NEWS LETTER
Usman Public School System - Campus 6 | 2021-2022

In the name of Allah, the Most Merciful, the Most Kind

VISION STATEMENT

Nurturing generations to serve the role as leaders of Ummah.

MISSION STATEMENT

To motivate the students in becoming future leaders, capable of providing guidance to the Muslim Ummah in all spheres of life and lead the contemporary world in accordance with the teachings of Islam.

CORE VALUES

1. Taqwa (fear of Allah)
2. Following seerah of Rasoolullah
3. Enjoying good and forbidding evil.
4. Research and Explore
5. Service to all creations
6. Protection of ideology of Pakistan

From the Principal’s Desk

Assalam o Alaikum everyone,

I hope this message finds you well. As you all know, this has been a tough year for all human beings on this planet, including us. The coronavirus pandemic has challenged and continues to challenge us personally and academically. So, first of all, my deepest condolences to those who have lost their loved ones to this pandemic and my heartfelt prayers for those that are still struggling medically or even otherwise.

Second, I would like to say that even as the pandemic has tested the boundaries of our patience and perseverance, I am happy to note that we have done very well Alhamdulillah. By considering all aspects, we have managed to complete one full academic year to a high standard and all the students and teachers have excelled in my eyes. Therefore, I wish to congratulate you on our collective achievements.

Third and last, I would like to draw attention to the coming year. We will insha’Allah continue to do our very best in this rapidly evolving situation. Welfare of the students is first and foremost on our agenda. With widespread vaccinations on the horizon and teachers being vaccinated as a matter of priority, I am hopeful that the coming year will be much more normal and fruitful than the last. I would urge all those who are eligible to get vaccinated as soon as possible and also encourage those around you as it is our collective social responsibility to do so. Let doubt not get in our way (indeed Allah has frowned upon excessive and baseless doubt), so that we can all get inoculated and return to our path towards achieving our potential.

May you all continue to grow and prosper, and may Allah bless us and have mercy on us all.

Warmly yours,

Rana Salim Principal of Campus VI Usman Public School
Ayah to ponder
Hadith
“Young Poets” TEACHER

Think of the teachers who challenge your mind, Enlightening,eye-opening,amazing and kind Creating a class filled with care and concern Helping their students to happily learn, Educators of children, now your knowledge impart, Rejoice in the journey with vision and heart.

Sobia Nadir Farooqi Class: VI Section:B
DREAM

Every Night I Dream…….
Someone Showing Me A Light Beam
Look Like Predicting My Future
Which Will Be Full Of Glitter
But Soon I Realize That
What Will Happen Next?
As There Is No Guarantee Of Life
Would I Be Till My Success Alive
Oh!My Dear Don't Forget Your Demise
Death Is Always Seeking You Wise
Wakeup From The Deep Sleep
And In Life Perform Good Deeds
Through Which We You Can Succeed
This The Highest Aim Of Life
Fulfilment Of Life’s Loftiest Dream

BY MUBASIRA IRSHAD : VI –A
Mother

Mother is the best gift of Allah
Allah gives us paradise on earth!
Like tree she gives us shelter
Like sunshine gives us light
When things become tough
When life becomes rough
A mother is the one who always prays
A mother is the one who always stays
Even if a mother grows old
Her heart remains pure of gold
She gives me a smile to guide my way
She gives me a path to light my day
My mother is the sweetest
My mother is the greatest.

Noor ul Huda Faisal Vi A
Secret

Let me tell you of a secret For the years that have been rejected
It is a secret not buried under sand Available for all, not enclosed in land
It has changed the nation's history Inside it, is an answer for every mystery
Have you ever thought of the universe? The creator whose creation is so diverse
Have you ever thought about what is after death? And want to learn your purpose of living in depth
Go and see the great city of Samarkand The ruins of the old Islamic heartland
The beats of lost legacy in their walls The soul capturing history buried in all
How did Muslim prospered?? From Arab to Persia, Nile to Gibraltar
Muslims prospered because of this secret They fell because the secret was rejected
The open secret is Quran, the book of guidance It is open and clear, the world's still in ignorance
There us time catch this open secret Stop looking for treasure in casket
Learn understand preach Quran I am sure this is the only way we can advance

Sadia Mahfooz
IX B
On-line Education

Coronavirus has affected every walk of our life. This deadly disease has badly caused a stagnation in all spheres of life including the educational system .Many countries decided to close the educational institutions in an attempt to reduce the spread of COVID-19 and decided to switch on to Online education.

This pandemic has accelerated the adaptation of digital technologies to impart education. Many educational institutions have started to share the courses online.

“Online education is like a rising tide as if it is going to lift all boats”

In an online class, a teacher can teach students in a relaxed and peaceful atmosphere and students have the same benefit of this remote learning. Nevertheless, it is not effective like in person classes .

Despite all the limitations, online classes have proved to be very beneficial in this pandemic situation. Due to online classes students and teachers have become tech-savvy.

There are many platforms for online classes like Google Meet, Zoom, WhatsApp, Microsoft Team, etc. The experiment of online classes has been interesting, informative and advantageous with some limitations as in under-developed areas the whole population can not access .

In a nutshell, we can say that Online learning can take place anywhere but there must be a device for Internet connection to carry online education effectively and efficiently and the government should ensure its accessibility to all masses so that the objectives of education could be achieved at most.

Forewarned is Forearmed

Friends! As we all know that we all have been facing a pandemic called “CoronaVirus'' that supposedly started from Wuhan China.I know a real story about a boy Liu Xing, who was one of the residents of Wuhan China and we all need to learn from his story. One morning, when he woke up, he heard the news about the outbreak of CoronaVirus raging on all news channels. All the news channels were highlighting and giving coverage to this newly arisen disease.Nevertheless, not much was found out about the disease so everyone was giving his /her own opinion. When Liu Xing reached school the students and teachers were also discussing the same. Things remained normal for a few days but later, he heard that the virus was spreading very fast and a lot of people had been affected. Now, whenever he visited outside he would wear a mask, maintain social distance, and sanitize his hands several times a day. He eventually got fed up with this monotonous routine and didn’t want to follow SOPs. Eventually, the situation got worse and cases of CoronaVirus started mounting, and the government announced that there would be a lockdown as that disease was proved to be highly contagious. All the educational institutes and other public areas were closed . Initially,he was happy and started enjoying his free time but soon he got bored and didn’t want to stay at home. As the days went by he heard that hundreds of people were dying.

All the Tv channels, news papers and social media were only focusing on projecting every single news about Coronavirus.People were taking all necessary precautions even in their own family ,his mom used to sanitize the house many times and father would wear a mask and follow SOPs. He was getting so stressed about it that he even had nightmares about his family getting affected by that virus. He was so scared that he had self- quarantined himself in his room .His whole personality had transformed into a scary ,nervous, and sick person. His appetite almost diminished and he left participating in normal family activities. After being inquired by his mother, Liu Xing disclosed everything to her. He shared all his worries and nightmares with her.His mother consoled him and encouraged him to keep following SOPs so that the tenure of this pandemic would be over.His mother's efforts brought good impacts and his mental health started improving gradually. Since then Liu Xing not only followed all the SOPs but guided others to do the same. And that was the spirit in every chinese that China has been declared with zero cases of coronavirus and a role model for the whole world.

Afra Hashmi Vi B
Childhood Memories

I still remember my first fast that is still fresh in my memory as if it all happened yesterday and brings a broad smile on my face.You must be curious to know what might have happened. Let me tell you from the very beginning.I kept my first fast when I was only seven years old, although my mother did not wake me up for the fast but I myself got woken up in excitement and insisted to keep fast. By the afternoon, I was actually getting hungry and thirsty but did not take anything to satiate my hunger or thirst. My mother noticed my restlessness and suggested that I play with my neighbouring friends. While playing with my friends in the neighboring garden, suddenly I fell down and my front tooth got chipped. Blood was oozing out and I was extremely horrified. I rushed to my house where my mother rinsed my mouth and gave me a spoonful of sugar to eat in order to stop the bleeding. Eventually, it stopped and I got relaxed but suddenly something hit my mind and I started crying loudly with the realization that I had broken my fast. I started cleaning my mouth and silently kept crying.

My mother listened to my sobbing and asked the reason for my weeping. When I disclosed it she smiled and consoled and assured me that as a child it was not a fardh roza for me.I was allowed to have an early Iftar. Though I had a doubt about that Iftar part however I believed her and I normalized myself as she made me realize that Allah SWT will not be angry on me because my intentions were not to break fast deliberately. Now, whenever I think about this incident, and the hue and cry over it and the laughter of my family members upon the way I cried brings a smile to my face .No doubt childhood is the other name of innocence.

Laiba Akhter Khan vi A
PALESTINE --- PAST, PRESENT, FUTURE

‘‘We know too well that our freedom is incomplete without the freedom of Palestinians.’’

