NEWS LETTER
Usman Public School System - Campus 5 | 2021-2022

In the name of Allah, the Most Merciful, the Most Kind

VISION STATEMENT

Nurturing generations to serve the role as leaders of Ummah.

MISSION STATEMENT

To motivate the students in becoming future leaders, capable of providing guidance to the Muslim Ummah in all spheres of life and lead the contemporary world in accordance with the teachings of Islam.

CORE VALUES

1. Taqwa (fear of Allah)
2. Following seerah of Rasoolullah
3. Enjoying good and forbidding evil.
4. Research and Explore
5. Service to all creations
6. Protection of ideology of Pakistan

Poems MY SECOND HOME

People always want a place,
where they can get a grace.

A place where they can study,
and live-in world with strong base.

I got a chance to study in a school,
that made me able to face.

It is helping me that much,
I’m sure UPSS cannot be replaced.

Ali Husnain
Class II - Rose
TRUE FRIEND

Every time I meet him,
It teaches me good things.
Explains the goods of religion and the world.
Leads to the straight path.
Never be sad it also tells jokes.
It’s with me
Lives in my bag
This is my true friend
Which is called a BOOK.

Shahood Alam
Class III
PARENTS

You picked me up so many times
When I was just a child.

You dried my tears, when I was sad
You kept me by your side.

You tried to teach me right from wrong
Although I didn't know

My punishments hurt you a lot
Your feelings you couldn’t show

So many times, I hurt you
With cruel word I’d say

You knew I didn’t mean them
And you love me anyway

Now, as I am older
And I look back on time

I owe you for my success
Because you kept me in line

If I had the choice to change my life
And change my family

I wouldn’t change a single thing
Because the best parents belong to my side.

Mehwish Aleem
Class VI
FRIENDS

How good to lie a little while?
And look up through the tree.

The sky is like a kind big smile
Bend sweetly over me.

The sunshine flickers the lace
Of leaves above my head.

And kisses me upon the face
Like mother before bed

Wind come stealing over the grass
To whisper new things

And through I can’t see him pass,
I feel its fluffy wings

So many gentle FRIENDS are near,
Whom one can scarcely

A child could never feel a fear
Where ever he may be.

Eisha Rizwan
Class V
MY SCHOOL PROMISE

Each day I’ll do my BEST,
And I won’t do any less.

My work will always please me,
And I won’t accept any mess.

I’ll paint carefully and,
My writing will be free

And I’ll not be happy,
Until my papers will complete.

I’ll always do my HOMEWORK,
Try my best in every TEST.

I won’t forget my promise.
To do my very best.

Abeera Noor
Class IV
EAST & WEST PARENTS ARE THE BEST

Thank you Mom Thank You Dad
You give me moral values
And made me a good person
Nobody on Earth Will
Love me more than YOU
In this selfish world of Today
You are the selfless TWO
May Allah bless you both
In this world & Hareafter.

Muqadas Siddiq
Class V
PARTS OF SPEECH

Everything circling us is noun,
Like cup and tray, shirt and gown.
Pronoun is used in place of noun,
Like he and she and all around.
The adjective explains a thing,
Like red bag and cruel king.
The verb means an action that is done,
To play and write, to run and have fun.
How action is done the adverbs tell,
Like quickly, sadly, carefully and well.
The preposition shows the contact,
Like on the bed and behind the cat.
Conjunction helps in many ways,
To interact sentences or phrases.
The interjection needs an exclamation mark,
Like Oh My God! It’s a shark!

Sabiha
CLASS VII
MY PALESTINE

Rivers are floating
Stars are bleeding
People are being cut
And the city is devastating
The world is taunting but the devils aren’t stopping
My Palestine is burning
My Palestine is burning
Enemies are afraid of death
Yet the martyred are smiling
They know JANNAH is waiting
They know SHAHADAH is calling.

Hania Arif
‘REPENT TO ISLAM’

After her parents told her about the religion Islam,
And now she recites the Holy book Quran,
To prevent her from Shaitan
She makes wudu after hearing the Adhan,
She follows the five pillars of Islam.
She did it all,
But then she falls
Forgets to pray until the time is gone,
Upon the call
She realizes her faults,
But later in her life, after turning to right
She promised Allah and really tried,
To please HIM before she dies.

Amna Malik
Creative writing HOW MUSLIMS CELEBRATE EID-UL-ADHA

Muslims go to Eid gah to offer Eid salah. They greet each other by saying “Eid Mubarak” or “Khair Mubarak”. They attend Eid feast at their relatives’ homes. Children receive eidi (envelope) or gifts from their elders. The festival is celebrated with great joy and happiness all over the world.

Luqman Asif
Garde I Tulip
MY FAVORITE FOOD

My favorite food is biryani. Its color is yellow and orange. It smells chicken and spices. It is soft and meaty.

