FIND OUT THE REASON FOR YOUR LIFE, IF YOU CANNOT BE MINE DON’T; BE ATLEAST OF YOUR SELF,

Significance of the “Self” as an individual is the source through which we can bring ourselves closest to the Ultimate. Iqbal went into great depths to comprehend the concept of self in his narration which a common person cannot dive in to. He advices the youth to possess the qualities of the Shaheen who is the superior in all the birds. He has said,” I have love for those youngsters who pull the stars down.”

Reading Iqbal’s poetry will make you realize your greatness of existence. The self is a means of recognizing one's own inner being and existence

Your abode is not the dome of the emperor

For you’re a hawk, you live on the rocks of great mountains.

When the world was against EGO, Iqbal came up with a new dimension EGO. Ultimate Alms of EGO is not to see something, but to be something. (IQBAL)In Iqbal’s view, the message of the Qur’an is not all rituals (Zikr) but it is also scientific (Fikr). As Muslims, we should possess both these two aspects mentioned in the Qur’an in order to fulfill our duties in this world as Allah’s vicegerents. In line with Iqbal’s vision for the survival of the ummah, modern day Muslims should be prepared to learn from others, particularly from the West, the latest development in the areas of science and technology for the betterment of the ummah and humanity at large.

When the world was against EGO, Iqbal came up with a new dimension EGO. Ultimate Alms of EGO is not to see something, but to be something. (IQBAL)In Iqbal’s view, the message of the Qur’an is not all rituals (Zikr) but it is also scientific (Fikr). As Muslims, we should possess both these two aspects mentioned in the Qur’an in order to fulfill our duties in this world as Allah’s vicegerents. In line with Iqbal’s vision for the survival of the ummah, modern day Muslims should be prepared to learn from others, particularly from the West, the latest development in the areas of science and technology for the betterment of the ummah and humanity at large.

God himself asks what your desire is, this is the kind of ego every Muslim must possess and the kind which paves one’s path to success!

(Eshal Zehra IX B, Hafsa Javed XB, Rubaba Jamil XA)
REPORT ON BOOK FAIR

Books are our friends in our loneliness. They give us all information they have and help us to grow and develop. After all "A ROOM WITHOUT A BOOK IS AS A BODY WITHOUT A SOUL" Usman public school knows the importance of book very well and Alhamdulillah give attention to the study and enjoyment of the students side by side. Having a book fair after this whole situation was a big achievement. There were thousands of books presented in the book fair. I personally love how our staff chose the books wisely, often books were moralistic and informative while some of them were based on mysteries and wonders. The best thing about the fair was they did justice with both languages English and urdu. Each language had a variety of books. The best part about this significant event was that there were books arranged according to different ages, the staff was very cooperative and caring. The books presented there for primary students especially class 1 and 2.The books for secondary level were amazing "Readers are leaders". I loved the Urdu novel presented there named Abdullah. I read it later and it was impressive the story was admirable and the moral was motivational, all the characters were efficient as well. The book fair was a great success. These small activities and fairs are productive and admirable. It shows that apart from studies our school actually cares about our mental development.

To conclude I would like to say thanks to all of my teachers, Principal and the management to make our school life remarkable and to help us stand on our own, to make us choose the right path and protect us from the evilness of this world. I hope book fairs will enhance the quality and standard of education of our school.
Insha ALLAH

(MUNAZZA KHAN Class VIII A)
Never Tell a Lie

Once upon a time, there was a little rabbit. His name was Bunny and his sister name was Brownie. Bunny liked candies very much. One day Bunny was finding candy jar but his mom kept the jar in the cabinet. He did not get permission but he tried to take out the jar from the cabinet. Accidently the jar slipped and broke. Mom asked Brownie and Bunny, “Who broke the candy jar?” They both answered no. Mother said, “You can’t go out to play”. Bunny thought Brownie was punished because of him. I lied to mom. He went to her mom and apologized. He said, “I will never do it again and never tell a lie”. Mom replied “I am proud of you always speak truth.”

(Syeda Maria Fatima III-A)
RIDDLES

1. What has six faces but doesn’t wear makeup and twenty one eyes but can’t see?

Answer: Dice

2. The more there is, the less you can see. What is it?

Answer: Darkness

3. What building has the most stories?

Answer: Library

Joke 1: Teacher: Why is your homework in your father's hand writing? Student: I used his pen.

Joke 2: Why was the student's report card wet? Because it was below C level.

Joke 3: What's the king of the pencil case?

Joke 4: Teacher: I see you missed a day of school. Student: Yes, but I didn't miss it.

Joke 5: Why did the barber win the race? Because he took a short cut.

(Syeda Ayesha Fatima Class: IV A.)

-Dedicated to our Phuppo who left us, last Ramadan suffering from cancer, May God bless her.

A blooming flower face,

Where the joy lays.

A line of black kajal ashes,

and with big lashes.

A big smile of love,

with a beautiful curve.

She walked on a truthful life,

an honest Islamic life.

A perfect Hijab,

A loyal Purdah,

A true heart,

makes her honest .

Suddenly she fell into a tragedy,

all her loved ones felt sorry.

We all prayed this

Oh God! please cure her illness.

Something else was written in her fate,

May be to have a heaven taste.

She might be gone from our life,

but she in our heart is still alive.

Whenever I see a flower bloom,

A smile of hers meet me soon!

Written by Ashhal Fatima Alam X-A
FRIENDSHIP

True friendship is really rare

It’s comfortable to know that you care

Always there to share my fears

Always there to wipe my tears

You always brighten up my face

You make my world a happier place

You lighten up my day

And make me think I am a part of magical play

A treasure time we spend together

These memories I will store forever

I cherish the time we share

I love you sisters! I love you dear!

By: (Manahil Noor Class: IX-A)
Learn to live with your weaknesses

It was a fine day during the rainy season. A peacock was dancing happily in a forest. Suddenly he reminded of his ugly rough voice. His face turned pale and his eyes started watering. Then he saw a nightingale sitting on a nearby tree and singing. Listening her, the peacock lamented what a sweet voice she has which everybody loves and praises but when I utter a sound everybody makes fun of me. How jinxed I am. Just then appeared a kind hearted man. He asked the peacock, “Why are you sad”? The peacock sobbed out, “I have got such a beautiful body that is praised by all but my voice is so bad that everyone laughs at it”. So this beauty is useless. The kind man replied, “Don’t be sad and look several creatures have been gifted by Allah with various gifts like you have beauty, eagle has strength, nightingale has sweet voice and so on”.

Don’t grumble over your weakness and accept the way it is granted you and be happy.Hence one should not regret on what he/she doesn’t have. We must be satisfied with what has been given to us by Allah S.W.T.

(Maryam Ahmed III-A )
Tongue twisters

She sells sea shells by the sea shore and the shells she sells by the sea shore are sea shells for shore.

Red leather, Yellow leather

Big billy has a big belly and is big bolly.

Black background, brown background

Chester cheetah choose a chunk of cheap cheddar cheese

If the chunk of cheese chunked chester cheetah, what would chester cheetah chew and chunk on?

(ESHAL TEHSEEN III-B)
Spelling Bee

Co-curricular activities are very important in a student’s life. Students to show their special talent, polish their skills and they learn how to compete. Our English Faculty organized a spelling-bee competition.

A list of 50 words was provided to the students to learn and there were 20 more unseen words ready to ask. There were 2 rounds. The first round was individual round. 2 spellings were asked from each participant and 1 spelling in second round. It was very interesting program. Even though we were facing second wave of COVID19 we had this competition.Students were following SOPs.

(Javeria Asif lllB)
REPORT WRITING SPELLING COMPETITION

Every year school plan different activities and students enjoy all activities a lot. The activity which I love the most is spelling competition. I am fond of learning new spellings from my childhood. I participate every year in spelling competition so I participated this time as well. This time things were a bit different because of covid-19, students were wearing mask and gloves. We all were very excited Ms. Laraib gave a word list to all students and announced the date of spelling competition. I learnt all spellings by heart, finally the day came. All students were really nervous and revising the spellings. Ms. Laraib came and announced the rules of the competition. 1st round was group round and 2nd round was individual. In 1ST round unseen spellings were asked and in 2nd round seen spellings were asked. Alhamdulillah I won the competition. I was very happy I shared my joy and happiness with my mother she hugged me and gave me so many wishes.

(FARWA FATIMA, FATIMA NAZIMVI-B)
MY LITTLE TOY

I have a little Toy
That looks like a boy
It has been made up of CLAY
Always ready to play…….
Its Eyes are Cute
And so it’s suit
I treat it like a Baby
Because it’s cute may be
I wrap it in a Towel
As it is very Royal

(Hamna Ejaz I-A)
Real Purpose of Life

You have great time to have fun and explore
In your life you will want more, more and more
You’ll dream of huge buildings and great things to eat
All the best of you’ll have is luxury types of sweet
You’ll also think of having neat things to wear
You’ll forget to give needy and to share
You wouldn’t realize what you were doing
You’ll be resting, biting, and chewing
You didn’t care about the bad circumstances
You were lucky to get lots of chances
The life is a test not a game
Your aim will be your fame
Do you know the real purpose of life?
Spread peace and never strife!

(Eshaal Zehrah IX-B)
One good turn deserves another.

One hot day, an ant was searching for some water. After walking around for some time, she came to a spring. To reach the spring, she had to climb a bale of grass. While making her way up, she slipped and fell into the water. She could have drowned if a dove, up a nearby tree, had not seen her. Seeing that the ant was in trouble, the dove quickly plucked off a leaf and dropped it into water and the ant easily climbed up there. Soon it carried her safely to dry ground. Just at that time, a hunter nearby was throwing out his net towards the dove, hoping to trap it.

Guessing what he was about to do, the ant quickly bit him on the heel. Feeling the pain, the hunter dropped his net the dove was quick to fly away to safety. Hence they both thanked each other and got friends forever.

(Syeda Ayesha Fatima IV.A)
UNHYGIENIC FOOD

Once upon a time, Ali and Ahmed were coming from school to home.