Palestine has been facing brutality from the time when Muslims lost power and till today. Jews have been in an effort to throw them out of there as they want to make the Tomb of Prophet Solomon A.S (their sacred place). Israel is playing with innocent lives of Palestinians and the world is quiet. We are living an independent and carefree life in our country so why should we worry for others? We need to change our thoughts and understand why Palestine has significant value in Islam.

* Hazrat Dawood AS ruled over Jerusalem and after him, his son Hazrat Suleman AS made his tomb there and ruled over the whole world.

* It is the place where Hazrat Ibrahim AS nearly sacrificed his son Ismail AS on commands of Allah SWT.

* Al-Aqsa Mosque, in Jerusalem, was the first Qiblah of Muslims.

* Jerusalem was the last place Prophet SAW visited before he ascended to the sky and talked to Allah SWT. Before that, he flew from Mecca to Al-Aqsa Mosque on a mythical creature.

* Islamic tradition predicts that Palestine will play an Important role in future, naming it as one of the cities where the end of the world will play out.

* The above reasons are enough for us to support Palestinians and safe Palestine from being a part of Israel. We can favor our brothers their by;

v Taking out rallies,

v Prohibit using Israeli products (as they are using the money gained against Palestinians).

v Motivate the whole Muslim Ummah to stand with Palestine.

Israel has challenged the self-esteem of Muslims, we will also answer the brick with stone.

From the river to the sea,
Palestine will be free!

Ayesha Haque VII B
Karachi The City of Lights

ORIGIN:

The Journey from Kolachi to Karachi

Karachi was once just a small village of fishermen by the Arabian sea before the creation of Pakistan. It was called “Kolachi” those days but gradually the word changed its form and became famous as “Karachi”. There is a famous port that has been operated for many years. Nearby there is the tomb of Sufi Abdullah Shah Ghazi Rahmatullah. The tomb still exists with all its glory and grandeur and thousands of people visit it regularly. Day by day, the port progressed and the village transformed into a magnificent city. In 1838 when the British were ruling India, they built a number of significant buildings in Karachi as well. At that time, Hinduism, Christianity and Zoroastrianism (commonly known as Parsis) religions were followed by the majority. However, the situation changed after partition.

LOCATION:

Karachi is located on the coast of the Arabian Sea immediately northwest of the Indus River delta in Sindh, Pakistan.

CLIMATE:

Karachi has a “moderate climate” dominated by long summers. The city has low annual average precipitation levels, the volume of which occurs during the July -August monsoon season. While the summers are hot and humid, cool sea breezes typically provide relief during the summer months. On the other hand,the winter climate is dry and lasts between December and February. It is dry and cold during the winter season which is generally welcomed by Karachites who enjoy warm clothes.

CUISINE:

CAUTION: Don’t indulge in reading this part if you are hungry :)) Just like its metropolitan aspect, the cuisine of Karachi is strongly influenced by its diverse population, who have settled in Karachi for various reasons. The ethnic diversity has added tantalizing flavours in the indiginous dishes.Mostly, the cuisine is characterised by its spicy dishes.

Top Scrumptious CUISINE of Karachi:

Nihari, biryani, Chicken Karhai, chicken tikka, seekh kabab, Kata kut, Paye, Haleem, bun Kabab, Kabab Paratha, Daal Chawal

Famous Recreational Places

There are many recreational places in Karachi but here I am going to mention a few only.

Quaid-Azam Mausoleum:

Mazar-e-Quaid also known as Jinnah Mausoleum or the National Mausoleum is the final resting place of Quid-e-Azam (“great leader”) Muhammad Ali Jinnah, the founder of Pakistan.

HAWKE’S BAY Beach:

It's one of the beautiful beaches located 20 km southwest of Karachi city. It is named after Bladen Wilmer Hawke who owned a house on the beach during 1930sThe beach is very popular, with hundreds of people visiting daily for swimming, camel and horse riding to spend leisure time.

PAF MUSEUM:

The Pakistan Air force museum features a majority of aircrafts, weapons and radar (a detection system that uses radio waves to determine the distance or range, angle, or velocity of objects.) It also features Vickers VC.1 Viking, which was used by Quaid-Azam.

SAFARI PARK:

It is my personal favourite recreational place. It was a project of the Karachi Municipal Corporation and a great way to see the beauty of nature. This Park includes a chairlift, two natural lakes, hills, and Kashmir Point. I personally recommend this park as I have been there many times and every time it is just mesmerizing to explore this park.

A number of other attractions including; Hill Park, Mohatta Palace Museum, Clifton, Kemaari, Manora, Aladdin Amusement Park, Empress Market, Frere Hall, Karachi Golf Club, Charna Island, Port Grand haven't been discussed which are worthy of visiting.

Arjumand Faizan VI
Poetry Elocution Competition Group 1

Over all winner

10/10

Qasim House

VI

Arjumand Faizan

1st position

Iqbal House

VII

Khwaja Satwat

Khalid House

Rumaisah Ehsan

Qasim House

VIII

Hooriya Salman

Spelling Bee Competition

Group 1

Winner
Qasim House
Umaima Masroor VI
Ghousia Fatima VII
Ayesha Shamim VIII
Group 2

Winner
Qasim House
wania Gull VI
Raheen Aman VII
Laiba Zulfiqar VIII

RECIPE from ANUBA’S Kitchen CHICKEN BIRYANI

Rice Basmati 1KG

Chicken 1KG

Tomato Finely Sliced 5-6

Chilli Pepper as required

Salt as required

turmeric Powder 1 Tbsp

Garam Masala grind 2 Tbsp

Onion Chopped 1/2 Kg

Ginger + Garlic Paste 23 Tbp

Yogurt 1 Cup

Cloves whole 4 -6

Cumin seeds 1 tSp

Black Pepper 8-10

Oil 1.5 Cup

Water as per required

Bay Leaves 3-4

Green Cardamom Whole 3-4

Black Cardamom Whole 3-4

Bunch of Coriander Leaves 1

Bunch of Mint Leaves 1/2

Orange Food Colour 1/2 T Sp

Milk 1/2 Cup

Lemon 2

Vinegar 1 Tb Sp

Fried Onion For Decoration 2-3

RECIPE

1) Heat up oil in a deep pan, after heating up enough, add all the whole (sabut) garam masala and saute for about a minute.Then, add chopped onion in it and saute until pink. Now, add chicken into it with tomatoes, turmeric, salt to taste, ginger garlic paste, red chilli powder. Mix well all the spices and cook for 2-3 minutes. Then, add yogurt into it and mix them well. Turn the flame to medium again and add garam masala powder in it along with some coriander and mint leaves. Cook till the chicken curry is tender.

2) Now boil water and rice, salt, black cardamom, black cardamom, black pepper, vinegar, sliced lemon and let them boil the water well. After 15 minutes, strain the rice.

3) Now, It’s time to make a layer of rice and chicken. Firstly, make one layer of rice and then make another layer of chicken curry, repeat the same process again. And on the top of the second last layer of rice, put some coriander leaves, mint leaves, vinegar fried onion, orange food color and milk on it and add the last layer of rice.

4) Let it cook for 15-20 minutes with a closed lid tightly on low heat.

5) Now, serve hot chicken biryani.

Anuba Anu VIII
Give to Get

When we say “Give” we mean being kind and generous by giving something for the sake of Allah which can include time, money, presents, dua and much more. When we say “Get” we mean getting reward from Allah.

This is the story of 3 siblings who were going to celebrate Independence Day in a few days. One day their parents asked, “What important thing will you do on Independence Day (14 August)?” Children replied excitedly, “We want to give something and do something special. We will try to do the best one for our country and the people who live in it. Insha’ Allah.”

Parents: “But how and what?”

Ali: “I will give time.”

Umer: “I will give money.”

Asma: “I will pray for the sake of my country.

Ammi: “Children, I appreciate your thoughts. Now you have a task”.

Children: “Which kind of task Ammi''?

Ammi: “As you have chosen your desirable tasks for your beloved country) for the sake of Allah. Inshaa Allah, by the day of celebrating 14 August, you will all try to reach your goals. We will have a family meeting at 10:00 pm on (14 August). You all will (share) what you (got) after giving”.

On 14 August at 9:45 pm children were sitting in the lounge excitedly and restlessly.

Ammi: “Beta, you have come 15 minutes earlier).”

Children ``Ammi, we are very impatient to discuss what we did?”

Ammi ``Ok, but you have to wait for 5 minutes as your father is conducting a meeting”.

(After 5 minutes)

Baba: “So children our today's topic is “Give To Get”.

Ali, what did you get after giving your time?” Ali, “I gave my time by helping people, doing social welfare. I got dua from people.” Baba: “Well done my dear son.”

Umer, what did you get after giving your money?”

Umer: “I gave money to the poor people and bought some plants of neem tree from my pocket money and planted them at the sideways of the corner street and got the sawab”.

Umer, what did you get after giving your money?”