It tastes spicy and flavorful. My mother cooks for me.

Alisha khalid
Garde 1 Rose
STORY FOR MAGAZINE

My friend’s name is Ahmed. His favorite game is snooker. He likes to play mobile games. He has good habits but some of his habits are not nice. He does not pay attention to his studies because he spends lot of time with mobile games.

Exams are very near but his attention is low. On result day when he got his result, oh……… he was failed in more than one subject. He was very sad. But still he thanked to Allah SWT because it was not the final exams.

Now he promised himself that he would focus on his studies instead of playing mobile games. After that day his routine was changed. He paid more and more attention to get a good result.

Muhammad Rasheed
Class II - Tulip
SCHOOL LIFE BEFORE AND AFTER COVID-19

What was your reaction at the first day of school?? So, we all know that due to covid-19 all educational institutes were closed from 26th of February 2020. First few days were spent in panic. However, we all got relaxed and made this year a holiday year, the best days of our lives. We took and missed online classes. All we did, was sleeping, watching movies. I played indoor games but the time vanished and a year passed.

Students beloved education minister Shafqat Mehmood was accused of betrayal when he announced the bad news of re-opening of schools and colleges. He, who was given the title of 'Heavenly man' was not taken back. So, the school reopened on 15th of September 2020 and everyone dragged themselves forcefully towards the school. On the entrance of the school gate our hands were sanitized and everyone went to their classes.

Firstly, it was quite confusing to recognize our friends and fellow due to the mask and apparently everyone’s uniform was same and usually the hair style also. I was like that our friends were standing ahead and we ended up patting someone's else’s shoulder that was an embarrassing moment. The next embarrassing moment was communicating while sitting at a 6 feet distance. It was awkward when the person next to you, in fact six feet part is saying something and you're gonna be like ‘Sorry! can you repeat' or 'I did not catch that’ or even ‘Would you mind speaking a little loud'. It makes you feel as if you are getting deaf.

There is one more problem that every student faced at first. As you know first day means everything is new so the face mask is also new that have tight strings and it stretches your ears due to this, it makes your ear to be like monkey’s ears. Moreover, if you stretch out your hand for greeting by mistake, the other person looks at you weirdly and does not shake hand and that is quite embarrassing and guilty.

At last, initial days at school/college were little bit confusing and embarrassing but we started our learning back and made it a first step towards recovery. Soon, we have innovations to the new ways of living!!!

Khusbakht
Class VI
WHY DON’T WE PAY TAXES?

Pakistan after its independence is always suffering from lack of funds. The condition was not always the same. Pakistan was a progressive country but after 70s it’s economy showed a decline on the graph. It has to borrow loans from IMF, World Bank and other countries to balance the trade. These are the facts showed in newspapers and books of accounts. The view of picture is quite different. Politicians in our country are the most corrupt. They utilize the funds for their personal welfare. They live a lavish life when they become senator, parliamentarian or any other government officer. Therefore, people in Pakistan avoid paying taxes however; they donate to the welfare organization extravagantly. Welfare organizations develop many welfare institutes for humanitarian, like they can develop hospitals, schools, orphanage and many other institutes but they can't construct roads, dams, bridges, canal system, banks, railway tracks, airports, provide defense, settle industries etc. At last these all works are the responsibilities of government. Government can accomplish these works by money collected by taxes. We have to pay taxes to the government so that government can perform all these work for the development of country. Now what is your cogitation about paying taxes…???

Umaima Siddiqui
Class VII
MUSLIMS ARE THE BEST NATION

“And hold firmly to the rope of Allah SWT all together and do not become divided” (Surah al Imran:103)

Muslims are the best nation because they have the light to follow the right. This light of Quran and Sunnah, which leads to Jannah. Muslims have Allah’s mercy in the world and hereafter both. All over the world, Muslim’s population is more than an Arab, Muslims have greatest youth power, Muslims are present in almost every populated continent, they are situated on the best water ports and seven out of ten most oil producing countries are Muslim countries. But Muslims are needed to practice Islam because now a days Muslims are in a deep slumber and crumble. If they practice Islam, they can get control over the world and they can become the superpower of the world.

Muslims have unusual and intense faith, that makes the enemy intimidated as to how Muslims have no fear of dying, they serve their lives in the way of Islam. So, they are doing everything they can, to weaken the faith and for that they are making Muslims young population indulge in worldly life. They are making such technology and applications that are making Muslims detached from the teaching of Islam, for instance; mobile phones, computers, laptops and tik tok etc. They are spreading such conflicts which make Muslims forget their real reason of birth. Muslims are getting away from Islam and they are forgetting Allah’s SWT orders and commands he gave to us. We have even forgotten the torment of hell and luxuries of Jannah. A day will come when we will have to cut what we are sow in the world.