On the way, Ali saw a GolGappa (crisp watery ball) shop. He looked in his bag to see if he had left some money that Mother gave them for the book fair. Ahmed stopped him from buying those GolGappa, but he didn’t listen and bought some PaniPuri. Ali told Ahmed “Don’t tell anyone about this.” The next day Mother woke them up to pray for Fajr and go to school, but Ali didn’t get up and said to his mother in a very low voice that he has a stomach ache and fever. The mother checked Ali’s

temperature with a Thermometer and said Ali, you have a high fever. “What did you eat last.”Ahmed said it with low voice that he ate GolGappa from the stall

while coming home. Mother said Ali, you should not eat these types of food. These are not good for our health. Mother said to Ali, that get up, brush your teeth and eat breakfast, then rest. In the evening. I will take you to the Doctor. In the evening Mother took Ali to the Doctor. The Doctor said that he ate something unhygienic which is making him sick. Mother said: He ate GolGappa yesterday while coming home from school. Doctor said: The only way that he can get healthy, is by medicines and injection. Ali started crying as he listened the name of injection. Mother said, “Ali, strong kids are not afraid of Injection.” Doctor injected, gave some medicines and told Ali Ahmed that these things are made in bad oil and the water of GolGappa is very sour. These things contain smoke from factories and mud which flies in to the food through air .We should not eat these type of things like Burgers, Pizza, GolGappa etc. They agreed and promised their mother that they will never do this again.

(Muntaha Fatima IV.B)
SCIENCE SOLVED THE MYSTERY!!!

Sarah,Fahad and Faham were coming back from school .They were all very happy because from that day onwards summer vacations had to begin.

Fahad said that in these vacations I will just sleep, Sarah laughed and said "You know nothing but sleep, just take a lesson from me I have a lot to learn, I have to learn how to bake cake from mom, calligraphy from sister ETC.

Faham [youngest brother] "You both just know how to fight, my plans are to stay at khala’s village throughout summers holidays." oooooooooo! You are a cheater bro, you did not tell us about that and did all planning, you cheated like a fox today" Said eldest brother Fahad.

It was a bright evening Faham was feeling fresh he was at his khala’s village, was very happy, and was playing badminton with his cousins. Soon, they started hide and seek, Faham saw an old mansion he was about to enter as his cousin Mahad pulled and asked “Are you alright Faham?” “What did I do? Said Faham

It was a bright evening Faham was feeling fresh he was at his khala’s village, was very happy, and was playing badminton with his cousins. Soon, they started hide and seek, Faham saw an old mansion he was about to enter as his cousin Mahad pulled and asked “Are you alright Faham?” “What did I do? Said Faham

FAHAM SAID" WE BELIVE IN ALLAH SWT AND WE ONLY have fear of HIM "Mahad anyway that’s real and no one can deny it"

Faham thought, I will go into that old mansion and I will tell truth to everyone.”

Next day in the morning after breakfast, he said,”I am going for a walk”, and made his way to old mansion, as he enter he felt dizzy so he wore his mask. He felt better after he yelled “ANY ONE IS HERE! COME IN FRONT I WANT TO SEE YOU “but there was nothing only his voice was coming back to him (echo). He remembered lecture of his science teacher of SIR Haris which was about echoes .He opened windows and puzzle of voice echo was solved.

He went out his cousins were finding him Faham surprised them and said "see I am coming out of this mansion and i am alright, trust me there a no such things as ghost" They went inside to if Faham was right or not, after 2 minutes they all came out laughing Mahad asked how did you solved mystery, Faham said " you did not tell about voice echo that in empty houses and places our voice reflects and we listen it again and again.

Abdullah asked then what happened to Ali then, Faham replied that the mansion was closed for long time and there was no oxygen in place may be, because of lack of oxygen he felt dizzy. Huh! That was it just.

And like this, SCIENCE again solved a mystery.

(Batool Siddiqui VIB)
Feedback of Virtual Classes

Assalam O Alaikum

Today I would like to express my personal experience about Virtual classes during the pandemic of COVID-19.

I fell that it has many positive and negative points but first I will tell you some positive points of online classes;

Positive points

1. The transfer of the knowledge continues.

2. No need to get worried for van Pick and Drop.

3. The schedule of online classes are very easy to follow.

4. Teachers are taking classes after the recorded lectures which is a very good thing.

NEGATIVE POINTS

1. More than 2 hours in front of screen which affects our eye sight.

2. Poor connectivity of internet causes difficulty in understanding.

3. Cannot have physical Activities.

4. Cannot have group discussion or cross questions.

5. Not getting disciplined due to Virtual classes.

Beside all the things Alhamdulillah we are in touch with our studies. May Allah protect all of us. Ameen

(HANIAH KHAN VA)
CONNECTING IN NEW WAYS

Months of social distancing, online classes, absence of outdoor group activities, and no traveling have all over ripe in us different ways. And each of us has found ways to replace the physical reciprocity and connection we had with others before Covid-19 arrived, and are using other ways to stay connected with family and friends.

But despite what we do now, there's no denying that the reduction in face-to-face interactions has had a rusty effect on our social skills... We are now just too uncomfortable being too close to others, and this is leading to us becoming emotionally disconnected from others too. Our physical health is incredibly important during this pandemic then is our mental and emotional well-being. So we'd like to succeed in bent others, to share our feelings, and provides others an opportunity to try and do an equivalent with us. But sharing of feelings is done in different ways and depends on people’s skills and how they are comfortable connecting with others. For instance, giving a smile to a devotee once you see one another will immediately tell them that you simply are happy to ascertain them and it'll make them feel good. But this is often not something you ought to be doing once you are answering a significant question during your online class, because it's going to cause you to seem non-serious.

The hard truth here is that these days we are having more online serious school sessions than we are having online chats with friends. And after we do meet our classmates and friends at college, the mask hides our smiles and expressions, thereby making emotional facial gestures tougher to convey.

Since texting or talking, whether virtually or personally, are the most ways we connect with others now, we'd like to be more aware of the words we use. We should try to convey our message, thoughts, and feelings in clear, correct, and appropriate words.

Emoji’s are a life saver in this age of electronic communication and they have precisely been invented to express the feelings that typed words lack. Texting acronyms are also helpful in expressing feelings in the shortest of ways and you should make full use of them in your messages. But do take care as many of us aren't well conversant in their meaning and that they are more suitable for casual messages than formal ones.

In many cases, we have been connecting with only those friends and families with whom we have some sort of work or those who live close by. This may lead to the loss of ties with many people who are important in our lives. This physical distance can cause emotional detachment too. So found out a schedule that has some quite communication every day with a minimum of a few of individuals you're unable to satisfy. And if your parents are lecture a relative, you'll ask your parent’s permission and say some words to them too. You should also certify to speak along with your grandparents since they're having one among the toughest times lately because their social life has come to a standstill to avoid exposure to the virus. They will feel so happy to at least talk to you if you are not meeting too often, and the conversation will also lift your mood since grandparents are so full of love.

(Hafsa BadarX-B)
A visit to the Zoo (By Nimrah Fatima)

It was a bright Sunday morning, my mother decided to visit the zoo, we all were very happy to listen this news .We got up early in the morning and finished our breakfast soon, my mother prepared snacks and we took some playing materials with us, We left home early in the morning and reached there within half an hour. We saw there many animals like elephant, giraffe, deer, lion, peacock etc., we fed peanut to the elephant and bananas to the monkey, We also took a ride on elephant, we had many swings there and did lots of fun, and in the evening we came back it was our best visit.

Quran

Quran the guide book
Which interrogates me to take a look
Of the pulchritudinous beauty of Allah
Every mystery hidden here
Which none has to bare
Everything is fair
So why not to ponder over the creation of the Omnipotent Lord
Who solicited us to war with our swords?
Leaving us an exquisite reward
An eternal enigma which none could solve
The Nebulous Jannah .

(Eshaal Zehrah IX-B)
Alexithymia

I look up in the mirror,
having no regrets.
I decide to find myself
under the ocean’s depth.
They see it as ugly but I like it,
They let the standards possess the most of them.
Get up wear a fancy dress,'
But even makeup wouldn’t change us, nevertheless.
Spring will take over someday,
While the autumn will cease.
But will I be able to confess?
For the sins I’ve committed,
For the hearts I’ve broken.
I still won’t play,
the fake queen in chess. The thoughts have taken over my mind,
Do I really belong to the world of beauty obsess? ,
Why should I always be the one to make an effort? ,
Why should I always be the canvas? ,
on which others could paint either more or less.
So have we really found our true oneself?

(Eman Asharfi VII B)
اداریہ

سال ِرواں تیزی سے اپنے اختتام کی جانب رواں دواں ہے۔یہ سال انسانی تاریخ کےاعتبار سے بڑا منفرد ہے سال کے آغاز میں کرونا کی وبا نے عالمی سطح پر پوری دنیا کو متاثر کیا،تمام شعبہ ہائے زندگی میں تعطل پیدا ہوا۔اس وبا نے تعلیمی نظام کو بری طرح متاثر کیا مگر الحمدللہ عثمان پبلک اسکول سسٹم نے آزمائش کی ان گھڑیوں میں استقامت اور حوصلے کا مظاہرہ کرتے ہوئے نہ صرف اپنے تعلیمی نظام کو جاری و ساری رکھابلکہ ہم نصابی سرگرمیوں کے ذریعے اپنے طلبہ کے اذہان اور صلاحیتوں کے (Online classes) کوجلا بخشی مواصلاتی طریقہ تدریس ذریعے نصاب مکمل کیا گیا۔طلبہ کی حاضری سے طلبہ کے ذوق اور علم کا اندازہ ہوتا ہے۔

!اللہ تعالیٰ قرآن پاک میں ارشاد فرماتا ہے

ہم ضرور تمہیں خوف و خطر، فاقہ کشی، جان و مال کے نقصانات اور آمدنیوں کے گھاٹے میں مبتلا کرکے تمہاری آزمائش کریں گے۔ان حالات میں جو لوگ صبر کریں انہیں خوشخبری دے دو، ان پر ان کے رب کی طرف سے بڑی عنایات ہوں گی اس کی رحمت ان پر سایہ کرے گی اور ایسے ہی لوگ راست رو ہیں۔