Umer: “I gave money to the poor people and bought some plants of neem tree from my pocket money and planted them at the sideways of the corner street and got the sawab”.

Baba: “Excellent, my brave son.”

Asma: “What you got after praying for others” “I prayed for the people who are sick and needy, in return, I get happiness and self-satisfaction.”

Baba: “Good, my intelligent daughter. You see children if we give anything for the sake of Allah so, we get reward from Allah. On the weekend, we will have an entertainment trip to a water park. This is your reward, that is being given by me but don’t forget that Allah will give you reward in Heaven and grant you success and prosperity in your life as well. Insha’ Allah. It's too late now, so you should go to sleep. We will talk more in the morning. Shab ba khair).

Written By :AYESHA TARIQ Class: VIII A
Quest Quotes:-

* Allah will help him who moves in the way of Allah. (Hazrat Abu Bakr R.A)

* A friend cannot be considered a friend until he is tested on three occasions; in time of need behind your back and after your death.(Hazrat Ali R.A)

* The wise person in one whose mind controls him from every disgrace. (Imam Shafi'ee)

* People need knowledge more than they need food and drink, because they need food and drink three times a day but they need knowledge (Ahmed bin Hanbal)

* Every container pours out what is in it. If your heart is good it will pour goodness (khair).(Imam Ghazali)

* A word without power is a mere philosophy (Allama Iqbal)

* Think 100 times before you take a decision, but once the decision is taken stand by it as a one man (Muhammad Ali Jinnah)

* No one is rich enough to buy back his past (Oscar Wilde)

* Do not follow where the path may lead. Go instead where there is no path and leave a trail (Ralph Waldo Emerson)

Rabeea Hassan VII B
FUN FACTS

Bet you didn't know.....
It is impossible for most people to lick their own elbow. (try it!)

A crocodile cannot stick its tongue out. A shrimp's heart is in its head.

The "sixth sick sheik's sixth sheep's sick" is believed to be the toughest tongue twister in the English language.

If you sneeze too hard, you could fracture a rib.

Anusha Athar VII A
Art and Craft (Recycling activities)
Anuba Anu, Anusha Khalid, Fatima Ali VIII-B
Ifrah Khan,Fatima Kashif, Amna Faisal VIII B
Izma Aman VI B
Manahil Riaz VI A
Rumaisa Asia VI B
Hiba Sabih VI A
Hafsa Anjum VI A
Raheen Aman VII B
Hania Faraz VI A
Munazza Faisal VIII A
Aafia Binte Israr VII A
Inaya Ali VI A
Hareem Bint e Israr VIII A
Laiba Alishaba VII B
Laiqa Imam VII A
Marium Saeed VII A
Raheen Siddiquee VIII A
S. Affaf Tehseen VII B
دیہاتی اور شہری زندگی

جس طرح نیت کے دو رُخ ہو تے ہیں اس طرح د و طرح کی زندگی ہو تی ہے۔ شہری او ر دیہی زندگی میں بھی اچھے اور برُے دونو ں پہلو پائے جاتے ہیں۔ بعض ایسی سہولتیں ہیں جو اہلِ دیہات کو میسر ہیں مگر وہ شہروں میں بسنے والوں کو میسر نہیں ہیں۔اور یہی حال شہروں میں بسنے والوں کا بھی ہے۔ شہری زندگی ہو یا دیہی دونوں کے فوائد اور نقصانات اہمیت کے حامل ہیں۔

شہروں میں انسان اپنے بچوں کو اچھی تعلیم دے سکتے ہیں۔ شہری ماحول انسان کو مجلس آداب ِ و اطوار سکھاتا ہے۔ شہروں میں گھومنے پھرنے کے مقامات بھی ہوتے ہیں۔ شہروں میں ہسپتال موجود ہوتے ہیں جہاں مریض کا بروقت علاج کیا جاسکتا ہے۔شہروں میں انسان دورِ جدید کی ترقیوں سے باخبر ہے۔ ذرائع آمدورفت عام ہونے کی وجہ سے ایک جگہ سے دوسری جگہ آسانی سے جاسکتا ہے۔ لیکن ہر چیز ایک جیسی تو نہیں ہوتی شہری زندگی کا تاریک پہلو یہ ہے کہ یہاں کی آب و ہوا آلودہ ہے۔ جس کی اہم وجہ صنعتوں سے نکلنے والا دھواں ہے۔ شہروں کے لوگ ُپر تکلُف ہوتے ہیں اور مصنو عی قسم کی زندگی گزارتے ہیں۔ سینما جیسے برائی کے اڈے بھی شہروں میں پائے جاتے ہیں۔

اس کے برعکس دیہاتی زندگی میں کھلی فضا، تازہ ہوا، خالص غذائیں اور دیہاتی زندگی کے خالص تحفے ہیں دیہات میں فطرت اپنے پورے جوبن پر ہوتی ہے۔ دیہات کے لوگ ہمدرد وملنسار اور انسان کے دکھ درد کو سمجھنے والے ہیں۔ دیہات میں لہلہلاتے ہوئے سرسبز کھیت ہیں۔ خالص غذا اور محنت مشقت کرنے کی وجہ سے ان کی صحت نہایت قابل رشک ہوتی ہے۔ لیکن دیہات کے لوگ تہذیبِ جدید سے دور رہتے ہیں۔ وہ اپنے بچوں کو جدید تعلیم نہیں دے سکتے۔ دور دراز کے دیہات میں آمدورفت کی بہت کمی ہوتی ہے۔ دیہات میں روزگار کے مواقع بھی بہت کم پائے جاتے ہیں۔

الغرض شہر ہو یا گاؤں دونوں میں کچھ سہولتیں اور کچھ تکلفیں بھی ہیں، فائدے اور نقصانات بھی ہیں۔ البتہ اب دیہاتی زندگی کا روپ بھی بہت حد تک بدلتا جا رہا ہے۔ اور صنعتی تمدنی ترقی کے دور میں گاؤں کے لوگ بھی ان آسائشوں سے واقف ہیں جو صرف اس وقت شہروں میں موجود تھے۔

(فارحہ انصار ہشتم )
خطوط کے ذریعے بات چیت بہترہے یا ای میل؟

گزشتہ دس بیس برس میں دنیا نے ٹیکنا لوجی میں ترقی کی کیئ منزلیں طے کیں اور ایسی ایسی حیرت انگیز چیزیں ایجاد کیں جن کا احوال سن کر انسانی عقل دنگ رہ جاتی ہے۔ ان ایجادات نے انسانی معاشرے اور تہذیب پربہت گہرے نقوش چھوڑے ہیں۔ اس کی بہت بڑی مثال انفارمیشن ٹیکنا لوجی (آئی ٹی)کے ذریعے ای میل اور وٹس ایپ جیسی ایپس کا بننا ہے۔یہ ایپس مختلف خصوصیات کے ساتھ ہر خاص وعام کو حاصل ہیں جس کے نتیجے میں خط لکھنا تقریبًا ناپید ہو چکا ہے۔اگر دیکھا جائے توای میل اور وا ئس ایپ کے ذریعے بات چیت کرناخط لکھنے سے زیادہ سہل ہے۔ منٹوں میں اپناپیغا م ٹائپ کر کے انٹرنیٹ کے ذریعے دنیا کے کسی بھی کونے میں موجودفرد کو بآسانی بھیجا جا سکتا ہے جبکہ خط لکھنے کے معاملے میں پہلے تو بہت ساری انسانی طاقت استعمال ہوتی ہے۔پھر اس کو پوسٹ آفس میں ڈالنا ہوتا ہے۔اس کے بھی دو سے تین دن بعد خط مذکورہ جگہ پر پہنچایا جاتاہے اور جواب کے لئے پھر دو،تین دن کا انتظار کر نا پڑتا ہے۔دوسری طرف زمانے کے تغیرات دیکھے جائیں تو ان ایپس کے ذریعے بات چیت میں آسا نی تو ہو رہی ہے لیکن فحاشی بھی پھیل رہی ہے اور انسان کی ذاتی زندگی کو بھی منظرعام پرلایا جا رہا ہے۔خط لکھنے میں جو محبت اور اخوت پوشیدہ ہوتی ہے تو ای میل اور واٹس ایپ میں نہیں پائی جاتی۔کہا جاتا ہے کہ انٹرنیٹ کے ذریعے دنیا سمٹ کر ایک گاؤں کی شکل اختیار کر رہی ہے اور لوگ مطلبی ہو رہے ہیں۔

ہر ایجادکی طرح اس ایجاد کے بھی بہت سے مثبت اور منفی اثرات ہیں اور اس کا انحصار ہمارے استعمال پر ہے۔اگر ہم ای میل اور واٹس ایپ کو صرف ضرورت کے تحت استعمال کریں تو یہ بہت مفید ثابت ہوں گے لیکن اس کے بر عکس اگر ہم ان کا غلط استعمال کریں تو معاشرے پر اس کے منفی اثرات واضح ہونگے اگر ہم ان کا درست استعمال نہیں کر سکتے تو بہتر ہے کہ ہم خط لکھنے کو ترجیح دیں۔