Imagine that if there is a colonel who is on junior rank, he went to the captain’s office. Captain commanded him to bring the file from the next office. If he replied that it was really hot that day to bring the file from there, and so he didn’t. Do you know what will happen? The colonel will be discharged him from his rank. So, consider that what Allah SWT has commanded us and what we are doing? For what reason we aren’t following Allah’s command? and what we have to payback for this on the day of judgment?

Our impracticality makes us responsible for the declining states of Muslims today because if we follow Allah’s commands and be united, we can get success. We can be able to defeat the enemies of Islam, if we are integrated.

Alishba Irfan
Class VIII
MY INCLINATION

Everyone has a wish just like that I also have one, I have a wish to be a HEAD of UNICEF. as we all know that globally, it is estimated that up to 1 billion children's aged 2-17 years have experienced physical and emotional violence so I want to rescue and protect them from violence and from the bullying that make them scared and which results in the lack of self-steam. And on the other hand, the second crucial issue is of child labor, the consequences are staggering. Child labor can result in extreme bodily and mental harm, and even death. It cuts children off from schooling and health care, and it is also threatening their futures. The above-mentioned problems are not the only major problems, there are more agitations related to children's life and their future, so I want to be an UNICEF head and want to eliminate all the problems and give all the facilities and protection to every kid of the world ... INSHALLAH

Hoorain Ghouri
Class VIII
کہانی اچھے کام کا اچھا انجا م

ایک دن ایک شیر درخت کے نیچے آرا م کر رہا تھا کہ ویا ں سع ایک چو ہے کا گزر ہوا اس کو ایک ایک شرارت سو جھی کہ کیوں نہ شی ر کو تنگ کیا جائے وہ شیر کی پیٹھ پر بیٹھ گیا اچا نک شیرکی آ نکھ کھل گیئ اس نے غصے سے چوہے کو دیکھا اورچو ہا ڈر گیا اس نے شیر سے معا فی ما نگی اور شیر سے کہا کہ شیر بھا ئی مجھے معا ف کر دو ہو سکتا ہے کہ میں تمبا رے کام آ جا ئوں کچھ دنو ں کے بعد چوہا وہیں سے گزرا اس نے دیکھا کہ شیر کو شکا ری نے رسی سے با ندھا ہوا ہے شیر رسی سے نکلنے کئ کا شش کرتا مگر نا کا م رہا چو ہے نے کہا کہ بھا ئی شیر گھبراونہیں میں اپنے تیز دا نتو ں سے تمھا ری رسی کا ٹ دو ں گا ااور تم آ زا د ہو جا و گے شیر کی آنکھو ں میں خو شی کے آ نسو آ گئےچوہے نے اپنے تیز دانتو ں سے رسی کو کاٹناشرو ع کر دیا شیر مد د پر بہت خو ش ہوا اب سے چو ہے اور شیر کی پکی دو ستی ہو گیئ چوہا اب مزے سے شیر کی پیٹھ پر بیٹھ کر پو رے جنگل کی سیر کرتا اجنگل کے سا رے جا نور ان کی دوستی کو دیکھتے مگر شیر اور چو ہا مزے کرتے ااورآپس میں ہنسی خو شی رہتے-

بریرہ محفو ظ
میری پسندیدہ شخصیت

میری پسندیدہ شخصیت قا ئداعظم محمد علی جناح ہے،وہ پاکستان کے بڑے لیڈر تھے۔قائداعظم محمد علی جناح پاکستان کے گورنر جنرل تھے۔انھوں نے ملک کے لیے بہت محنت کی۔ان کا مزار کراچی میں ہے۔ان کی وفات 11 ستمبر 1948 ء میں ہوئی۔انھوں نے اپنی تعلیم کراچی میں حاصل کی کراچی میں پڑھنے کے بعد قانون کی تعلیم حاصل کرنے انگلستان چلے گئےانھوں نے ہندوستان کے مشہور شہر بمبئی میں وکالت شروع کی۔اور بہت جلد بڑے وکیل بن گئے۔اللہ تعالی کی مہربانی اور قائداعظم کی محنت سے 14 اگست 1947ء میں ایک آزاد مُلک وجود میں آگیا۔میں اپنے قائد اور پاکستان سے بہت پیاد کرتی ہوں ۔اللہ میرے پاکستان کو سلامت رکھے۔