الحمد للہ طلبہ نے سیرت النبیؐ اور عشرہ اقبالؔ کے موقع پر بھرپور انداز سےاپنی صلاحیتوں کا اظہار کیا۔ہم امید کرتے ہیں کہ ان شاء اللہ ؁ء ۲۲۲۲ میں ہم بھرپور عزم اور حوصلے کے ساتھ داخل ہوں گے اور ہمارے طلبہ خود کو تعمیر ملک وملت کے لیے تیار کریں گے اور راستے کی کوئی مشکل تعمیر و ترقی کی راہ میں حائل نہ ہوسکے گی۔ہماری دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ بہت جلد اس وبا کو ختم کرکے ہم پر اپنا کرم فرمائے گا اور زندگی پھر رواں دواں ہوگی۔ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم مسنون دعاؤں کا اہتمام کریں اوررجوع الی اللہ اور اسوۃ حسنہ کو اپنے لیے دستور ِعمل بنائیں تاکہ ہم دین ا ور دنیا میں سرخرو ہوسکیں اور مشکلا ت سے نبرد آزما ہونے کا حوصلہ اور آگے بڑھنے کی لگن پیدا ہو۔ مواصلاتی طریقہ تدریس سے ہمیں بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا والدین کے بھرپور تعاون سے ہم اپنے تعلیمی مقاصد حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے۔ یقینا یہ حالات ہمیں ایک مضبوط قوم بننے کی دعوت دیتے ہیں اورہمارا عزم جوان اور حوصلے بلند رہتے ہیں۔بقولِ اقبالؔ

خدائے لم یزل کا دست ِ قدرت تو زباں تو ہے
یقیں پیدا کر اے غافل کہ مغلوب ِ گماں تو ہے
پرے ہے چرخ نیلی فام سے منزل مسلماں کی
ستارے جس کی گرد راہ ہوں وہ کارواں تو ہے

مدیرہ کے قلم سے
ہو صداقت کے لیے جس دل میں مرنے کی تڑپ

اگر ہم تاریخ ِ اسلام کا مشاہدہ کریں تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے۔ ہر دور میں مردانِ حق کو ایک نئے طوفان، ایک نئی تحریک اور ایک نیا امتحان درپیش ہوتا ہے۔کہیں طارق بن ولید بر سر پیکار نظر آتے ہیں تو کہیں محمد بن قاسم،کہیں خالد بن ولید تو کہیں ٹیپو سلطان باطل سے نبرد آزما نظر آتے ہیں۔یہ سب اسی صورت میں ہی ممکن ہوتا ہے جب مومن طاقت،شجاعت اور انصاف کی بقا ء اور سر بلندی کے لیے لڑتا ہے۔اس کا دل جذبہ ایمانی اور نورِ توحید سے منوّر ہوتا ہے۔

ہر لحظہ ہے مومن کی نئی شان نئی آن
گفتار میں کردار میں اللہ کی برہان

اگر مومن کے دل میں صداقت کی تڑپ ،جہاد کا جذبہ اور انصاف قائم کرنے والا دل موجود ہو تو گرد و نواح خود اس شخص کی صداقت کی گواہی دیں گے۔اگر کوئی شخص کلمہ حق کا بلند کرے تو اللہ تعالیٰ اس کی مدد کے لیے آسمان سے فرشتے نازل کرتا ہے اور غیب سے اس کی مدد فرماتا ہے۔ مومن لڑتا ہے تو اللہ کے لیے،صلح کرتا ہے تو اللہ کے لیے لیکن جب با ت دین کی حمیت پرآجائے اور مذہب کو انتہا پسندی کا نام دے دیا جائے اور جنگ کے نام پر پوری دنیا کے مسلمانوں کو لہو لہوکیا جا رہا ہو تو ضرورت اس بات کی ہے کہ مسلمانوں کے دلوں میں جہاد کی اصل روح کو بیدار کیا جائے۔ بحیثیت خلیفۃ اللہ فی الارض اب ہماری یہ ذمہ داری ہے کہ اپنے حصے کا کام کرنے کے لیے کمر باندھ لیں اور اپنے آپ کو پہچانیں کیونکہ ہم ایک ایسے دین کے ماننے والے ہیں جو غالب ہونے کے لیے آیا ہے اور کلام حق اورپیغمبروں کا وارث ہے اور اگر حالات و واقعات اس کے موافق نہیں تو وہ انقلاب لاتا ہے اور نیا جہاں بناتا ہے۔آئیے اقبال کے ساتھ مل کر زمانے کو بتاتے ہیں کہ مسلم اپنا جہاں آپ بناتے ہیں۔

عالم ہے فقط مومنِ جانباز کی میراث
مومن نہیں جو صاحبِ لَو لاک نہیں ہے

( علینہ راشد ہشتم الف)
(سیرت رسولﷺ)

ہر فرد کو دو عالم کے سرورر ﷺ کی سیرت سے واقفیت ہونی چاہیے۔ اسی روایت کو برقرار رکھتے ہوئے ہمارے اسکول میں مختلف سرگرمیاں منعقد کی جاتی ہیں اور ہر سال کی طرح اس سال بھی ہمارے اسکول نے اسی روایت کو برقرار رکھا۔آپ ؐسے محبت و عقیدت کرنا، ان کی تعظیم و توقیر کرنا مسلمانوں پر فرض ہے تاکہ اخروی زندگی میں کامیابی حاصل ہوسکے۔ چنانچہ ہمارا فرض ہے کہ ہم اپنے خرد کے دلوں کو آپ ﷺکی محبت سے منور کردیں۔ ”نبی کریمؐ مومنوں پر ان کی جانوں سے بھی زیادہ حق رکھتے ہیں۔ “ (القرآن)

تم میں سے کوئی اس وقت تک مومن نہیں ہو سکتا جب تک میں اس کی اولاد، جان اور مال سے زیادہ محبوب نہ ہو جاؤں۔“ (مفہوم الحدیث) ہمارے اسکول میں مقابلہ نعت رسول ﷺکا انعقاد ہوا جس میں طالبات نے جوش و خروش کے ساتھ حصہ لیا اور احسن انداز میں ہدیہ اخلاص پیش کیا۔ اس حوالے سے طالبات کے علم میں اضافے کے لیے ہمارے اسکول نے سیرت پروگرام کا آغاز کیا جس میں رسول اللہ ﷺکی سیرت سے متعلق سبق آموز واقعات سے ہمیں آگاہ کیا۔پرائمری کلاسزکے لیے جمیعت کی باجی، مریم عارفہ نے احسن اندازمیں خطاب کیااور نہم اور دہم کی طالبات کے لیے ہماری وائس پرنسپل مسرت وقار صاحبہ نے نشست رکھی جس میں ہمیں آپ ﷺسے تعلق کے تقاضوں کی گہرائی سے آگاہ کیا گیا جو کہ محبت، اطاعت،اتباع، ان کی تعظیم و توقیر اور ان پر درود وسلام بھیجنا کہ رسول اکرمؐ کے ناموس کی حفاظت کا جذبہ اجاگر کیا جائے، ان کی شخصیت کو مشعلِ راہ بنایا جائے۔ جو سلسلہ نبوت حضرت آدم ؑ سے شروع ہوا، لوگوں تک ہدایت و رہنمائی پہنچانے والا یہ سلسلہ حضرت محمد ﷺپر اختتام پذیر ہوا۔ سیرت کا یہ پروگرام احسن انداز میں اختتام پذیر ہوا۔ اس پروگرام سے ہم آپؐ کی سیرت کے مختلف پہلوؤں سے روشناس ہوئے۔ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہم سب کو اس پروگرام سے فیضیاب ہونے اور عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائے۔ (آمین)

وہ راہ دسترس جبرئیل میں بھی نہیں
سراغ جس کاتری رہبری سے ملتا ہے

( عیشال زہرہ نہم ب )
آنکھ جو کچھ دیکھتی ہے لب پہ آسکتا نہیں

سمجھدار انسان اپنے حالات و واقعات کے مطابق زندہ رہنے کی سعی و کوشش کرتا ہے۔جہاں سائنسی ایجادات نے ہمارے لئے آسائشوں کے ڈھیر لگا دیے ہیں اور ان سب کے حصو ل سے جہاں ہماری زندگی میں آسانیوں کا حصول ممکن ہوا ہے وہیں بعض ا یجادات انسان کے لیے مہلک بھی ثابت ہوئی ہیں۔اسی لیے شاعر نے خوب کہا ہے کہ

ہے دل کے لیے موت مشینوں کی حکومت

آج انسان کے پاس تمام تر سہولیات موجود ہیں لیکن اس سہل پسندی نے ا س کو مصروف سے مصروف تر کر دیا ہے یہ بالکل ٹھیک ہے کہ خوب سے خوب تر کی تلاش انسانی فطرت کا خاصہ ہے لیکن اس تلاش نے اس کو خود سے غافل کر دیا ہے سادگی اور قناعت ہماری زندگی سے مفقود ہو چکے ہیں اور زبان کے چسکوں نے ہمیں برباد کر دیا ہے۔ آج انہی آلات نے رشتوں کے تقدس کو پامال کر دیا ہے اولاد اپنے والدین اور ذمہ داریوں سے صرف ِنظر کر چکی ہے اور احساسِ مروت کی ڈوری ٹوٹ چکی ہے۔غرباء و مساکین کی داد رسی کرنے والا کوئی نہیں۔ناعاقبت اندیش انسان اس بات کو بھلا بیٹھا ہے کہ اس کو ان تمام نعمتوں کا حساب دینا ہو گا۔

تومیرے پیارے ساتھیوں! ذرا غور کیجیے گا کہ اللہ کی دی گئی تمام نعمتوں سے فائدہ اٹھانے کے ساتھ ساتھ بحیثیت نوجوان ہمیں اپنے مسائل پر بھی ضرور نظر ڈالنی ہو گی۔یہ تمام کیمیائی ہتھیار،ماحولیاتی آلودگی،بدامنی مہنگائی،بے روز گاری اور سب سے زیادہ بے حسی کے واقعات نے انسان کو بے بس اور لاچار بنا دیا ہے اگر ہم نے یہ شعوری کو شش نہ کی تو چند برسوں بعد

ہماری داستاں تک نہ ہو گی داستانوں میں

(مریم الیاس۔سارہ عبید۔نہم)
بحیثیت مسلمان ہماری ذمہ داریاں

خلیفۃاللہ فی الارض ہونے کی حیثیت سے یہ ہمارا فرض ہے کہ ہم دنیا میں اللہ کے دین کو غالب کریں۔اس لیے ضروری ہے کہ ہم حق کو پہچانیں اور اس جذبہ کو پروان چڑھائیں۔ہمیں اپنی رہنمائی کے لیے قرآن و حدیث کا مطالعہ کرنا چاہیے کیونکہ اللہ کی طرف سے نازل کردہ قرآن ہی حق ہے۔ آج ہمیں دشمنوں کی سازشوں کو سمجھنا ہوگا اور دجالی فتنوں بے حیائیِ اور سوشل میڈیا سے بچنا ہوگا۔ہمیں ایک اچھا اور با عمل مسلمان بننے کے لیے شریعت کے احکامات کو سمجھنا ہوگا اور اس لیے ہمیں اپنے مطالعے کو وسیع کرنے کی کوشش کرنی ہوگی اور اپنی بے لگام خواہشات پر قابو پانا ہوگا کیونکہ اگر پیکرِ خاکی میں اسلام نافذ نہیں ہوگا تو ہم دنیا میں اسلام کیسے نافذ کریں گے۔