(عفراء خان ہشتم )
بغل میں بچہ شہر میں ڈھنڈورا

خالد اپنے والدین کے ساتھ گھر سے نکلا۔ٹرین میں کراچی سے حیدرآباد تک کا سفر تین گھنٹے کا تھالیکن اچانک گاڑی کا انجن خراب ہونے کی وجہ سے ٹرین راستے میں رک گئی۔کراچی سے انجن آنے میں کافی دیر تھی۔مسافروں کا ٹرین میں بیٹھے بیٹھے برا حال ہوگیا تھا کیونکہ ٹرین ایک ویران جگہ پر رک گئی تھی جہاں دور دور تک کوئی بھی نہ تھا۔

ٹرین حیدرآباد پر پہنچنے والی تھی کہ اچانک دوسرے حصے سے ایک مسافر حیران و پریشان نظر آیا وہ اپنے بچے کو ڈھونڈرہا تھا۔اس کے ساتھ پولیس کا ایک سپاہی بھی تھا۔وہ بچے کو ڈھونڈنے میں مگن تھا۔لوگوں نے اس سے ماجرا پوچھا تو اس نے بتایا کہ جب ٹرین خراب ہوئی تو وہ تھوڑی دیر آرام کی غرض سے نیچے اترا لیکن انجن آنے کے بعد وہ گاڑی میں سوار ہو گیا تو اچانک ان کی بیوی کی نظر اِدھر اُدھر پڑی تو انہوں نے دیکھا کہ ان کا بیٹا احمد غائب ہے۔انہوں نے ریل کے سارے ڈبے دیکھ لئے لیکن احمد نہیں ملا۔بس ایک ڈبہ بچا ہے اس میں دیکھنے جا رہا ہوں۔یہ کہہ کر وہ پولیس کے سپاہی کے ساتھ آگے بڑھ گیا۔

اس واقعہ کے بارے میں سن کر سب کو افسوس ہوا اور وہاں موجود سب لوگوں نے اپنی رائے کا اظہار کرنا شروع کر دیا۔کسی نے کہا کہ احمد کو اغوا کیا گیا ہے تو کسی نے کہاکہ وہ گاڑی سے گر گیا ہے۔پھر خالد کے والد بھی ان کے ساتھ چلے گئے تاکہ وہ احمد کے ابو کی مدد کر سکیں۔ساتھ ہی خالد کی امی بھی احمد کی امی کو تسلی دینے دوسرے ڈبے میں چلی گئیں۔وہ رو رہی تھیں۔بہت سی عورتیں ان کے گرد جمع تھیں اور انہیں تسلی دے رہی تھیں کہ اتنی دیر میں ٹرین حیدرآباد پہنچ گئی۔احمد کے ابو نے بہت دکھ بھرے انداز میں کہا کہ احمد آخری ڈبے میں بھی نہیں ہے۔اتنے میں اوپر والی برتھ سے ایک آواز آئی ”ابو!ابو! مجھے نیچے اتارئیے۔“یہ آواز احمد کی تھی۔وہ اوپر سو رہا تھا۔احمد کے ابو نے اسے بہت ڈانٹااور اسے نیچے اتارا۔پھر احمد نے انہیں تفصیل بتانا شروع کیا کہ اسے بہت نیند آرہی تھی اور سونے کے لئے نیچے کوئی جگہ نہیں تھی اس لئے وہ اوپر جا کر سو گیا۔احمدکے ملنے پر سب بہت خوش تھے۔اس موقع پر سب نے ان سے کہا کہ ”بغل میں بچہ شہر میں ڈھنڈورا“ یعنی کہ آپ نے گاڑی کے سارے ڈبے تلاش کر لئے اور احمد کو اپنے قریب تلاش کرنے کی کوشش نہیں کی اور آپ کو اوپر کی برتھ کا خیال نہیں آیا۔ یہ سُن کر احمد کے والد بہت شرمندہوئے۔خالد کے ابو نے انہیں مبارکباد دی پھر وہ سب کو”خداحافظ“ کہتے ہوئے گاڑی سے اتر کر اسٹیشن سے باہر چلے گئے۔

امیمہ عرفان (جماعت: ہشتم)
(رُباعیات) کرسی

فانی ہے یہ ارباب ِطرب کی کرسی

قائم و دائم ہے رب کی کرسی

جسٹس ہو، گورنر ہو یا ہو وزیرِاعظم

دیمک کی لپیٹ میں ہے سب کی کرسی

فاطمہ فراست ( جماعت: نہم )
عبادت کی چاہ

کوئی عبادت کی چا ہ میں رویا

کوئی عبادت کی راہ میں رویا

عجیب ہے یہ نمازِ صحبت کا سلسلہ

کوئی قضا کر کے رویا،کوئی ادا کر کے رویا

اُمامہ وحید (جماعت: نہم)
امتحان

امتحانوں کے دن تھے

کتابیں او ر ہم تھے

جب امی آئیں اور دیکھا کھیلتے

امی کی جھاڑ تھی اور ہم تھے

ہانی رشاد (جماعت: نہم)
خاموشی

فضول گوئی سے بہتر ہے خاموشی

ہے گر یہ عادت تو سمجھو خوش نصیبی

نادانی میں باتیں کچھ ایسی کر جاتے ہیں

دیتی ہیں یہ لوگوں کو نہ خوشی

سارہ ارشاد (جماعت :نہم )
بڑی بہن

موبائل فون پر کرتی ہیں خطاب

پسند ہے اُن کو بن کباب

نہیں لگتیں وہ ہماری بڑی بہن

آرام کرنے میں ہیں و ہ لاجواب

ماریہ کامران ( جماعت: نہم )
اسکول کی یادمیں

آتا ہے یاد مجھ کو وہ اسکول کا زمانہ

وہ ٹیچر کو ستانا پھر ڈانٹ کھا کے مسکرانا

وہ ایک دوسرے کو بچانا، وہ وعدے نبھانا

کوئی پریشانی ہو تو سب کا مِل کر سمجھانا

وہ ساتھ بیٹھ کر ہنسنا مسکرانا

شرارت کر کے سزا پانا پھر ہنس کر بھول جانا

وہ اسلامیا ت اور اردو کے پیریڈ میں سو جانا

گھنٹی بجتے ہی پیریڈ ختم کا نعرہ لگانا

نہ بھولیں گے وہ دن اور نہ وہ راتیں

اگر کچھ باقی ہے تو بس یادیں ہی یادیں

زینب فاطمہ (ہشتم ب)
زندگی خوبصورت ہے

پھولوں کی طرح گلزار ہے

خوشیوں کا ایک بازار ہے

بعض دفعہ غمگین ہے

بعض دفعہ حسین ہے

بے شمار ہیں تیرے رنگ

سب کو تو کردیتی ہے دنگ

محبتوں کا دربار ہے

نفرتوں کا شاہکار ہے

مِل جُل کر ہنساتی ہے

جُدا ہو کر رُلاتی ہے

اللہ کی دی ہوئی نعمت ہے

ہم سب کے لئے ایک رحمت ہے

عائشہ شارق (نہم)
(تبصرہ)

کتاب کا نا م: آزادی کا مسا فر

مصنف: ملک احمد سر ور

صفحات: ۲۷

نا شر: ؑعلی سعید

پبلشر: ا لبدر پبلیکیشنز

یہ کتاب نظر یا تی کہا نیوں پرمبنی ہے اور یہ اٹھا ر ہ ا بواب پر مشتمل ہے۔اسکا آغا ز بہت دلچسپ ہے۔اس میں ایک افغان بچے کا ذکرہے جس کو اللہ نے رو سی ظلم کے خلا ف سینہ سپر ہونے اور آزادی کے لیے لڑنے کی سو چ عطا کی۔ اس کہا نی میں آزا دی کی جدو جہد اور جہا د کے جذ بے کو بہتر ین انداز میں بیا ن کیا گیا ہے۔اور اندا زِ تحر یر بہت زبر دست ہے۔ بطورِ نمو نہ چند جملے پیش کر رہی ہوں۔

جس نے میری آ نکھیں کھو ل د یں۔”آزا دی کی جنگیں ا تنی مختصر نہیں ہو تیں کئی نسلیں آ نے وا لی نسلو ں کے لیے ْقر با نیا ں د یتی ہیں پھر کہیں جاکر آزادی کا سورج طلوع ہوتا ہے۔“ زندہ رہتے ہیں تو آزاد ، لڑتے ہیں تو اسلام اور و طن کی خا طر، مر تے ہیں تو صر ف ا للہ کی را ہ میں۔ اس میں افغانستان کے مجاہدین کی آزادی کے لئے جدوجہد اور ایمان کی پختگی مؤثر انداز میں بیان کی گئی ہے۔ ”ٓٓٓ وہ ا للہ کے علا وہ نہ تو کسی سے ڈرتا ہے اور نہ ہی کسی سے ا پنی زندگی کی بھیک ما نگتا ہے۔“ اس کہا نی میں و طن کی محبت کو ا تنی خو بصو رتی سے بیا ن کیا گیا ہے کہ ا فغا نستا ن کے مجا ہد ین میں ایسا جذبہ تھا ”جب تک ایک افغان بھی زند ہ ہے تو ا فغا نستان زند ہ ر ہے گا۔“