مسیکہ مریم
جماعت اوّل
شیر اور چوہا

ایک جنگل میں ایک شیر تھا۔ایک دن وہ درخت کے نیچے سورہاتھاکہ ایک چوہا پیٹھ پر بیٹھ گیا جس کی وجہ سے وہ جاگ گیا۔شیر کو بہت غصہ آیا اور اٰس نے چوہے کوپکڑ لیا۔ شیر بولا تم نے مجھے نیند سے جگادیا اب میں تم کو کھا جاؤں گا۔چوہے نے شیر سے معافی مانگیاور کہا کہ میں تمھیں آئندہ تنگ نہیں کروں گا۔شیر نے چوہے کوچھوڑ دیا۔اگلے دن شکاری نے شیر کو رسّی سے باندھ دیا شیر زور زور سے ڈھارنے لگا۔ چوہے نے شیر کی آواز سنی اُس نے دیکھا کے شیر کو شکاری نے رسّی سے باندھ دیا ہے۔چوہے نے اپنے دانتوں سے رسّی کو کاٹ لیا اور شیر اور چوہا دوست بن گئے۔

محمد شموئل
جماعت: اول
سچی خوشی

صبح صبح بیکری میں داخل ہوتے ہوئے علی کی نظر ایک بڑی سی عمارت کے پاس بیٹھے ہوئے کمزور اور عمر رسیدہ شخص پر پڑی تو اسے بہت ترس آیا ۔وہ اپنے والد کے ہمراہ بیکری سے کچھ کھانے پینے کی چیزیں لینے آیا تھا ۔اس نے اپنے ابو سے کہا " ابو وہ دیکھیں !کتنے بوڑھے شخص ہیں بھوکے اور بے گھر لگتے ہیں ۔ان کی کچھ مدد کرتے ہیں "۔ابو نے کہا :" تمہیں بڑا شوق ہے خدمت خلق کا ۔چلو اندر ۔علی کچھ نہ بول سکا ۔ ابو نے کہا :"بولو بھئی کیا کیا لینا ہے " علی چپ رہا اس کا دھیان اس بوڑھے شخص پر ہی تھا ۔ ابو نے کہا :"بھئی کہاں دھیان ہے تمہارا "۔علی بے ساختہ بولا۔ "اس بزرگ شخص پر ،ابو ہمیں غریب لوگوں کی مدد کرنی چاہیئے۔ان کے پاس چل کر پوچھتے ہیں کہ ان کا مسلہ کیا ہے"۔ اس کے ابو اس کی ضد کے آگے ہتھیار ڈالتے ہوئے بولے :"اچھا بھئی ٹھیک ہے پہلے چیزیں تو خرید لو "۔علی خوشی سے بولا "جزاک اللہ ۔اچھا میں چیزوں کے نام بتاتا ہوں چار چپس کے پیکٹ ۔بسکٹ کے چار پیکٹ ،دو سادے کیک ،تین چاکلیٹ" ابو حیرانی سے بولے "ارے بیٹا !بس بھی کرو سارے پیسے آج ہی ختم کر وادو گے کیا؟" علی نے دکاندار سے کہا اچھا انکل بس اتنا ہی دے دیں۔پھر ابو نے علی سے کہا چلو اس بزرگ شخص کے پاس چلتے ہیں ۔علی اور ابو ان کے پاس پہنچے تو علی نے ان سے پوچھا انکل ! "آپ ایسے اس عمارت کے نیچے کیوں بیٹھے ہیں ؟ کیا آپ کا کوئی گھر نہیں ہے َ "بزرگ شخص نے افسردگی سے کہا "میرا گھر تو ہے مگر"۔۔ علی نے پوچھا "مگر کیا َ اچھا چھوڑیں آپ نے کچھ کھایا ؟" بزرگ شخص نے کہا "میں نے صبح سے کچھ نہیں کھایا ہے ۔علی نےتھیلی میں سے کچھ چپس ،بسکٹ اور کیک ان کو کھانے کو دیئے ۔جب وہ بزرگ کچھ کھا چکے تو علی نے پوچھا "آپ اپنے گھر کے بارے میں کیا کہہ رہے تھے ؟" بوڑھے آدمی نے جواب دیا :"میرا گھر میرے بیٹوں نے اپنے قبضے میں کیا ہوا ہے ۔میں اس گھر میں چین سے نہیں رہ سکتا ۔میرے بیٹے اور بہو بہت ظالم ہیں نہ مجھے کھانا دیتے ہیں اور نہ مجھ سے تمیز سے بات کرتے ہیں ۔اپنی زندگی سے بہت پریشان ہوں "۔یہ کہتے ہوئے ان کی آنکھوں میں آنسو آ گئے ۔علی نے اپنے ابو سے کہا کہ "ابو ہم ان کے گھر جا کر ان کے مسلے کو حل کرنے کی کوشش کرتے ہیں "،چونکہ بزرگ شخص کی کہانی سن کر ابو بھی بہت متاثر ہوئے تھے اس لیے انہوں نے فوراً ہامی بھر لی ۔وہ ان کے گھر گئے تو بیٹے اپنے ابو کے ساتھ علی اور اس کے ابو کو دیکھ کر بہت ناراض ہوئے اور انتہائی غصے سے بولے" ابا یہ تم کس کو ساتھ لے آئے ہو ؟" علی کے ابو نے ناراض ہوتے ہوئے کہا :"یہ آپ کس لہجے میں اپنے ابو سے بات کر رہے ہیں ۔"بوڑھے آدمی کے بیٹے نے کہا :"آپ سے مطلب میرے ابو ہیں میں ان سے جیسے بھی بات کروں ۔" بوڑھے آدمی نے علی اور اس کے ابو سے کہا بیٹا تم لوگ اندر چلو بیٹھ کر بات کرتے ہیں ۔ علی کے ابو نے بزرگ آدمی کے دونوں بیٹوں سے کہا :"آپ لوگ اپنے والد کے ساتھ ایسا سلوک کیوں کرتے ہو ؟ نہ تمیز سے بات کرتے ہو ،نہ کھانے کو دیتے ہو ،کیا تم لوگوں کو معلوم ہے باپ اپنی اولاد کی پرورش کرنے کے لیے کتنی محنت کرتے ہیں ،راتوں کو جاگتے ہیں ،اولاد کی ہر خواہش پوری کرتے ہیں اور اولاد بڑی ہو کر یہ صلہ دیتی ہے ۔اگر تم لوگوں کی بیویاں ان سے حسن سلوک سے پیش نہیں آتیں تو تم تو ان سے ایسا سلوک نہ کرو۔ یہ تمہاری جنت بھی ہیں اور دوزخ بھی ان کا خیال کرو اپنی بیویوں کو سمجھاؤ کہ ان سے اچھی طرح پیش آئیں ۔" بڑا بیٹا شرمندہ ہوتے ہوئے بولا :"ہم سے بہت بڑی غلطی ہو گئی ۔"چھوٹا بیٹا بھی روتے ہوئے بولا :"اب میں ہمیشہ ابا کا خیال رکھوں آپ نے ہماری آنکھیں کھول دیں ہم تو بڑی غفلت میں پڑے ہوئے تھے ۔" علی کے ابو خوش ہوتے ہوئے بولے :"اللہ کا شکر ہے کہ آپ کو اپنی غلطی کا احساس ہو گیا ۔ اب آئندہ کبھی اپنے والد کو دکھ نہ دینا ۔"دونوں بیٹوں نے ایک ساتھ کہا :"انشا اللہ " ۔ علی اور ابو خوش ہوتے ہوئے وہاں سے واپس اپنے گھر کی طرف روانہ ہو گئے ۔