اگر ہم اسلامی تاریخ کا مطالعہ کریں تو ہمیں پتہ چلے گا کہ اسلام جنگوں سے نہیں بلکہ مسلمانوں کے اخلاق کی بدولت پھیلا۔اس ایمان کی بدولت مسلمانوں نے پوری دنیا پر حکومت کی۔اگر آج ہم باعمل مسلمان بن جائیں تو تو اسلامی حکومت کا قیام ممکن ہے۔

(عائشہ حسینی ہشتم الف)
عشرہ اقبال اور تقریری مقابلے

تاریخ میں جو نام سنہری حروف میں تحریر ہیں ان میں ڈاکٹر علامہ محمد اقبالؔ کا نام سرِ فہرست ہے۔ان کی دور اندیشی اور وسیع النظری کا تو سارا زمانہ ہی قائل ہے۔

علامہ اقبال کی شخصیت کو مختلف طریقوں سے سے خراج ِتحسین پیش کرنا عثمان پبلک اسکول کی روایات میں شامل رہا ہے اور ان کاوشوں کو سراہنے کے لئے ہمارے اسکول میں عشرہ اقبال کا انعقاد کیا گیا جس میں مختلف مقابلہ جات کے ساتھ ساتھ تقریری مقابلوں کا انعقاد بھی کیا گیا جس میں طالبات نے اقبال کے پیغام کو اپنے الفاظ و جذبات کے ذریعے ہم تک پہنچانے کی بہترین کاوش کی۔ان مقابلہ جات میں سیکنڈری جماعتوں کو کلیات ِ اقبال سے منتخب عنوانات کے تحت اپنی تیاری کرنی تھی۔جماعت ششم کو اس عنوان کے تحت تقاریر کرنی تھیں۔

دیارِ عشق میں اپنا مقام پیدا کر
نیا زمانہ نئے صبح و شام پیدا کر

جماعت ہفتم کے لیے عنوان تھا ”لہو مجھ کو رلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی“ جماعت ہشتم کی تقاریرکے لیے عنوان تھا۔

آنکھ جو کچھ دیکھتی ہے لب پہ آ سکتا نہیں
محوِ حیرت ہوں کہ دنیا کیا سے کیا ہو جائے گی

جماعت نہم اور دہم کے لیے یہ عنوان تھا۔

وہ سحر جس سے لرزتا ہے شبستانِ وجود
ہوتی ہے بندہ مومن کی اذاں سے پیدا

چوں کہ یہ تعلیمی سال گذشتہ سالوں سے بہت مختلف رہا لیکن ہمارے اسکول نے روایت کوقائم رکھا اور عشرہ اقبال کو منانے کے لیے ایک نئی راہ متعین کی اور احتیاطی تدابیرکو ملحوظ ِ خاطر رکھتے ہوئے طالبات کی کثیر تعداد کو اکھٹا نہیں کیا گیابلکہ الگ الگ جماعتوں کے مقابلے کروائے گئے۔جس میں طالبات نے بڑھ چڑھ کر حصہ لیااساتذہ نے منصفانہ فیصلے کیے اور جیتنے والی طالبات کی کاوشوں کو سراہا۔

عشرہ اقبال ایک خوبصورت یاد کے ساتھ اختتام پذیر ہوا اس پروگرام کے ذریعے ہم نے جو نئی باتیں سیکھیں ان میں اہم بات یہ تھی کہ مومن حالات و واقعات سے گھبراتا نہیں بلکہ نئی نئی جہت تلاش کرتا ہے اور اگر جذبہ صادق ہو اور کام کرنے کا جذ بہ بھی تو وہ سب کچھ کر گزرتا ہے۔

ہو صداقت کے لیے جس دل میں مرنے کی تڑپ
پہلے اپنے پیکرِ خاکی میں جاں پید ا کرے

( زویا احمد دہم ب)
مقابلہ تحت اللفظ رپورٹ

ہمارے اسکول میں ہر سال کی طرح اس سال بھی ہفتہ اقبال مناتے ہوئے تحت اللفظ منظومات کے مقابلے کا انعقاد کیا گیا۔اگرچہ اس سال کورونا وباکی تعطیلات کی وجہ سے طلبہ کی پڑھائی کا کافی نقصان ہوا تھا۔اس لئے حالات کا تقاضا یہ تھا کہ تمام ہم نصابی سرگرمیاں چھوڑ کر صرف پڑھائی پر توجہ دی جاتی لیکن ہمارے اساتذہ کا اولین مقصد بچوں کی تعلیم کے ساتھ ساتھ تربیت بھی ہے۔اسی سلسلے میں خصوصی طور پر ہم نصابی سرگرمیوں کا انعقاد کیا گیا۔ اسی سلسلے میں جماعت پنجم تا دہم میں تحت اللفظ منظومات کے مقابلے کا انعقاد کیا گیا۔ان مقابلوں سے نہ صرف بچوں کی صلاحیتیں نکھرتی ہیں بلکہ اس کے ساتھ ساتھ معلوما ت میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔

مقابلے کے روزتمام طالبات پر جوش تھیں۔جماعت کے وقفے کے دوران مقابلہ کروانے کا فیصلہ کیا گیا تا کہ پڑھائی کا کوئی حرج نہ ہو۔جماعت پنجم کی طالبات نے نظم ”ہمدردی“ خوبصورت انداز میں پڑھی۔ اس کے بعد جماعت ششم کی طالبات نے اقبال کی نظم ”چین و عرب ہمارا“ پڑھی۔وقت کی کمی کی وجہ سے باقی جماعتوں کے مقابلے کو اگلے روز کروانے کا فیصلہ کیا گیا۔اگلے دن جماعت ہفتم کی طالبات نے نظم ”چاند اور تارے“ بڑے ہی دلکش انداز میں پڑھی۔پھر جماعت ہشتم کی طالبات نے نظم ”خطاب بہ نوجوانان اسلام“ اس انداز سے پڑھی کہ اقبالؔ کا پیغام ہمیں روح میں اترتا محسوس ہوا۔جماعت نہم کی طالبات نے نظم ”طارق کی دعا“ اور جماعت دہم کی طالبات نے نظم ”ٹیپو سلطان کی وصیت“ پر جوش انداز میں پڑھی۔تمام طالبات اور اساتذہ نے شرکت کرنے والی طالبات کوخوب داد دی۔اس کے بعد ہماری کو آرڈینیٹر مس زینب فاطمہ نے چند اغلاط کی نشاندہی بھی کی اور طالبات کو ان کی محنت اور جانفشانی پر سراہا اور دیگر اساتذہ سے باہمی مشاورت کے بعد نتائج کا اعلان کیا۔

غرض یہ کہ یہ مقابلہ بڑا ہی شاندار رہا اور اقبالؔ کے شاہینوں نے ان کے پیغام کو واضح کردیا۔اس تقریب کا اختتام اس دعا کے ساتھ ہوا کہ اللہ تعالیٰ ہمیں صراط ِ مستقیم پر چلنے کی توفیق عطا فرمائے۔(آمین)

( فاطمہ زہرہ، بشائر صدیقی ہشتم ب)
ادبی میلے کا آنکھوں دیکھاحال

جب مضامین کی بات آتی ہے یا پھر ان کے مقابلوں کی تو میں ہمیشہ سے اپنی مادری زبان یعنی اردو کا بے صبری سے انتظار کرتی ہوں۔ہمارے اسکول میں بھی ہمیشہ کی طرح ادبی میلے کا انعقاد کیا گیا۔ہماری جماعت کی نگران اور ہماری اردو کی استانی نے اس حوالے سے ہماری رہنمائی کی۔ادبی میلے کا آغاز میری تقریر سے ہوا۔مختلف طالبات نے ان شہداء کی تصاویر پکڑی ہوئی تھیں جنہیں نشان حیدر کا اعزاز ملا تھا۔ ہماری ایک ہم جماعت نے ان کے بارے میں معلومات فراہم کیں اور دوسری طالبہ نے نغمہ اے راہ حق کے شہیدوں“پڑھا۔اس کے بعد ان تمام شہداء کو سلام پیش کیا۔

ان تمام سرگرمیوں کا مقصد نئی نسل میں جذبہ شہادت اورحب الوطنی کا جذبہ اجاگر کرنا تھا اور یہ یاد دلانا تھا کہ آزادی کی قیمت لاکھوں انسانوں نے اپنے خون سے ادا کی ہے۔۱۹۴۸؁، ۱۹۶۵؁اور ۱۹۷۱؁ کی جنگوں میں ہر جگہ پاکستان کی فوج اور عوام نے بھر پور دفاع کرتے ہوئے دشمن کے ہوش ٹھکانے لگائے اور یہ بتایا کہ

اے دشمنِ دین تو نے کس قوم کو للکارا
لے ہم بھی ہیں صف آرالے ہم بھی ہیں صف آرا

ہم اس قوم کا مستقبل ہیں اور ہمیں تاریخ سے واقف ہونے کی ضرورت ہے کیوں کہ زندہ قومیں اپنے ماضی کے آئینے میں اپنا مستقبل سنوارتی ہیں۔

(معارج صدیقی ششم،الف)
حبِ رسولﷺ

نقش قدم نبی ؐ کے ہیں جنت کے راستے
اللہ سے ملاتے ہیں سنت کے راستے

ہر مسلمان کو اپنے دل ودماغ میں یہ بات راسخ کر لینی چاہیئے کہ نبی اکرمﷺکی ذات اقدس اصل دین اور آپ ﷺسے محبت شرط ایمان ہے جس دل میں حضرت محمدؐ کی محبت نہیں وہ ویران ہے۔حضور ﷺ سے محبت رب العزت سے محبت کے لیے شرط اول ہے ہر ذی شعور انسان پر یہ بات عیاں ہے کہ جب تک مسلمانوں کے دلوں میں محبت رسولؐ کا جذبہ رہا تب عزت وتمکنت اور فتح و عروج امت کا مقدر رہی ہے اور سرکش اقوام ان کے زیر نگیں رہیں لیکن جب یہ تعلق اور رشتہ کمزور ہوا تو مسلمانوں کا عروج زوال میں تبدیل ہو گیا حتیٰ کہ آج مسلمانوں کا حال نا گفتہ بہ ہے۔