اس کے علاوہ کہا نی میں ا فغا نستا ن کے مجا ہد ین کی قر با نیا ں اور ان کا جذ بہ ایما ن وجہا د اتنا بلند د کھا یا گیا ہے کہ ان کی یہ سو چ تھی ” ا بھی تو جہا د کا ذائقہ چکھا ہے،مجا ہد ین کا شو قِ جہا د تو شہا دت کے بعد بھی ختم نہیں ہو تا۔“ مجا ہد ین نے د نیا پر ثا بت کر د کھا یا کہ فو لا د اور با رو د کے بل بو تے پر ا یما نی جذبوں کو شکست نہیں دی جا سکتی۔ اس کتا ب کی ا فا دیت یہ ہے کہ یہ کتا ب بہت کا ر آ مد ہے۔اس کتا ب میں ا فغا نستا ن کے مجا ہد ین کی جد و جہد کو بتا یا گیا ہے ا ور جہا د کے جذ بے کو ا بھا را گیا ہے۔ ا س کو پڑ ھنے سے ہمیں مجا ہد ین کی قر با نیوں کا پتہ چلتا ہے اور ا پنے ایما ن کی خا طر ظلم کے خلا ف سینہ سپر ہو نے اور آزادی کے لیے لڑ نے کی سو چ پیدا ہو تی ہے اور اس کتا ب میں ُ پر اثر انداز میں اللہ پر پختہ یقین، اسلا م کا بو ل با لا اور جذبہئ جہا د کو ظا ہر کیا گیا ہے۔اور ان کی بلند سو چ اور و طن کے لئے جا ن کی با زی لگا دینے کا جذبہ قا بلِ دید ہے۔جس سے ہمیں اپنے ملک کے لئے محبت اور آزادی کی قدر کا ا حساس ہو تا ہے۔

اس کتا ب میں مجاہدین کی جدوجہد کے مناظر کی تصا ویر چھا پ کر اسکو مز ید د لچسپ بنا یا جا سکتا ہے۔و یسے یہ کتا ب نوجوان نسل کے ایمانی جذبا ت کو بیدار کرنے والی ہے۔ دیکھا جائے تو یہ کتاب اصلاحی بھی ہے۔جس سے ہما رے اندرجذبہ جہا د بڑ ھتا ہے اوراللہ کی را ہ میں قربا ن ہو نے کا جذبہ پیدا ہو تا ہے۔میں مصنف ملک ا حمد سر ور کی تعریف کر تی ہوں جنہوں نے عمدہ الفا ظ کے چنا ؤ کے سا تھ اس کتا ب کوبہترین ا نداز میں تر تیب دیا۔

عیشہ تنزیل(نہم)
(زندگی کا یادگار دن)

ہر ایک کی زندگی میں یاد گار دن ہوتا ہے جس کو سوچ کر انسان ماضی میں چلا جاتا ہے۔ اِ سی طرح میری زندگی کا بھی ایک یاد گار دن ہے۔ جب میں اور میری بہن چھٹیوں میں نانی کے گھر پر ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے ہو ئے تھے۔ میں نے آپی سے کہا ”آپی مری چلیں“ تو انہوں نے کہا ”مری کوئی خالہ جی کا گھر نہیں ہے اور ویسے بھی تم وہاں جاکر کیا کروگی۔“ اچانک امّی جان نے کہا ”چھٹیاں ہیں وقت اچھا گزر جائے گا سب مل کر گھومیں گے پھریں گے، موسم سے لطف اندوز ہونگے۔ یہ سُننا تھا کہ ہم خوشی سے پھولے نہ سمائے اور اُچھلنے لگے۔ امّی ہماری خوشی دیکھ کر بے اختیار مسکرا اٹھیں اور کہا جلدی جلدی تیاری کرو تمہارے ماموں جان ٹکٹ لینے گئے ہوئے ہیں۔ ہم سب نے مل کر خوشی خوشی سامان پیک کیا اور دوسرے دن ۰۱ بجے ایئر پورٹ کے لئے روانہ ہوئے۔۱۱ بجے ہمارا جہاز روانہ ہوا ۔

تین گھنٹے کا سفر خیرو عافیت سے گزر گیا۔ اسلام آبا د میں ہم ماموں جان کے دوست کے گھر ٹہرے انہوں نے ہمارا پُرتپاک استقبال کیا۔ رات آرام کرنے کے بعد صبح مری کے لئے روانہ ہو گئے۔ مری پہنچ کر ہم دلفریب مناظر دیکھ کر سکتے میں آگئے اور بے ساختہ منہ سے نکلا سبحان اللہ! وہاں ہم نے مختلف مناظر کی تصویر کھینچی۔ برف سے کھیلے، مریم آپی نے تو حد ہی کر دی مجھ پر برف کے گولے پھینک کر میر ا ٹوپا ہی اُڑادیا ۔ ہم نے واپسی پر پارک کی سیر بھی کی، جہاں برف ہی برف تھی۔اس کے بعد ہم نے کھانا کھایا۔ جھولے پر بیٹھتے ہی ہمیں سردی کا احساس ہوا لہذا تھوڑا سا جھولنے کے بعد ہم نے ایوبیہ کا رُخ کیا۔ وہاں چیئر لفٹ پر سیر کا مزا ہی بڑا دلفریب تھا۔ جب بادل قریب سے گزرا تو ایسا محسوس ہو ا کہ کپڑے گیلے ہو گئے۔ ایوبیہ میں کافی بندر بھی نظر آئے جو عجیب عجیب حرکتیں کرتے ہوئے بڑے اچھے لگ رہے تھے۔ وہاں کے دلکش پہاڑ بڑے خوبصورت مناظرپیش کر رہے تھے۔ ان تمام مناظر میں ہم اتنا محو ہو گئے تھے کہ واپس آنے کو دل نہیں چاہ رہا تھا۔ مگر آنا تو تھا ہی

مری کے مناظر کو میں نے یادگار سیر کی حیثیت سے کیمرے میں قید کر لیا اور معلومات کو ڈائری میں قلم بند کر دیا۔ آخر میں اتنا ہی کہنا چاہونگی کہ ہمیں ہر جگہ کی سیر کر نی چاہیئے تاکہ ہماری معلومات میں اضافہ ہو اور ہم قدرتی مناظر سے لطف اندوز ہو کر اللہ کا شکر بھی ادا کریں۔

ربیعہ حسن(جماعت:ہفتم)
(گھر کی مر غی دال برا بر)

امّی! آج کھا نے میں کیا پکاہے؟بہت بھو ک لگ رہی ہے۔احمد نے امّی کو آواز لگا ئی جو با ور چی خا نے میں کھا نا پکا نے میں مصر وف تھیں۔ بیٹا! آج میں نے زبر دست قسم کی بر یا نی پکا ئی ہے۔امّی نے جواب دیا؛ چلو شا با ش! جلدی سے ہا تھ منہ دھولو میں میز پر کھا نا لگا رہی ہو ں۔ یہ کہتے ہو ئے ا مّی با ور چی خا نے میں چلی گئیں۔احمد جلدی سے ہا تھ دھو کر اور آ ستین چڑ ھا کر کر سی پر بیٹھ گیا۔پہلا لقمہ لیتے ہی امّی نے احمدسے بے تا بی سے پو چھا کہ کیسی لگی بر یانی؟ امّی اچھی تو ہے مگر با زار جیسی نہیں ہے۔احمد کی یہ با ت سن کر امّی کا دل ٹو ٹ گیا۔لیکن امی نے احمد پر ظا ہر نہیں کیا اور بو لیں کہ چلو آ ئندہ با زار جیسی اچھی سی بریانی پکاؤں گی۔ احمد کھا نے پینے کے معاملے میں بہت نخر ے کر تا تھااور اُسے بہت مشکل سے کھا نے پسند آتے تھے۔اور اگر اسکی پسند کا کھا نا نہ ہو تو وہ کھانا نہیں کھاتا تھا اور بھوکا ہی رہتا تھا۔امّی کی یہی کو شش ہو تی تھی کہ اُسے کھا نے پسند آئے۔اس لئے وہ اسکی پسند کے کھا نے بنا تیں مگر وہ با ر با ر اُن کے پکائے ہوئے کھا نے میں وہ نقص نکا لتا۔احمد کے لئے وہی مثال صادق آتی تھی ”گھر کی مر غی دال برا بر۔“اکثر و بیشتر وہ اُس کے لئے با زار سے کھا نے منگواتیں تا کہ وہ بھوکانہ رہے۔کھاناکھانے کے دوران وہ خوش ہوکربار باریہ جملے دہراتاکہ کیا پیزاہے!