مناہل اشفاق
جماعت ششم
کتنی بڑی نیکی

ندا اور ثنا نے اسکول سے واپسی پر گھر کے باہر بوڑھی عورت کو بیٹھےدیکھا تو انہیں بہت ترس آیا ۔گھر میں داخل ہو کر انہوں نے امی سے کہا :امی !اگر کھانے کو کچھ ہے تو دے دیں باہر ایک بوڑھی اماں بیٹھی ہیں انہیں دینا ہے ۔"امی نے توے سے گرم گرم روٹیاںاتاریں اور دو روٹیاں اور ایک پلیٹ میں مسور کی دال ڈال کر ندا کو دی کہ جاکر دے آؤ ۔ ثنا نے ندا کو آواز دیتے ہوئے کہا ٹہرو ندا !یہ پیسے بھی اماں کو دے دینا اس نے گللک سے پچاس روپے کا نوٹ نکال کر ندا کو پکڑاتے ہوئے کہا ۔ ندا خوشی سے روٹی اور دال لے کر باہر گئی تو ایک چڑیا اس کے ہاتھ کو تکنے لگی اس نے روٹی اماں کو دی اور کہا السلام علیکم اماں !یہ لیں دال روٹی اور پچاس روپے جس چیز کی ضرورت ہو لے لیجئے گا ۔اماں نے خوشی سے دعائیں دیتے ہوئے کہا جیتی رہو میری بچی اللہ تمہیں خوش رکھے ۔ندا خوش ہوتے ہوئے اندر چلی گئی ۔بوڑھی اماں نے ایک کے کئی چھوٹے چھوٹے ٹکڑے کیے اور پاس لگے ہوئے درخت کےپاس جا کر ڈال دیئے تاکہ چیونٹیاں پیٹ بھر لیں پھر دوسرے درخت کے پاس جا کر دو ٹکڑے اور ڈال دئیے چڑیا جو درخت پر بیٹھی یہ سب دیکھ رہی تھی پھر سے اڑی اور ایک ٹکڑا اچک کر لے گئی ،گلی سے گزرتا ہوا چوہا بھی ایک ٹکٹرا لے گیا ۔ایک ٹکڑا انہوں نے کار کے پاس ڈال دیا ۔کار کے نیچے ایک سہمی ہوئی بلی بیٹھی تھی ۔نجانے کب سے وہ بھوکی تھی ۔روٹی ہی کھانے لگی ۔پھر اماں ایک جگہ بیٹھ کر بسم اللہ دال روٹی کھانے لگیں ۔۔ندا کو بس یہ پتا تھا کہ اس نے بوڑھی اماں کی مدد کی ہے مگر اس کو یہ پتا نہ تھا کہ اس نے کتنی بڑی نیکی کر ڈالی ہے جو روٹیاں اس نے اماں کو دیں اس میں سے ایک ٹکڑا کتنی چیونٹیوں نے کھایا ہو گا۔کیا پتا چڑیا اور چوہے کے بچے بھی ہوں جنہوں نے اس میں سے کھایا ہو گا ۔ اس مدد کی وجہ سے اسے ڈھیر ساری نیکیاں مل چکی تھیں ۔