حضرت محمد ﷺ نے فرمایا ”کوئی شخص مومن نہیں ہو سکتا جب تک میں اس کے نزدیک اس کے والدین، اس کی اولاد تمام لوگوں سے سب سے زیادہ محبوب نہ ہو جاؤں “رسول اکرم ؐ کی خدمت میں کسی صحابی نے عرض کیا :رسول ؐ میں سچا مومن کب بنوں گا ؟ فرمایا جب تو اللہ سے محبت کرے گا۔ پوچھا مجھے اللہ سے، محبت کب ہو گی؟فرمایا جب تو رسول ؐسے محبت کرے گا۔

فرمایا میرے آقا مجھے رسولؐ سے محبت کب ہو گی فرمایا جب تو ان کے طریقے پر چلے گا اور ان کی سنت کی پیروی کرے گا اور ان سے محبت کرنے والوں کے ساتھ محبت کرے گا۔ ِحضرت محمدؐسے محبت کرنے والے کوجو ثمرات حاصل ہیں وہ تو بے شمار ہیں۔ یہاں صرف چند ایک بیان کئے گئے ہیں محبت کرنے والا ایمان کی حلاوت پا لیتا ہے نبی اکرم ؐسے محبت کرنے والے کو ان کی رفا قت نصیب ہو گی۔

حضرت محمدؐسے محبت کرنے والے کوجو ثمرات حاصل ہیں وہ تو کثیر ہیں۔ یہاں صرف چند ایک بیان کئے گئے ہیں محبت کرنے والا ایمان کی حلاوت پالیتا ہے نبی اکرم ؐسے محبت کرنے والے کو ان کی رفا قت نصیب ہو گی۔ اس لیے ہمیں چاہیے کہ دین اسلام پر عمل کریں مسلمان بھائیوں سے محبت کریں امت کے درد کو اپنے دلوں میں محسوس کریں اور عمل سے ظاہر کریں کہ محمدﷺ سے محبت کرنے والوں کا کردار دنیا بھر کے لیے ایک اعلیٰ مثال ہوتا ہے۔

(بشریٰ مریم جماعت پنجم )
درخت کی آپ بیتی

اللہ تعالیٰ نے اس دنیا میں جو مخلوقات پیدا کی ہیں ان کی زندگی کوآسان بنانے کے لیے اور نعمتیں بھی بنائیں۔ان میں سے ایک عظیم نعمت میں ہوں میں ایک ایسی نعمت ہوں جس سے دنیا کی ہر مخلوق فائدہ اٹھاتی ہے غرض چرند پرند ہوں یا انسان میں سب کے لیے فائدے کا باعث ہوں۔پہچانیے میں کون ہوں۔ جی ہاں میں درخت ہوں۔میں اللہ کی ایک ایسی نعمت ہوں جوانسانوں کے بہت کام آتی ہے مثلاًگرمی میں راہ گیرمیرے سائے کے نیچے سکون محسوس کرتے ہیں۔دن میں مجھ سے نکلنے والی آکسیجن انسانوں کے لیے تازگی کا باعث ہے۔میری لکڑی سے کاغذ،فرنیچر اور پنسلیں بنائی جاتی ہیں۔میری لکڑی ایندھن کے طور پر بھی استعمال کی جاتی ہے۔مجھ پر پرندے گھر بھی بناتے ہیں۔غرض میں اللہ کی بہت بڑی نعمت ہوں۔

ہیں لوگ وہی جہاں میں اچھے
آتے ہیں جو کام دوسروں کے

(رمشہ زبیر جماعت سوم)
چیزوں کا غلط استعمال،غلط اثرات

ایک بچہ تھا جس کا نام عمر تھاوہ سیل فون بہت زیادہ استعمال کرتاتھااس کو نہ اذان کی فکر ہوتی تھی نہ نماز کی نہ ہی گھر کے کسی کام کی۔عمر اپنے امی ابو کا بالکل خیال نہیں رکھتا تھااس کو یہ بھی نہیں پتا تھاکہ دادی کتنے دنوں سے بیمار ہیں وہ موبائل فون اتنا استعمال کرتا تھا جس کی وجہ سے پڑھائی میں بالکل دل نہیں لگتا تھاکل سے امتحانات شروع ہونے والے تھے اور اسے کچھ بھی یاد نہیں تھا۔یاد ہوتا بھی کیسے؟ سیل فون کی وجہ سے آنکھیں سرخ ہو رہی تھیں اور سر میں بھی شدید درد تھا۔خیر جب پرچہ دینے گیا توکچھ یاد نہیں تھاالٹا سیدھا لکھ کر آگیاکچھ دن بعدجب نتیجہ آیا تو وہ بری طرح فیل ہو چکا تھالیکن فیل ہونے کے باوجود بھی وہ سیل فون کا استعمال کم نہیں کر رہا تھابلکہ اب تواس کے سر میں بھی درد رہنے لگا تھا۔اس کے ابواسے نیورولوجسٹ کے پاس لے کر گئے۔طبیب نے معائنہ کے بعدکہا کہ سیل فون استعمال کرنے کی وجہ سے اسی طرح درد ہوتا ہے۔میں کچھ دوائیں دے رہاہوں انھیں استعمال کریں اس کے علاوہ موبائل فون کا استعمال صرف ضرورت کے وقت کریں۔عمر کو اب اپنی غلطی کا احساس ہو رہا تھا اور بہت شرمندگی محسوس کر رہا تھا۔گھر آکر اس نے نماز پڑھی اس کے بعد گھر والوں سے معافی مانگی اس نے گھر والوں سے وعدہ کیا کہ وہ آئندہ خوب دل لگا کر پڑھے گا۔

(عریشہ عاطف جماعت سوم)
صوفہ کی آپ بیتی

اللہ نے جہاں آپ کے لیے بہت سی نعمتیں یعنی ہوا،پانی،گھر اور کھانے پینے کی چیزیں وغیرہ پیدا کی ہیں وہاں مجھ جیسی نعمت بھی ہر گھر میں موجود ہے۔میں فوم اور لکڑی سے بنتا ہوں اور بہت آرام دہ ہوتا ہوں مجھ پر کچھ لوگ بیٹھ کررسالے اور اخبار پڑھتے ہیں اور کبھی تھک کر مجھ پر آرام بھی کرتے ہیں اور سو بھی جاتے ہیں۔آپ نے مجھے پہچانا میں کون ہوں؟جی ہاں میں ایک صوفہ ہوں۔آئیے آج میں آپ کو اپنی کچھ خوبیاں بھی بتاتا ہوں۔آج کل میں خوبصورت ڈیزائنوں اور مختلف رنگوں میں بازار میں مل جاتا ہوں۔مجھے لوگ اپنے ڈرائنگ روم میں سجاتے ہیں اور مہمانوں کو بٹھا کر خوب داد وصول کرتے ہیں اکثر لوگ مجھے ٹی وی لاؤنج میں بھی رکھتے ہیں۔یہاں تک کہ میں بڑے بڑے محلوں اور بنگلوں کے ڈرائنگ روم اور کمروں کی زینت بنتا ہوں۔بس آپ مجھے صاف رکھا کریں۔اچھا اب اجازت دیں۔ خدا حافظ۔

(امبر فہد جماعت سوم)
درد دل کے واسطے پیدا کیا انسان کو

ایک مرتبہ میں میں امی ابو کے ساتھ بازار گئی وہاں مجھے ایک کھلونا بہت پسند آیا۔میں نے اسے دیکھ کر اپنے ابو سے کہا کہ مجھے یہ کھلونا چاہیے لیکن امی نے مجھے سمجھایا کہ بیٹا ہمارے پاس اس وقت صرف ضرورت کا سامان خریدنے کے لیے ہی پیسے ہیں اور یہ کھلونا بہت مہنگا ہے کچھ دنوں کے بعد ہم آپ کو یہ کھلونا دلوادیں گے۔میں نے کہا ٹھیک ہے میں گھر آکر میں اس کھلونے کو خریدنے کے بارے میں سوچنے لگی اور ذہن میں خیال آیا کہ کیوں نہ میں اپنے جیب خرچ میں سے کچھ پیسے جمع کروں اور وہ پیسے میں امی اور ابو کو دے دوں تاکہ جلد ہی میں اپنا پسندیدہ کھلونا حاصل کر لوں۔پھر میں نے یہ خیال اپنے امی اور ابو کو بھی بتایا۔وہ بھی سن کر بہت خوش ہوئے اور میرے اس خیال کی تائید بھی کی۔اس طرح میں نے پیسے جمع کرنے شروع کر دیے۔ ابھی تین ہفتے ہی گزرے تھے کہ ہمارے اسکول میں کشمیری مسلمان بہن بھائیوں کی مدد کے لیے فنڈ جمع کیا جانے لگا۔

ہماری معلمہ نے بتایا کہ کشمیر میں مسلمانوں کے ساتھ ظلم کیا جارہا ہے۔لوگوں کے پاس کھانے پینے اور ضروریات زندگی کا سامان بھی نہیں ہے لہٰذا اس کار خیر میں آپ لوگ فنڈ میں جو رقم ان کی مدد کے لیے دینا چاہیں تو ان کی ضرورمدد کریں میں نے سوچا کہ میرے اپنے پاس جو پیسے ہیں میں وہ پیسے اپنے اسکول کے فنڈ میں جمع کروادوں گی تاکہ میں بھی اس کارِ خیر میں حصہ لے سکوں۔میں نے گھر آکر امی کو بھی بتایا تو انھوں نے میری اس نیکی کے کام کی حوصلہ افزائی کی۔ دوسرے دن میں نے اپنے جمع کیے ہوئے پیسے معلمہ کو دے دیے اور اسکے بعدمجھے جو سچی خوشی حاصل ہوئی اس کا کویئ اندازہ نہیں لگاسکتا۔ بے شک اللہ تعالی ان لوگوں کی مدد کرتا ہے جو دوسروں کی مدد کرتا ہے۔اللہ تعالیٰ ہم سب کو نیکی کرنے اور دوسروں کی مدد کرنے کی توفیق دے۔ (آمین)