احمد گھر میں صرف نخر ے کرتا اور پڑ ھائی میں بھی دل چسپی نہیں لیتا تھا۔اکثرو بیشتر اسکول سے اس کی شکا یتیں آتیں۔ان حا لا ت کے با عث ا مّی اور ابّو سخت پر یشان تھے۔لہذا ا حمد کے وا لدین نے اسکا شہر سے با ہر ہا سٹل میں دا خلہ کر وا دیا تھا۔احمد یہ د یکھ کر بہت پر یشان تھا۔وہ سمجھ رہا تھاکہ اُسے ابّو کی ڈا نٹ سے آزا دی مل جائے گی۔لیکن کچھ عرصے وہاں رہ کر اُسے اندازہ ہوا کہ ہاسٹل میں تو بہت سختی ہے۔وہاں کے نظم وضبط کے اُصول اور وقت کی پا بند ی پر عمل کر نا سب کے لئے لا زم تھا۔چند دن تو احمد بہت پر یشان ہو ا اور اُسے گھر وا لوں کی یا د آنے لگی۔ہا سٹل کے بد ذائقہ کھانے کھا کر اُسے اپنی امّی کی یا د آنے لگی جو اُس کے لئے بہت محبت سے کھا نے بناتی تھیں اور وہ نخر ے کر تا تھا۔احمد اکثر و بیشتر را ت کو لیٹتے وقت چھپ کر روتا اور گھروالوں کویادکرتا کچھ مہینوں کے بعد جب ا حمد چھٹیوں پر گھر آیا تو وہ بہت سد ھر چُکا تھا۔گھر وا لو ں نے بھی اُس سے مل کر یہی اندا زہ لگا یا کہ اب وہ بہت بدل چکا ہے۔

زینب خان (ششم الف)
(تکر یم ِ نسواں)

اسلام نے عو رت کو ہر رو پ اور ہر حیثیت میں تما م حقو ق کی حفا ظت کے سا تھ عزت واحترام بخشا ہے۔عو رت کا ہر روپ اسلام کے دا ئر ہ کا ر میں آتے ہی معزز ہو جا تا ہے۔پھر وہ رو پ چا ہے ما ں کا ہو،بیٹی کا ہو،بیو ی کا ہویا بہن کا۔ماں:۔ جنّت ماں کے قد موں کے نیچے ہے۔یعنی جس نے د نیا میں اپنی ما ں کو خو ش کر دیا اُس نے اللہ کو خو ش کر دیا۔

جس نے ما ں کے حقوق بحسنِ خو بی پو رے کر دیئے اُس نے گو یا جنّت ا پنے نا م کر لی۔پھر مزید رسول ﷺ نے فر ما یا کہ جس نے اپنی ما ں کو محبت بھر ی نظر سے د یکھا اُس نے حج کا ثواب حا صل کر لیا۔

بیٹی:۔ بیٹی کی پیدا ئش کی جب خبر ملی تو رسول ﷺ کا چہر ہ خو شی سے دمک ا ٹھا۔آپ حضر ت خد یجہ رضی اللہ عنہا کے پا س گئے ان کو مبا رک با د دی۔بیٹی کو گو د میں ا ٹھا یا اور سینے سے لگا یا اور اللہ کا شکر ادا کیا۔یہ اُس معا شرے کی با ت ہے جہاں لڑکیوں کو زندہ دفن کر دیا جا تا تھا۔ اور رسولﷺ نے فر ما یا کہ ”جس شخص کی کو ئی لڑکی ہو اور وہ اُسے زند ہ در گو ر نہ کر ے نہ ہی اُس سے حقارت آمیز سلو ک کر ے اور نہ ہی اپنے لڑکے کو اُس پر تر جیح دے اللہ اُس کو جنّت میں دا خل کر ے گا۔“ نیز فر ما یا کہ ”جس شخص کی تین لڑ کیاں ہو ں اور وہ اُن کو علم وادب سکھائے اور اُن کی پر ورش کر ے اور اُن پر مہر با نی کر ے اُس کے لئے ضر ور جنّت وا جب ہو جا تی ہے۔“

بہن:۔بہن کے ر شتے کو جو تقدس اسلام نے دیاکہ جس طر ح تین بیٹیوں کی کفا لت پر جنّت کا وعدہ کیا اسی طر ح اگر تین بہنیں کسی کی کفا لت میں آجا ئیں اور وہ اپنا فرض پو ری طرح ادا کر ے تو اُسے بھی جنّت کی بشا رت ہے۔ ایک صحا بی کا وا قعہ جو بخا ری شر یف میں ہے کہ ان کی نو بہنیں تھیں۔وا لدہ کے ا نتقال کے بعد ا نہوں نے صر ف اپنی بہنوں کی و جہ سے ایک بو ڑھی عو رت سے نکاح کر لیا جبکہ وہ خو د جوان تھے صرف اس لئے کہ میری بہنوں کو ایک شفیق عورت مل جا ئے جو اُن کا اچھی طرح سے خیا ل رکھ سکے۔

تر جمہ:۔ اور ا پنی بیو یوں سے ا چھا سلو ک کر و(سو ر ۃُ النساء) بیوی: بیوی کے و قا ر اور اُس کی منزلت کو با مِ عروج تک پہنچانے کے لئے اس کے سا تھ حسنِ سلو ک اور دل جو ئی کو شو ہر کی خو بی اور شرا فت کا معیار قرا ر دیا۔ آپ ﷺ نے فر ما یا کہ ”تم میں سب سے اچھا وہ ہے جو اپنے گھر وا لوں کے سا تھ اچھا ہے اور میں تم میں اپنے اہلِ خا نہ کے سا تھ سب سے اچھا ہوں۔“ نیز فر ما یا کہ ”دنیا سا ری کی سا ری متا ع ہے اور اسکی سب سے بہتر ین متا ع صا لح عو رت ہے۔

تحریم مرزا (ہشتم الف)
بلا عنوان۔۔۔

وہ ایک چمکتی ہوئی روشن صبح تھی جب درختوں سے روشنی کی کرنیں چھن چھن کر سر سبز گھاس کے کچھ گوشوں کو منوّر کر رہی تھیں۔ ابراہیم اپنے بھیڑوں کے ریوڑ کے ساتھ اس خوبصورت چراہ گاہ میں اپنے جانوروں کو چراہ رہا تھاکہ اس کی نظر سمندر سے ا ُ ٹھتی ہویُ لہروں پر پڑی۔

ابراہیم کا گھر اسی پہاڑی پر تھا جہاں وہ بھیڑوں کو چرا رہا تھا۔ اس کاگھر شاندار اور عالیشان تھا۔ پہاڑی پر سے جب اس کی نظر ان لہروں پر پڑتی ہے تو وہ چونک اٗٹھتا ہے کیونکہ گاؤ ں والے اسی ساحل سمندر کے پاس پکنک منا رہے تھے لیکن وہ ان لہروں سے نا واقف تھے جو ان کی موت کا باعث بن سکتی تھیں۔ وہ گا ؤ ں والوں کو خبردار کرنے کے لئے پہاڑی پر سے لوگوں کو آواز لگا ئی مگر پہاڑی اور سمندر کے مابین طویل فاصلے کے باعث گاؤ ں والوں کو ابراہیم کی آواز نہیں پہنچ رہی تھی۔طویل کوشش کے بعد گاؤ ں والوں کو ان خوفناک لہروں سے آگاہ کرنے کے لئے ابراہیم نے اپنے گھر کو آگ لگا دی۔ ابراہیم ایک رحم دل اور مددگار انسان تھااور گاؤ ں والوں کی مدد کرنا اوران کی جان بچانا اس کا فرض تھا اس لئے وہ اپنے گھر کو آگ لگا دیتا ہے تاکہ تمام گاؤ ں والے اس کے جلتے ہو ئے گھر کو دیکھ کر ابراہیم کی مدد کو دوڑیں مگر سچ تو یہ تھا کہ وہ اس طرح ان خوفناک لہروں کی گرفت سے بچ گئے۔اس طرح گاؤ ں والوں کی جان بچ گئی مگر ابراہیم کا گھر کافی حد تک جل چکا تھا۔یہ ا للہ کا شکر ہے کہ ابراہیم کے سازو سامان اور اہل و عیا ل کو کو ئی نقصان نہیں پہنچا۔ گاؤ ں والوں جلدی جلدی ابراہیم کے گھر پر پانی ڈ الا اور اسے مزید جلنے سے بچالیا۔ تمام گاؤ ں والوں کو جب حقیقت کا علم ہوتا ہے تو انہوں نے ابراہیم کا شکریہ ادا کیا اور اس کی مدد کے لئے کچھ پیسے وغیرہ بھی دیئے۔