ملک الحرم
جماعت ششم
بلا عنوان

کسی گاؤں میں دو بھائی رہتے تھے ۔بڑا بھائی اپنی عقل مندی کی وجہ سے اپنے گاؤں میں چوہدری کی حیثیت رکھتا تھا اس کی بیوی چالاک اور عقل مند تھی ۔چھوٹا بھائی صرف کھیتی باڑی کرتا تھا ۔۔چھوٹے بھائی کی بیوی بے حد بدمزاج تھی اس کا سب سے ہر وقت جھگڑا رہتا تھا ۔روز روز کے جھگڑوں سے تنگ آ کر دونوں بھائیوں نے علیحدہ علیحدہ رہنے کا فیصلہ کیا ۔اب ہوئی دونوں میں لڑائی ۔بڑا بولا میں چوہدری ہوں تو اس گاؤں سے تم جاؤ گے ۔چھوٹا بولا نہیں اس گاؤں میں میرا کھیت ہے آپ جائیں گے ۔ دونوں کے ساتھ ان کی بیویاں شامل تھیں۔۔دونوں کے جھگڑے کی آواز سن کر گاؤں والے آ نکلے ۔پورا گاؤں چوہدری اور اس کی بیوی کے ساتھ تھا ۔اس لیے کہ وہ عقل مند اور خوب سیرت تھا ۔اب بیچارا چھوٹا مرتا کیا نہ کرتا ۔ بیوی کا ہاتھ پکڑ کر گاؤں سے نکل پڑا۔اس کی بیوی چوہدری اور اس کی بیوی کو بد دعائیں دیتی جا رہی تھی اور چھوٹا سڑکوں پر دھکے کھاتا پھر رہا تھا آخر کار انہیں گھر مل ہی گیا ۔اب جب کوئی بھی پڑوسی ان کے گھر جاتا تو وہ بد تمیزی کرتی اور ذلیل کر کے گھر سے نکال دیتی ۔اب تو اس عورت کی وجہ سے پورا محلہ پریشان تھا سب ان کو محلے سے نکالنے کی تدبیریں سوچ رہے تھے ۔سارے محلے کا سکون برباد کر کے جو رکھ دیا تھا ۔ادھر گاؤں میں بڑا بھائی بہت پریشان تھا کہ اس کا بھائی اور بیوی نجانے کس حال میں ہوں گے ؟ ایک دن جب چھوٹے بھائی کی بہت یاد ستانے لگی تو اس نے اپنی بیوی سے کہا کل مجھے کھانا باندھ کر دے دینا ،میں ایک دو دن کے لیے شہر جانا چاہتا ہوں ۔یہ بات سن کر اس کی بیوی بولی وہ کیوں ؟ چوہدری نے کہا : پلیز فضول کے سوالات مت پوچھو کل تمہیں تفصیل بتا دوں گا ۔۔دوسرے دن چوہدری نے اپنی بیوی کو سب بتا دیا ۔اس کی بیوی نے کہا اگر وہ دونوں آپ کو مل جائیں تو انہیں گھر مت لائیے گا ورنہ وہ سکون برباد کر کے لکھ دیں گے ۔چوہدری کو یہ بات بڑی بُری لگی۔وہ کھانا لیے بغیر شہر چلا گیا ۔ اب سنئیے ذرا چھوٹے کی کہانی ۔خدا کو نجانے چھوٹے کی کون سی بات اچھی لگی کہ اس نے چھوٹے کو اس کے بھائی سے ملا دیا ۔دونوں ایک دوسرے کو دیکھتے ہی لپٹ کر رونے لگے اور ایک دوسرے کو پیار کرنے لگے ۔ جیسا کہ آپ کو معلوم ہے کہ چھوٹے کی بیوی بہت چالاک ،مکار اور جھگڑالو تھی۔ جب اس کو پتا چلا کہ چوہدری چھوٹے کو مل گیا ہے تو فوراًننھی کاکی بن کر رونے لگی اور کہنے لگی میرا اور چھوٹے کا کوئی نہیں ۔اب تو ہم سڑک پر آگئے ہیں ہائے ربا ۔چوہدری کا دل پسیجا اور دونوں کا ہاتھ پکڑ کر گاؤں لے آیا ۔چوہدری کی بیوی نے جب ان دونوں کو دیکھا تو اپنا بوریا بستر باندھا اور اپنے بچوں کو لے کر چل دی ۔ادھر چوہدری کے دو دن تو جیسے تیسے گزر گئے مگر تیسرے دن اسے بچوں کی یاد ستانے لگی ۔اوپر سے پورا گاؤں بھی چوہدری سے بات نہ کرتا ۔تو وہ اور پریشان ہو گیا۔اسے کچھ نہ سوجھی تو فقیر بابا کے پاس پہنچ گیا ۔فقیر بابا بھی چوہدری سے بے حد خفا تھے مگر ان کو پیسے کی حرص تھی ،بڑی مشکلوں سے چوہدری نے کوئی نسخہ پوچھا تو فقیر بابانے کہا تم پہلے چھوٹے اور اس کی بیوی کو گھر دلا دو اور اپنی بیوی کو لے آؤ ۔چوہدری نے ایسا ہی کیا مگر اس کی بیوی نہ مانی ۔بڑی مشکلوں سے اسے منایا اب تو اور بھی دونوں عورتیں پورا دن جھگڑتی رہتیں ۔جب دونوں آدمی باہر ہوتے تو ان دونوں کا بس نہیں چلتا تھا کہ ایک دوسرے کو جان سے مار دیں ۔ ایک دن دونوں لڑ رہی تھیں کہ ان کے گھر دو چور آ گئے اور ان پر بندوق تان کر کھڑے ہو گئے ۔ا ور ان سے کہا کہ ہم اس گھر سے اس وقت تک نہیں جائیں گے جب تک تم دونوں لڑنا بند نہیں کرو گی تمہاری حرکتوں کی وجہ سے پورا گاؤں پریشان ہے ۔دونوں نے ایک دوسرے کو دیکھ کر منہ بنایا مگر اس وقت ان کی جان پر بنی ہوئی تھی اس لیے دونوں کے منہ سے ایک ساتھ نکلا ہم وعدہ کرتے ہیں کہ آئندہ کبھی نہیں لڑیں گے ۔چور اس شرط پر گھر سے واپس گئے کہ اگر آئندہ لڑائی کی تو دونوں جان سے جائیں گی۔اگلے دن گاؤں والوں نے عجیب اور خوشگوار منظر دیکھا کہ دونوں عورتیں ایک دوسرے کی بانہوں میں بانہیں ڈالے کھیت میں اپنے شوہروں کا کھانا پہنچانے جا رہی تھیں ۔ یہ دیکھ کر سب نے سکھ کا سانس لیا ۔