کرو مہربانی تم اہلِ زمیں پر
خدا مہرباں ہوگا عرشِ زمیں پر

تحریم فاطمہ جماعت سوم
اردو تعلیمی میلے کی رپورٹ

ہم نصابی سرگرمیوں کی اہمیت سے انکار کسی طور ممکن نہیں کیوں کہ یہ سرگر میاں ایک طرف فطری صلاحیتوں کے اظہار کا موقع فراہم کرتی ہے تو دوسری طرف ان کے ذریعے طالبات میں قائدانہ صلاحیتیں بھی پروان چڑھتی ہیں یہی وہ سرگرمیاں ہیں جو ذہن کی بہترین نشوونما کے ساتھ ساتھ خود اعتمادی میں بھی اضافہ کرتی ہیں اور طالبات میں آگے بڑھنے کا جذبہ بھی پیدا کرتی ہیں۔ہمارے اسکول میں بھی۱۸ نومبر سے تعلیمی میلے کا ٰ آغاز ہوگیا اس دفعہ تعلیمی میلے کی انو کھی بات یہ تھی کہ یہ صرف ایک دن پر محیط نہیں تھا بلکہ اسے مختلف درجوں کے لحاظ سے مختلف ایام میں ترتیب دیا گیا تھا۔ جماعت سوم میں ادبی اور اخلاقی دائرہ کار سے متعلق مختلف سرگرمیوں کا انعقاد کیا گیا۔ جس میں بچوں نے مختلف اصلاحی خاکے، آپ بیتی ٹیبلو،کوئز اور خاکے پیش کیے گئے۔۔اس کے علاوہ قواعد سے متعلق مختلف سرگرمیاں بھی ترتیب دی گئیں۔جنھیں شرکاء سے کروایا گیا۔الحمد للہ ہم طالبات نے اس تعلیمی میلے سے بہت کچھ سیکھا اور بہت لطف اندوز بھی ہوئے۔ ہماری معلمات نے بھی ہماری خوب پذیرائی کی جس سے ہماری حوصلہ افزائی ہوئی۔

(رجاء شکیل۔ سامیہ عارف جماعت سوم)
کتابچے کی رپورٹ

اپنی سابقہ روایات کو برقرار رکھتے ہوئے اس سال بھی ہمارے اسکول میں ماہ نومبر کے آغاز سے ہی عشرہ اقبال بہت ہی بھرپور اور منظم انداز میں منایا گیا۔اس عشرہ میں جہاں طالبات نے مختلف سر گرمیوں میں حصہ لیا وہاں ان میں سے ایک سرگرمی جماعت سوم تا ہشتم تمام درجوں میں طالبات نے کتابچہ ترتیب دینے کی سعی بھی کی۔اس کتابچہ میں ہر طالبہ نے بالحاظ درجہ(مختلف تعداد کے ساتھ)علامہ اقبال کے اشعار تحریر کیے اس سلسلے میں ہماری معلمہ کی خصوصی ہدایت پر ہم نے یہ اشعار کلیات اقبال سے تحریر کیے کیوں کہ بعض اوقات طالبات انٹرنیٹ سے دیکھ کر اشعار تحریر کرتی تھیں۔ ان میں وہ اشعار بھی تحریر کیے جاتے تھے جو علامہ اقبال کے نہیں ہوتے تھے لیکن انھیں علامہ اقبال سے منسوب کردیا جاتاتھا۔ اس سرگرمی کا مقصد جہاں ادبی ذوق کی آبیاری ہے وہیں علامہ اقبال کے حقیقی پیغام سے آشنائی بھی ہے۔ مختلف درجوں کی طالبات نے بہت ہی خوبصورت کتابچے ترتیب دیے جنھیں ہماری معلمات اور کو آرڈینیٹر نے خوب سراہا۔

(حفصہ۔خدیجہ آصف جماعت سوم )
ماہِ ربیع الاول کی چند جھلکیاں

ربیع الاول کا مہینہ ہمارے پیارے نبی ﷺ کی ولادت اور وصال سے منسوب ہے۔ اس سال ربیع الاول کا مہینہ ماہِ نومبر میں آیا۔جب کہ شاعر مشرق ڈاکٹر علامہ اقبال کا یومِ ولادت بھی اسی مہینے میں آتا ہے۔صد شکر کے دونوں مواقع آنے سے قبل اسکولوں میں تدریسی سرگرمیاں بحال ہوچکی تھیں چنانچہ ہمارے اسکول میں ہفتہ سیرت النبیﷺ منایا گیا۔

ہماری معلمات نے مختلف مقابلہ جات ترتیب دیئے سیرت طیبہﷺ کے مختلف گوشوں پر روشنی ڈالنے کے لیے تقریری مقابلے اورنعت خوانی کے مقابلے منعقد ہوئے اورمضامین نویسی کے مقابلے منقعدکئے گئے۔تقریری مقابلوں نے دلوں کو گرما دیا اور عشرہ اقبال میں تقریری مقابلے اور بیت بازی کے مقابلے منعقد ہوئے جن میں طالبات نے بھرپور حصہ لیا،طالبات نے عمدہ ادائیگی کے ساتھ اشعار پڑھے اور ہماری معلمات نے بھر پور رہنمائی کی۔کامیاب طالبات میں اسناد تقسیم کی گئیں۔ ان سرگرمیوں کے ذریعے ہمیں بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا۔

(مریم خان جماعت: سوم۔ب)
میرے نبی ﷺ سے میرا رشتہ کل بھی تھا اورآج بھی ہے

میرے نبی ﷺسے میرا رشتہ کل بھی تھا اور آج بھی ہے۔ہماری خوش نصیبی ہے کہ ہم الحمد للہ مسلمان ہیں اور امت محمدی ؐہیں کوئی اندازہ کرسکتا ہے کہ کوئی ہمارے لیے پوری رات جاگتے رہے۔آپ ؐامت کے لیے پوری رات دعا کرتے تھے۔ کوئی شخص ہم سے اتنی محبت کرسکتا ہے جتنی آپﷺ ہم سے کرتے تھے وہ ہماری فکر میں رات کو سوتے نہیں تھے جب ساری دنیا سو جاتی تو وہ امت کے لیے روتے تھے ہر وقت اللہ کے آگے ہمارے لیے گڑگڑا کر ہمارے لیے دعا کرتے کہ اللہ میری امت کی بخشش فرما۔ہم اپنی نبی ؐ سے محبت کا دعوی ٰکرتے ہیں مگر سنتوں کے مطابق زندگی نہیں بسر کرتے۔سب سے پہلے ہمارا ختم نبوتؐ پر ایمان ہونا ضروری ہے ہمارے نبی ؐ آخری نبی ہیں آپؐ کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا ناموس رسالت ؐپر جان قربان کرنے سے گریز نہیں کرنا چاہیے جیسے آپ ؐاپنے عزیز و اقارب پڑوسیوں سے حسن سلوک سے پیش آتے تھے اور امت سے محبت کرتے تھے ہمیں بھی آپ ؐ کے بتائے ہوئے راستے پر چلنا چاہیے تاکہ اللہ ہم سے راضی ہو اور ہم جنت کے حق دار بن سکیں، کیوں کہ دنیا و آخرت کی کامیابی اسوہ حسنہ پر عمل کرنے سے ہی حاصل ہوگی۔

( عدن فاطمہ ششم۔الف )
لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری

یہ نظم علامہ اقبال کی ہے یہ شعر بچے کی دعا سے لیا گیا ہے بچہ اپنی خواہش کا اظہار ایک دعا کی صورت میں کررہا ہے کہ اللہ اس کی زندگی ایک شمع کی صورت یعنی روشن کردے۔میں بھی یہی تمنا رکھتی ہوں کہ اللہ تعالیٰ میری زندگی کو علم کی شمع سے منور کردے اور میں بھٹکے ہوئے لوگوں کو راستہ دکھاؤں اور ان کو نیکی کی طرف بلاؤں، ان کی ہر مشکل میں ان کی مدد کروں ان کو بتاؤں کہ پیارے نبیﷺ کتنے رحم دل انسان تھے اور آپ ﷺ نے کیسے انسانوں کو ہدایت کی طرف بلایا اسلام کی دعوت دی اور قرآن مجید کے بارے میں بتاؤں تاکہ لوگ اس کے ذریعے جنت حاصل کرنے کی راہ پر چل سکیں۔

( شانزے خان چہارم۔ب)
دیار عشق میں اپنا مقام پیدا کر

علامہ اقبال نے یوں توبہت سے اشعار لکھے ہیں لیکن یہ شعر اپنے بیٹے جاوید اقبال کے لیے لکھا تھامگر اس میں جو پیغام ہے وہ پوری نوجوان نسل اور ملت کے لیے ہے۔یعنی ہمیں اللہ کو خوش کرنا ہے ہم جہاں بھی ہوں چاہے اپنے وطن میں یا وطن سے باہر ہوں ہمیں اللہ تعالیٰ اور نبی ﷺ کے احکامات اور تعلیمات کو ہمیشہ یاد رکھنا ہے اور اسلام کا بول بالا کرنا ہے۔اللہ کی محبت میں خود کو فنا کرکے ہمیں اللہ کی خوشنودی حاصل کرنی ہے اس کی رضا حاصل کرنی ہے۔اقبال نے اپنے اس شعر میں اپنے شاہینوں سے یہ ہی کہا ہے کہ ہمیں اس دور میں اسلام کا جھنڈا بلند کرنا ہے اللہ کے پیغام کو آگے پہنچانا ہے علامہ اقبال اپنے نوجوانوں کو شاہین کی طرح دیکھنا چاہتے ہیں یہ شاہین ہی انقلاب پیدا کرسکتے ہیں اور آ ج کے دور میں سب سے بڑا انقلاب قرآن کی تعلیمات سے سب کو روشناس کروانا ہے اور سنت رسول ﷺ کو زندہ کرنا ہے۔

تو رازِ کن فکاں ہے اپنی آنکھوں پر عیاں ہو جا
خودی کا راز داں ہوجا، خدا کا ترجماں ہو جا