اس کہانی سے یہ سبق ملتا ہے کہ ہمیں اپنے پڑوسیوں، ہمسایوں، اور دوسرے آس پاس کے لوگوں کی مدد کرنی چاہیے۔

”کیونکہ“

ہیں لوگ وہی جہاں میں اچھے
آتے ہیں جو کام دوسروں کے

زویا عامر(دہم)
(کورونا کی وبا سے تعلیمی نقصانات)

خوف و ہراس پھیلا ہے قُرب و جوار میں
جب سے وبا آئی ہے یہ اپنے دیار میں

اس وبا کا آغاز ۱۳.دسمبر ۹۱۰۲ کو چین کے شہر ووہان سے ہوا۔ چونکہ یہ وائرس ۹۱۰۲ میں دریافت ہوا۔ اس لئے اُسے covid-19 کا نام دیا گیا۔ گزشتہ دہائیوں میں مختلف وبائیں آئیں اور آکر چلی گیئں، لیکن اس وبا نے دنیا کے بڑے بڑے آقا ؤں کو جو نعوذ باللہ خدا بنے بیٹھے تھے اپنی اپنی طاقت کی بناء پر اور اسلحہ کی بنا ء پر دوسرے ممالک کو سر نگوں کر دیا کرتے تھے مگر یہ وائرس ایک شہر سے پوری دنیا میں اتنی تیزی سے پھیلا کہ لوگ سنبھل ہی نہ سکے اور پوری دنیا میں لاکھوں کی تعداد میں اموات ہوئیں اور ترقی یافتہ ممالک بھی اس پر قابو پانے میں ناکام رہے کورونا کی پہلی،دوسری اور اب لوگ تیسری لہر کا شکار ہو رہے ہیں ۔ مگر شکر الحمد للہ اب اس وبا پر قابو پانے کے لئے بڑی جدوجہد کے بعد ویکسین ایجاد ہو چکی ہے اور نہ صرف پوری دنیا میں بلکہ پاکستان میں بھی عام و خاص کو ویکسین لگائی جارہی ہے تاکہ اس وبا سے لوگوں کو بچایا جاسکے۔مگر جہاں اس وبا نے ہر شعبہئ زندگی کو متاثر کیا وہیں تعلیمی شعبہ بھی بہت متاثر ہو ا، جس کا ازالہ نا ممکن ہے۔نا صرف بچوں کا مستقبل داؤ پر لگا ہوا ہے بلکہ بہت سے اساتذہ بھی اپنی نوکری سے محروم ہو چکے ہیں جس کی وجہ ان کا پورا خاندان متاثر ہو رہا ہے۔

بچوں کی صلاحیتیں تعلیمی میدان میں بد سے بد تر ہو رہی ہیں۔ مستقل اسکول کی چھٹیوں کی وجہ سے طلبہ کی دلچسپی پڑھائی سے دن بہ دن کم ہو رہی ہے اور اب تو صورتِحال یہ ہے کہ بچے امتحان سے جی چرانے لگے ہیں۔ ظاہر ہے کلاس میں جس طرح اساتذہ آمنے سامنے بیٹھ کر طلبہ کو پڑھاتے تھے اس کی جگہ آن لائن کلاسز نے لے لی۔ جہاں اپنی مرضی کے کام کر رہے ہیں، چاہا تو کلاس لے لی ورنہ سوتے رہ گئے۔آن لائن امتحانات سے نقل کے رجحانات مزید بڑھ گئے ہیں طلبہ فزیکل امتحان دینے کو تیا ر نہیں ہیں۔

اس وباء نے اب تک طلبہ کو موبائل اور دیر تک سونے سے اتنا قریب کر دِیا ہے کہ اس سے الگ کرنا آنے والے وقت میں بہت مشکل ہو جائے گا۔ ہر ایک سے یہی کہا جا رہا ہے گھر میں رہیں تاکہ محفوظ رہ سکیں۔ رونا تو اس بات کا ہے کہ حکومت بھی تعلیمی نظام کو بہتر کرنے میں ناکام نظر آرہی ہے۔

سب کو معلوم ہے باہر ہوا قاتل ہے
یونہی قاتل سے الجھنے کی ضرورت کیا ہے

اللہ ربّ ا لعز ت سے دعا ہے کہ پوری دنیا کے تمام مسلمانوں کو اپنے حفظ و امان میں رکھے تاکہ ہم سب صحت مند مسلمان بن کر اپنے ملک اور ملّت کا نام رو شن کر سکیں۔امین

ایمن قیّوم( ہشتم)
( خط بنام اُمّتِ مسلمہ)

خستہ حال کمرہ

غزہ، فلسطین

تاریخ: ۰۳. مئی ۱۲۰۲

میرے پیارے مسلمان بہن بھائیوں!

السّلام علیکم:۔

میں یہ خط ایک ایسے ملک اور ایسے شہر سے لکھ رہی ہوں،جہاں وحشی یہودی قابض ہیں۔ ان درندوں نے میرے والدین چھین لئے میر ے بہن بھائیوں کو یرغمال بنالیا ہے۔ یہ سب سُن کر کچھ دیر تو آپ کو احساس ہوگا۔ پھر آپ ہمارے لئے دعا کریں گے اور مالی امداد بھجوادیں گے۔ لیکن میرا امّتِ مسلمہ سے ایک سوال ہے کہ کیا صرف یہ سب کافی ہے؟ کیا صرف احتجاج کرنے سے ہمارے شہیدوں کا انتقام لیا جا سکتا ہے؟

میرے پیارے مسلمان بھائیوں اپنی اس گہری نیند سے خود بھی بیدار ہو جاؤ اور دوسروں کو بھی جگاؤ اور جو ذمہ د اری اور فرائض بحیثیت مسلمان تم پر عائد ہیں اور جس کا جواب تمہیں اپنے اللہ کے سامنے دینا ہے۔ یہ مقصد اُسی وقت پورا ہو سکتا ہے جب ہم مسلمانوں کو ظلم سے نجات دلانے اور اقا متِ دین کے لئے سب مل کر ایڑی چوٹی کا زور لگائیں گے۔ ہمیں اس بات کو جاننا ہوگا کہ اتنی کثیر تعداد کے با وجود ہم مسلمان اتنے ذلیل و خوار کیوں ہیں؟ باطل قوتیں ہمارے اوپر مسلط ہیں کہیں دہشت گردی کے ذریعے اور کہیں ملکی نظام کو پوری طرح اپنی مٹھی میں رکھ کر ہم پر اپنی دہشت بٹھا رہے ہیں۔

اگر مسلمان یوں ہی ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے رہے تو ایک دن ختم ہو جا ئیں گے۔ یہ جان لو کہ تمہارے دین کی سلامتی میں ہی تمہاری سلامتی ہے۔انشاء اللہ وہ وقت بھی ضرور آئے گاجب نہ صرف کشمیر اور فلسطین آزاد ہوں گے بلکہ سورج طلوع ہونے والی زمین سے لے کر سورج غروب ہونے والی زمین تک اسلام کا پرچم سَر بلند ہو گا۔ کوشش ہماری ہو گی اور فتح اللہ کی۔ اللہ ُ اکبر

فقط

ایک فلسطینی شہری

(تحریر کنندہ: ھدیٰ عمرانجماعت دہم )
(دورِ حاضر میں بڑھتا ہوا ”اسلامو فوبیا“)

تقریبََا ہر دن اخبارات و رسائل میں مسلمانوں کو دہشت گردی کا قصور وار ٹھہر ایا جاتا ہے ا ور اس کی واحد وجہ مسلمانوں سے بڑھتی ہوئی دشمنی یا ”اسلامو فوبیا “ ہے۔سوال یہ اٹھتا ہے کہ اسلام دشمنی یا اسلامو فوبیا ہے کیا؟ لفظ ”اسلام یعنی سلامتی کا دین اور یونانی لفظ فوبیا کا مجموعہ ہے۔ اس سے غیرمسلم اسلامی تہذیب سے ڈرنے کا مطلب لیتے ہیں۔ مغرب کی طرف سے اکثر غیر مسلموں کو اسلام کے خلاف بھڑکایا جاتا ہے اور پھر ان کے دِماغ میں منفی جذبات پروان چڑھاکر انہیں مسلمانوں کے قتل پر آمادہ کیا جاتا ہے۔