ہانیہ غوری
جماعت ششم
گیا وقت واپس لوٹ کر نہیں آتا

احمد اور سعد بہت اچھّے دوست تھے۔ وہ دونوں ایک ہی محلے میں رہتے تھے اور ہم جماعت بھی تھے۔ احمد اور سعد کافی خوش اخلاق اور فرمانبردار بھی تھے۔ ہر ایک کے کام آ ٓتے اور ہر ایک کی مدد کرتے، سب ہی ان سے نہایت خوش تھے۔ احمد اپنا تمام کام وقت پر کرتا لیکن سعد میں ایک خرابی تھی کہ وہ اپنا ہر کام اگلے دن پر چھوڑ دیتا جس کی وجہ سے وہ ہر کام میں پیچھے رہ جاتا تھا۔ احمد اسکو ہر وقت سمجھاتا کہ دنیا میں وہی لوگ کامیاب ہوتے ہیں جو اپنا ہر کام اپنے وقت پر کرتے ہیں لیکن سعد پر ان باتوں کا کوئی اثر ہی نہ ہوتا تھا۔

سالانہ امتحانات نزدیک آرہے تھے احمد بھر پور طریقے سے پڑھائی کر رہا تھا جب کہ سعد اپنا نا مکمل کام مکمل کرنے ہی میں مصروف تھا، کام کیا ہوتا تو آج آرام سے یاد کر سکتا تھا مگر اس نے تو وہ وقت کھیل کود کر گذار دیا تھا۔

امتحانات شروع ہو چکے تھے مگر سعد کی کوئی تیاری نہ تھی اب سعد کو احساس ہو رہا تھا کہ اس کو وقت پر کام نہ کرنے کی وجہ سے کتنا نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔ اس کو اپنے نتیجے کا بھی اندازہ تھا جبکہ دوسری طرف احمد مطمئین انداز میں امتحان دے رہا تھا۔ سعد بہت پچھتا رہا تھا اسے احمد کی کی گئی نصیحتیں یاد آ رہی تھیں لیکن اب کچھ نہیں ہو سکتا تھا کیونکہ گیا وقت کبھی لوٹ کر نہیں آتا۔