( ارحم فاطمہ پنجم۔الف)
اسکول وین کاسفر

آج میں آپ کو اپنی اسکول وین کے سفر کا واقعہ سناتی ہوں۔آج صبح سات بجے وین کے ہارن کی آواز آئی۔پھر میں نے بیگ اٹھایااور جلدی جلدی گھر والوں کو اللہ حافظ کر کے وین میں آکر بیٹھ گئی۔پہلے وین کی تمام ساتھیوں کو سلام کیا اور پھر سواری کی دعا پڑھی۔وین میں نئی آنے والی ساتھیوں کے لئے جگہ بنائی۔میری کوشش تھی کہ وین میں اپنی ساتھیوں سے مختصر وقت میں زیادہ سے زیادہ باتیں کر لوں۔اتنے میں اسپیڈ بریکر آیا تو زور کا جھٹکا لگا اور ہم سب ایک دوسرے پر گرنے لگے اور منہ سے بے اختیار یا اللہ کی صدا نکلی۔صبح امی نے یونیفارم پر استری کی تھی جو کہ اب خراب ہو چکی تھی کیو نکہ ہماری وین بچوں سے بھری ہوئی تھی مجھے بھوک لگ رہی تھی تو میں نے بیگ سے بسکٹ اور کھانے کی دوسری چیزیں نکال کر کھانا شروع کر دیں اور پھر جب بقایا خالی لفافے کھڑکی سے باہر پھینکنے لگی تو معلمہ نے سمجھایا،کہ بیٹا یہ ملک بھی ہمارے گھر کی طرح ہے اس لیے اس کی صفائی کا خیال رکھیں۔باتوں باتوں میں ہم اپنی منزل یعنی اسکول پہنچ گئے۔گھنٹی بج رہی تھی اور ہم جلدی جلدی اپنی قطار میں کھڑ ے ہوکر دعا میں شریک ہو گئے۔

( حفصہ فاروقی چہارم اے)
مقابلہ فن پوسٹر سازی

ہر سال کی طرح اس سال بھی عثمان پبلک اسکول میں عشرہ اقبال منایا گیا جس میں مختلف مقابلہ جات منقعد کئے گئے ان ہی میں ایک مقابلہ فن مصوری(پوسٹرسازی) بھی تھا۔جس میں جماعت اول تا دہم کی طالبات نے حصہ لیا۔ہر جماعت کی دودو طالبات کوعلامہ اقبال کے منتخب اشعار دیئے گئے جن پر طالبات نے بہترین منظر کشی کی اور اپنی صلاحیتوں کا اظہار بذریعہ رنگ اور برش سطح قرطاس پر بکھیرا اور معلمات اور اپنی ساتھی طالبات سے داد وصول کی اور اپنی سوچ اور تصور کو طالبات کے سامنے حقیقی انداز میں پیش کیا۔

(حمنہ ملک جماعت ششم)
الیکشن کا انعقاد

عثمان پبلک اسکول سسٹم کی روایات میں الیکشن کا انعقاد بھی شامل ہے ہر سال کی طرح اس سال بھی اپنی روایات کو برقرار رکھتے ہوئے عثمان پبلک اسکول سسٹم کیمپس ۳ میں ماہ اکتوبر میں طالبات میں قائدانہ صلاحیتوں کو اجاگر کرنے لئے الیکشن منعقد کیا گیا۔جس میں طالبات اور اساتذہ نے جوش و خروش سے حصہ لیا۔امیدوار کپتان اور نائب کپتان نے اپنے انتخابی نشانات کو خوبصورت چارٹس کی شکل میں سافٹ بورڈ پر آ ویزاں کئے اور اسمبلی اور تمام کلاسز میں اپنے حق میں رائے عامہ ہموار کرنے لئے الیکشن مہم چلائی۔ اس سال کی خصوصی بات یہ بھی تھی کہ الیکشن میں جماعت دہم کی طالبات کے ساتھ جماعت نہم کی طالبات کو بھی الیکشن کی ذمہ داریاں نبھانے کا موقع فراہم کیا گیا۔ دونو ں جماعتو ں نے مل کر اپنی اساتذہ کی مدد سے ان ذمہ داریوں کو احسن انداز میں نبھایا۔ طلباء وطالبات نے اپنے ووٹ بخوشی اہل امیدواران کو دیئے۔موجودہ صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے تمام تر احتیاطی تدابیراور سماجی فاصلہ کا خاص خیال رکھا گیا۔پرامن ماحول اور مقررہ وقت میں الیکشن کے تمام امور احسن انداز میں تکمیل تک پہنچے بعد ازاں الیکشن امیدواران نتائج جاننے کے لئے پرجوش و بے قرار تھے۔ منصفانہ اور آ زادانہ الیکشن کے نتائج مرتب ہونے کے بعد نتائج کا اعلان کیا گیا۔

منتخب کپتان اور نائب کپتان سے ان کی ذمہ داریوں کو احسن انداز میں نبھانے کا عہد لیا گیا اور محترمہ پرنسپل صاحبہ نے طالبات کے اندر اس شعور کو اجاگر کیا کہ یہ ذمہ داریا ں امانت ہیں۔ اس طرح اس سال کا الیکشن پورے اسکول کی مشترکہ کاوشو ں سے بہترین طریقے سے انجام پایا۔

(سارہ عبید نہم الف)
بزمِ اقبال

شاعر مشرق علامہ اقبال اس عظیم شخصیت نے سیالکوٹ میں نو، نومبر ۱۸۷۷ء میں آنکھ کھولی کون جانتا تھا کہ سیالکوٹ میں پیدا ہونے والا یہ نوجوان مسلمانوں کا اقبال بلند کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا علامہ اقبال نے برِ صغیر کے مسلمانوں میں آزادی، دینی حمیت،غیرت اور خودی کا احساس اُجاگر کیا ان کی شاعری نے مردہ دلوں میں جان ڈال دی اور ایک آزاد وطن کا خیال مسلمانوں کے دلوں میں ڈالنے والے علامہ اقبال تھے۔ ہم ہر سال ان کا یومِ پیدائش بڑی عقیدت سے مناتے ہیں تاکہ آنے والی نسلیں اُن کے کلام اور پیغام کو سمجھ سکیں۔

اس سال ۲۰۲۰ء میں بھی کرونا وبا کی وجہ سے پیش آنے وا لی مشکلات کے باوجود ہمارے اسکول میں عشرۂ اقبال منایا گیا۔جن میں اقبالیات سے متعلق کئی مقابلے ہوئے جن میں سب سے دلچسپ مقابلہ مقابلہ بیت بازی تھا جو کہ جماعت سوم تا دہم کے طلبہ کے درمیان منعقد کیا گیا۔ طالبات نے کُلیاتِ اقبال سے اشعار کا انتخاب کیا اور ان اشعار کو ذہن نشین کر لیا۔ ہماری معلمات نے بھی تلفظ کی اصلاح کے لئے ہماری رہنمائی کی۔۲نومبر کو جماعت سوم اور چہارم کے مابین مقابلہ ہوا۔عمدہ ادائیگی دلچسپ اندازِتکلم نے مقابلے میں چار چاند لگا دیے۔اسی دن جماعت پنجم اور ششم کے درمیان بھی مقابلے کا انعقاد ہوا۔ ۹نومبر کوجماعت ہفتم اور ہشتم کے مابین بیت بازی کا مقابلہ ہوا جو بہت خوب رہا۔جماعت ہفتم نے جماعت ہشتم پر برتری حا صل کی اس کے بعدجماعت ہفتم اور جماعت دہم کے مابین مقابلہ رکھا گیا جس میں جماعت دہم کو برتری حاصل ہوئی اور جماعت ہفتم مقابلے سے باہر ہو گئی اگلے روزجماعت نہم اور جماعت دہم کے مابین مقابلہ ہوا جس میں جماعت دہم نے سبقت حاصل کی۔ الغرض کہ عشرہ اقبال میں منعقد ہونے والے تمام مقابلے بالخصوص بیت بازی کے مقابلے بہت ہی خوب تھے جن کے ذریعے اقبال کے پیغام کو عام کیا گیا۔

( حمنہ خان جماعت: ہفتم ب)

جھپٹنا، پلٹنا، پلٹ کر جھپٹنا
لہو گرم رکھنے کا ہے اک بہانہ

اس شعر میں شاعر مشرق علامہ اقبال جہدِ مسلسل کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ ایک شاہین صفت نوجوان کبھی ہار نہیں مانتا، وہ اپنے دشمنوں پر حملہ کرتا ہے اور بار بار حملہ کرتا ہے، پسپا ہونے کے بعد دوبارہ اُڑان بھرنے کی تیاری کرتا ہے، گر کر پھر اُٹھنے کے لئے کمر باندھتا ہے اور یہی اس کی جہد مسلسل کا خلاصہ ہے۔ اقبال نے مرد مومن کو اس بے مثال پرندے سے تشبیہ دی ہے کیونکہ اگر ایک مرد ِ مومن کی زندگی میں یہ طرز عمل،استقامت و استقلال نہ پایا جائے تو وہ جمود کا شکار ہو جاتی ہے۔اور اس کی رگوں میں دوڑتا خون سرد پڑنے لگتا ہے۔

عزم مسلسل، اور شب وروز محنت کی بہترین مثال قائد اعظم کی زندگی سے ملتی ہے ان کے قدم کبھی نہ ڈگمگائے آج کی نوجوان نسل میں بھی اسی جذبے کی ضرورت ہے وہ بھی انتھک محنت کریں چھوٹی چھوٹی مشکلات سے نہ گھبرائیں اور کامیابی کے زینے پر قدم بہ قدم آگے بڑھتے جائیں ۔

تندئی باد مخالف سے نہ گھبرا اے عقاب
یہ تو چلتی ہے تجھے اونچا اڑانے کے لیے

(سارہ مریم ہفتم ب)