محمد واصف
جماعت دوم:ٹیولپ
فلسطیں

اے فلسطیں
اے قدسیوں کی سر زمیں
اے رسولوں کی وراثت کی امیں
اے فلسطیں
خون کے دھبے یہ کیسے درودیوار پہ ہیں
کس شقی کے یہ طمانچے ترے رقصار پر ہیں
جوانوں کے خواب خون میں رنگے ہوئے
پھول سے بچوں کے چہرے خون میں لتھڑے ہوئے
بے حسی اقوام عالم کی ہے کتنی شرمناک
بادشاہوں اور امیروں کے رویوں پر بھی خاک
ظلم اور جور کے اندھیروں میں اک کرن
بے حسی اور خوف کی خاموشیوں میں اک صدا
ل طحن کادرس ہے اک پیام ہے
چار سو گونجے گی جب اللہ اکبر کی صدا
ظلم کا اور ظالموں کا خاتمہ
غاصبوں کے سب مکر اور نافقوں کے سب سکوت
ایسے کرچی کرچی ہوں گے جیسے تار عنکوبت
پھر چرغ لا الہ کا نور ہوگا چار سو
پھر مسرت کے قہقہے چہکا ر تیرے کو بہ کو
اے فلسطیں پھر تیرے چہرے کے روشن نور سے
جگمگائے گی زمیں امید سے مسرور سے
مالک ارض وسما رحمت کی بارش بھیج دے
جو تڑپتے ہیں انہیں پھولوں کی کوئی سیج دے

ہانیہ عارف ہشتم
گرمی آئی گرمی آئی


دیکھو دیکھو گرمی آئی ساتھ میں دیکھو کیا کیا لائی
آم، تربوز اور اسٹرا بیری
خربوزہ، چیکو اور چیری
ٹھنڈا شربت لسّی بالائی دیکھو دیکھو گرمی آئی
حرارت سے پھل پکیں گے پکیں گے تو میٹھے بنیں گے
کسانوں کو بھی خوشی دلائی
دیکھو دیکھو گرمی آئی
نانی کے گھر جائیں گے خوب مزے اڑائیں گے
گرمی نے چھٹّی دلوائی دیکھو دیکھو گرمی آئی

عکاشہ
جماعت دوم: ٹیولپ
موشحہ (اکروسٹک)

حاشر(نعت رسول مقبول ﷺ)
ح: حاشر ہے ان کا نام مقبول
ا: اللہ کے وہ پیارے رسول
ش: شیطان سے ہمیں بچانے آئے
ر:رستہ سیدھا دکھانے آئے
عیشا رضوان جماعت پنجم
ہائیکو( جاپانی طریقہ نظم)

تتلی

رنگ برنگی تتلی
پھولوں پر بیٹھی
لگ رہی ہے پیاری

آم

گرمی کا موسم آیا
باغوں میں آئے
کھٹے میٹھے آم

گروہی کام جماعت پنجم
ڈائمنٹے(طریقہ نظم) شخصیت

بہادر،عقل مند
سلاتے،ہنساتے،گھماتے
ہم سے محبت کرتے ہیں ،سب کے کام آتے ہیں
کماتے،کھلاتے،پڑھاتے
خوش مزاج ،خوبصورت
ابو

انیسہ منیر
جماعت چہارم
جانور

موٹا ،اونچا
موٹا ،اونچا
کھاتا،پیتا،چنگھاڑتا
چھوٹی سی ہے دم،لمبی سی ہے ناک
سوتا،جاگتا،جھومتا
خوبصورت،سرمئی
ہاتھی

ایمان عرفان
جماعت چہارم
پرندہ

خوبصورت ،ہرا
اڑتا،بولتا، ،چیختا
چوری شوق سے کھاتاہے ،سب کا دل بہلاتا ہے
کھاتا،پیتا، ہنساتا
پیارا،ملائم
طوطا

عدینہ صدیقی
جماعت چہارم
شخصیت

خوب صورت،بھولی
کھاتی،پیتی،نہاتی
لگتی ہے مجھ کو پیاری ،اور سب کی ہے دلاری
جاگتی،سوتی،دوڑتی
پیاری چھوٹی
بہن

ازمہ
جماعت چہارم
Animal Day
Animal Day
Animal Day
Animal Day
Animal Day
Animal Day
Islamiat Project
Islamiat Project
Transport
Transport
Transport
Transport
Transport
Transport
Transport
Transport
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Maths Olympia
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Science project
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week
Sport Week