حمدؐ کی محبت دین حق کی شرط اول ہے
اسی میں ہو اگر خامی تو ایماں نامکمل ہے

اس شعر میں شاعر یہ کہہ رہے ہیں کہ دین حق کی پہلی شرط ہے کہ وہ حضرت محمدﷺ سے عشق وعقیدت اور محبت و اُلفت کریں پھر چاہے وہ عالم ہو یا عامی، حاکم ہو یا محکوم، کالا ہو یا گورا اگر اسی محبت میں کمی رہ جائے تو ایمان نامکمل رہ جائے گا۔ لیکن آج اس دور میں دشمنانِ اسلام منظم ہو کر مسلمانوں کے دلوں میں عشقِ محبت کی شمع بجھا دینے کا سوچ رہے ہیں وہ یہ جانتے ہیں کہ اگر مسلمانوں کے دلوں سے عشقِ محمدﷺ کے دیئے بجھا دیئے جائیں تو دنیا کی کوئی طاقت ان کی کھوئی ہوئی میراث نہیں دلا سکتی آج دنیا میں پیارے نبی ﷺ کی شان میں گستاخی کی جا رہی ہے ،وہ نبی ﷺ جس نے اُمت کے لئے رو رو کر راتیں گزاریں۔ ہمیں چاہیے کہ ہم اسلام کو نظامِ حیات قبول کریں، حضرت محمدؐکی سیرت پر عمل پیرا ہوں،آپ ؐکی ذات سے محبت کریں۔ آج ضرورت ہے کہ عشق کے اصل تصور کو قرآن وحدیث کے آئینے میں اس طرح اُجاگر کریں کہ آج ہم جو تلاش ِ حقیقت میں سرگرداں ہیں اس حقیقت سے باخبر ہو کر آپ ﷺکے ساتھ عشق ومحبت کا وہ تعلق استوار کریں جو ہماری زندگی کو سنوار سکے اور انہی کی نظروں کو دانشِ فرنگ کے جلوے کبھی خیرہ نہ کر سکیں

بقولِ شاعر

خیرہ نہ کر سکے مجھے جلوہ دانش فرنگ
سرمہ ہے میری آنکھ کا خاکِ مدینہ و نجف

(بریعہ عبید ہفتم ب )
نئی صبح،نئی ابتدا

پر ندے چہچاتے ہیں
خوشی کے گیت گاتے ہیں
ہمیں ہر دن بتاتے
نئی صبح۔۔نئی ابتدا
نئی صبح۔۔نئی۔۔ابتدا
وقت کی تو قدر کر
سبق سچائی کا پڑھ
زندگی میں آگے بڑھ
نئی صبح۔۔نئی ابتدا
نئی صبح۔۔۔نئی ابتدا

(یسریٰ ٰذیشان جماعت:اول)
اقبال کی شاعری سے انتخاب

دیارعشق میں اپنا مقام پیدا کر
نیازمانہ نئے صبح و شام پیدا کر
میرا طریق امیری نہیں فقیری ہے
خودی نہ بیچ غریبی میں نام پیدا کر

(عثمان جماعت اول)
میں امی ابو کی آ نکھ کا تارا ہوں

سب کہتے ہیں کہ میں بہت پیارا ہوں کیونکہ میں امی ابو کی آنکھ کا تارا ہوں۔امی ابومجھے بہت بہت پسند کرتے ہیں کیونکہ میں جھوٹ نہیں بو لتاہوں۔میں امی ابوکی طرح نظر آتا ہوں میرے بال امی کی طرح ہیں۔میں بہت شرارتی بچہ ہوں اور پڑھائی میں اچھا ہوں۔میں امی ابو کی طرح ڈاکٹربننا چاہتا ہوں۔میں قر آن پڑھنا چاہتا ہوں۔میں قر آن حفظ کر رہا ہوں تاکہ حافظ قرآن بن سکوں۔میں اپنے امی ابو اور اساتذہ کا نام روشن کر نا چاہتا ہوں۔میں اللہ سے دعا ما نگتا ہوں کہ مجھے نیک انسان بنا اور دوسروں کی خدمت کر نے والا بنا۔میری دعا ہے کہ میرے امی ابوکبھی پریشان نہ ہوں ہمیشہ خو ش رہیں (آمین)

(آریز گھمن جماعت اول)
پہلیاں

سوال: وہ کون سے شہر کا نام ہے جس میں نو نقطے آتے ہیں۔

(پاک پتن) :جواب

سوال: وہ کون سی چیز ہے جو چلتے چلنے رک جاتی ہے،اور اس کی گردن کاٹ دی جائے تو چلنے لگتی ہے۔

(پینسل):جواب

سوال: وہ کون سی چیز ہے جسے ہم پکاتے ہیں تو وہ جم جا تی ہے

(انڈا):جواب

(آورش شاہد جماعت دوم)
رپوٹ برائے عشرہ اقبال

ماہ نومبر میں ہمارے اسکول میں عشرہ اقبال کا انعقاد کیا گیا۔ جس میں جماعت اول اور دوم کے طلبہ نے حصہ لیا۔ اور مختلف سرگرمیاں سر انجام دی گئیں۔ عشرہ اقبال سے پہلے ہمارے اساتذہ نے بھر پور انداز میں طلبہ کی تیاری کروائی۔ جس میں ہم سب ساتھیوں نے مل کر حصہ لیا۔ مثلا بیت بازی، تقاریر، تحت اللفظ اور عشرہ اقبال کو ہم نے اور ہمارے اساتذہ نے جوش و خروش کے ساتھ منایا۔ مقابلے کے اختتام پر نمایاں طلبہ و طالبات کو سرٹیفیکیٹ دئیے گئے اور ان کی حوصلہ افزاٗئی کی گئی۔

(احمد اختر جماعت دوم)
شا ہی قلعہ کی سیر

یہ ۲۰۱۷ء کی با ت ہے کہ میر ے بابا نے لاہور کی سیر کا پر و گرا م بنایا ہم سب کی چھٹیا ں تھیں ا ور ان دنوں کر و نا نا م کی کسی و با کا نا م و نشا ن بھی نہ تھا۔لہذاٰ ایک صبح ہم سب ہوا ئی جہا ز میں بیٹھ کر سفر پر روا نہ ہو ئے۔سفر کی شر و عا ت د عا وئں سے کی۔ڈھا ئی گھنٹے کے د لچسپ سفر کے بعد ہم لا ہو ر پہنچے ۔وہا ں ہم نے اپنے ما مو ں کے گھر قیا م کیا ا ور سب نے خو ب مز ے کئے ہما ر ے ما موں زا د بہن بھا یؤ ں نے ہمیں لا ہو ر گھما یا ہم سب سے پہلے مینا ر پا کستا ن گئے جو ہمیں ۲۳،ما ر چ ۱۹۴۰ قر ر دا د پا کستا ن منظو ر ہو نے کی یا د د لا تاہے۔ پھر ہم سب اس کے سا منے مو جو د شا ہی قلعہ کی سیر کے لیے گئے۔قلعہ اتنا بڑا تھا کہ ہم چلتے چلتے تھک گئے۔و ہا ں ہم نے اتنی مختلف چیز یں د یکھیں کہ ہم حیرا ن ر ہ گئے۔ قلعے کے ا و نچے نیچے را ستو ں پر چلنے میں بڑا مز ا ٓیا۔ و ہا ں میں نے پہلی با ر تہہ خانے د یکھے۔

بادشاہ کا تخت دیکھا۔شیش محل دیکھ کر تو ہماری آنکھیں کھلی کی کھلی رہ گیئں۔ اتنے خوبصورت شیشے تو ہم نے کبھی نہیں دیکھے تھے۔ پھر بادشاہی مسجد میں عصر کی نما ز ادا کی او ر تھو ڑ ی د یر میں وا پسی کی رہ لی۔لیکن وا پس جا نے سے پہلے مفکر پا کستا ن، شاعر مشرق،علا مہ اقبا ل کے مزا ر پر حا ضر ی د ی ا و ر فا تحہ پڑ ھی۔ علامہ اقبا ل کا مزا ر شا ہی قلعہ کے صد ر دروا ز ے کے با ہر وا قع ہے۔ شا ہی قلعے کی اس یادگار سیر کو ہم کبھی نہیں بھلا سکیں گے۔

(مناہل کامران پنجم بی)
عائشہ کی فریاد

آتا ہے یاد مجھ کو اسکول کا زمانہ
صبح سویرے جانا،دن میں واپس آنا
پڑھائیاں کہاں ہیں، وہ اپنی جماعتوں میں
ایک ٹیچر کا جانادوسری ٹیچر کاآنا
لگتی ہے چوٹ دل پر آتا ہے یاد جس دم
ہم جولیوں سے مل کر وہ مسکرانا
وہ پیاری پیاری ہوائیں
دیتی تھیں ہمیں دعائیں
وہ اقبال کی نظمیں ہمارا اشعار کہنا
روزانہ ہمارا دعا ”لب پہ آتی“کہنا
آوازوں کا گونجناہاتھوں میں کتاب لینا
سبق پہ غور کرنا سوالوں کو حل کرنا
اسکول جا کر پڑھنا
ٹیچر کی پیاری صورت
وہ کامنی سی مورت
آباد تھا جس کے دم سے عثماں کا آشیانہ
ایسے وبا کا پھیلنا پھر گھر پر ہی بیٹھنا
کیا بد نصیب ہوں میں
اسکول کو ترس رہی ہوں میں
ساتھی ہے، اپنے مسکن میں
میں بھی گھر میں پڑی ہوئی ہوں
اس قید کا خدایا دکھڑا کسے سناؤں
آزاد ہم کو کر دے آن لائن سے الٰہی
آزاد ہم کو کر دے اس وبا سے الٰہی
آتا ہے یاد مجھ کو اسکول کا زمانہ
صبح سویرے جانا منزل کو اپنی پانا
آتا ہے یاد مجھ کو اسکول کا زمانہ

(عا ئشہ صدیقہ جماعت:دوم)
اسلامیات کی سرگرمیاں

الحمد للہ شعبہ اسلامیات کے تحت سال ۲۱۔۲۰۲۰ ء کے دوران کووڈ۔۱۹ جیسے نا مساعد حالات میں بھی جماعت سو م تا ہشتم مختلف سرگرمیاں تشکیل دی گئیں۔مثلا ً

٭احادیث، دعاؤں اور مختلف موضوعات سے متعلق اہم معلومات پر مشتمل کتا بچے بنوائے گئے۔

٭آب زم زم اور زکوٰۃ کی سر گر می کر وئی گئی اور سنّتوں پر عمل سے متعلق رول پلے کروائے گئے۔

٭”قرآن کا معیار مطلوب مومن“ کے موضوع پر تقاریر کی گئیں۔

٭قرآن اور سائنس کے مو ضوع پراور مختلف موضوعات پر مشتمل پراجیکٹ بنوائے گئے۔

٭واقعہ معراج کی سر گرمی جیسی مختلف النوع سر گر میا ں کر وائی گئیں۔جن میں بچوں نے بھر پو رشرکت کی دلچسپی اور خوشی کا اظہار کیا۔صدر ونائب مدرسہ، کو آرڈینیٹراور تمام معلمات نے بھی طالبات کی کا رکر دگی کو خوب سراہا۔

(ارحم فاطمہ۔امیمہ عامر جماعت پنجم )