اسلامو فوبیا کی اصطلاح کے استعمال کا آغاز ۶۷۹۱ سے ہوا اور پھر بیسویں صدی کی ا بتدائی دہائیوں میں کم ہوا اور پھر ۱۱. ستمبر ۱۱۰۲ کو ورلڈٹریڈسینٹر پر حملوں کے بعد کثرت سے اس لفظ کا استعمال اور پھر مسلمانوں کو نفسیاتی، تہذیبی اور اقتصادی طور پر ہراساں کرنے کا یہ دور مغرب کی طرف شروع ہو چکاہے اور وہاں کی عوام میں مسلمانوں کے خلاف منفی جذبات پروان چڑھائے گئے۔یہی وجہ ہے کہ نیوزی لینڈ میں ۵۱ مارچ ۹۱۰۲ جمعۃ ا لمبارک کو کرائسٹ چرچ جیسا المناک سانحہ پیش آیا۔ جس میں ایک دہشت گرد نے مسجد کے اندرنماز ادا کرتے ہوئے مسلمانوں کو شہید کردیا۔

موجودہ سال پر نظر ڈالیں تو فرا نس کے صدر کا اسلام دشمن بیان و اقدامات کسی سے ڈھکے چھپے نہیں ابھی مسلمانوں کے جذبات ٹھنڈے بھی نہیں ہوئے تھے کہ۸ جون ۱۲۰۲ کو کینیڈا میں پیش آنے والا واقعہ جو مسلمانوں کے لیے لمحہ فکریہ ہے ایک ۰۲ سالہ مجرم نے پاکستانی نژادمسلمان فیملی کو کچل دینا شامل ہے۔

جس میں ایک ہی خاندان کی ۳ نسلوں کو ٹرک کے نیچے کچل کر شہید کر دیا ہواور وہ نو عمر بچہ جو اس حادثے سے بچ کرہسپتال میں زیرِ علاج ہے اس کے ذہن پر کیا اثرات مرتّب ہوئے ہوں گے۔ مسلمانوں کے ساتھ مغرب کے معتصبانہ روّیے کا یہ واقعہ منہ بولتا ثبوت ہے۔

جب کہ اسلام کی تعلیمات انسان دوستی، محبت، رواداری، بقائے باہم کی علمبر دار ہیں۔اسلام کی حقیقی تعلیم پر اغیار نے بڑی ہوشیاری سے پردہ ڈال دیا ہے۔ فلسطین کے نہتے مظلوم عوام ”یا“کشمیر میں حصولِ آزادی کے لیے سرگرم مسلمان آج بھی نام نہاد حکمرانوں کے زیرِعتاب ہیں۔آخر میں یہ عرض کردوں کہ آج مسلمانوں کا دفاع کرنے کے لئے ایسے جرأتمندانہ اقدام کی ضرورت ہے جو اسلام کے خلاف کیے جانے جانے والے ناپاک عزائم کاپردہ چاک کرسکیں اور اسلام کی اصل روح پر روشنی ڈال کر مغربی سازشوں پر قد غن لگانا ہی وقت کی اہم ضرورت ہے اس کے لیے ہمیں تحریری اورتقریری دونوں اعتبار سے مسلح ہونا ضروری ہے۔

مریم حسن (جماعت: دہم)
شدّت پسندی : مسلمانوں کا شیوہ ؟ (اس الزام کی حقیقت)

”اگر اپنے عقائد کے تحفظ کے لئے احتجاج کرنا شدّت پسندی کے زمرے میں آتا ہے، تو کیوں اظہار ِ رائے کی بے جا آزادی متنازع سمجھی نہیں جاتی؟“

گزشتہ ایک عرصے سے اخبارات کی شہ سُرخی میں، تمام ذرائع ابلاغ کے ذریعے ایک ہی نکتہ منسائے شہود پر لائی گئی کہ دنیا میں ایک گروہ ایسابھی پایا جاتا ہے جو اپنے عقائد کو لے کر دنیا میں ؎ دہشت گردی جیسے عناصر کو فروغ دے رہا ہے اور ان کی یہ شدت پسندی عوام سے اظہارِ رائے کی آزادی چھین سکتی ہے۔ جی ہاں ! میں یہ بات کر رہی ہوں ان فرانسیسی صدر میکرون کی جن کے نزدیک کسی کے دینی عقائد کو مجروع کرناتو جائز ہے، مگر احتجاج ناقابلِ برداشت ہے۔اُن کے ایک شہری نے طالبِ علموں کو تعلیم دیتے ہوئے آپ ﷺ کے نازیبا خاکے پیش کئے اور یہی ترغیب دی کہ ہر شخص اپنے خیالات کا اعلانیہ اظہار کر سکتا ہے، کسی پر کوئی پابندی نہیں۔ تو کیا مسلمان اس بات پر احتجاج بھی نہ کرتے؟

جب کہ دنیا کے قانون کے مطابق کسی کے دینی عقائد، ثقافت، مقدس مقامات او رمعاشرت پر حملہ آور ہونے کی اجازت نہیں۔کیونکہ عقائد کی پیروی ہر انسان کا بنیادی حق ہے جس کے متعلق وہ بہت حسّاس ہوتا ہے۔ اب ذرا سوچئے کہ کیا میکرون کے کہے گئے وہ الفاظ کہ اسلام کے پیرو کار دراصل شدّت پسندوں کا گروہ ہے جو زمین میں قتل و فساد برپا کرنا چاہتے ہیں۔ یہ پہلا موقع نہیں تھا، اس سے قبل ۳۱۰۲ ”چارلی ہیندئو “ نامی رسالے میں بھی آپ ﷺ اور انبیاء کرام کے خاکے شائع کئے اور ان کا مذاق بنایا،ناموسِ رسالتؐ پر انگلیاں اٹھائیں گئیں مگر مسلمانوں کے شور و غُل پر سڑکوں پر لاکھوں فرانسیسی اس رسالے کی حمایت میں نکل کھڑے ہوئے اور اسلام پر شدّت پسندی کی ترغیب دینے کا دھبہ لگ گیا، مسلمانوں کو دقیا نوسی کہا گیا، اب بھلا خود ہی سوچئے! دنیا میں انصاف کے علمبردار ہی ایسے ردِّ عمل کا اظہار کریں گے تو خاک دنیا کا نظام چلے گا۔ آزاد خیالی و جدّت پسندی کے نام پر یہ کائنات کے خالق کو چیلینج کرنا چاہتے ہیں، مگر مومن تو وہ ہے جو اپنے اللہ و رسول ﷺ کی محبت میں دنیا سے بے تعلق ہو جائے، ان کے ناموس کی خاطر طاغوت سے لڑ جائے۔ اپنے سواء السبیل پر قائم رہنے کے لئے تمام خطرات سے نبردآزما ہو، مگر اس یقین کے ساتھ کہ اللہ اس کے دل کے حال اور نیّت سے واقف ہے اور بے شک.........

”مدد تو خدا ہی کی طرف سے ہے اور اللہ مسلمانوں کا حامی و ناصر ہے۔“

آج کے اس دور ِ جدید میں اپنے عقائد پر مستحکم رہنا کسی طوفان میں کشتی چلانے سے کم نہیں، ایسے خوف میں رہنا کہ دنیا کی بڑھتی موجیں کہیں کشتی کو ڈبو نہ دیں اور ہمارا نام و نشان نہ رہے۔ بلکہ ہمیں تو چپو اس طرح چلانا ہے کہ ہر آنے والی لہر ہمارے لئے آزمائش کے بجائے صبر و تقویٰ میں اضافے کا باعث ہو اللہ تعالیٰ سورۃ احزاب میں فرماتا ہے۔

” اے پیغمبرؐ ! خدا سے ڈرتے رہنا اور کافروں و منافقوں کا کہنا نا ماننا۔ بیشک خدا جاننے والا و حکمت والا ہے۔“

غرض یہ کہ اپنے جنون اور فتنے میں یہ اتنے باغی ہو چکے ہیں کہ دنیا کے قانون کی بھی ان کے نزدیک کوئی حیثیت نہیں، کیا ہی اچھا ہو کہ اقبال کایہ شعر ہمارے لئے زادِ راہ ہو۔

یقیں محکم، عمل پیہم، محبت فاتحِ عالم
جہادِ زندگانی میں ہیں یہ مردوں کی شمشیریں

مریم قیصر (دہم)
(ہم خوار ہوئے تارکِ قرآن ہو کر)

ہیں آ ج کیوں ذلیل کہ کل تک نہ تھی پسند
گستاخیِ فرشتہ ہماری جناب میں

آ ج مسلمان کہیں ظلم کا شکار ہیں تو کہیں عیش و عشرت کو پانے کے لیے کبھی اپنے بھائیوں کا حق مار رہے ہیں تو کبھی اسرائیل کو ایک آزاد ریاست کے طور پر ماننے کے لیے تیار ہیں۔ کہیں اگر کوئی مسلم ملک مسلمانوں کے حق کے لیے آواز اٹھائے تو وہیں یا تو ” آئی ایم ایف“ کا چابک پڑتا ہے یا پھر جنگ کی دھمکیاں ملنے لگتی ہیں۔ غرض اسلام اور مسلمان اپنی زوال کی آخری حد تک جا پہنچے ہیں۔وہ مسلمان کہاں ہیں جن کی ہیبت سلطنتِ روم پر بیٹھی تھی (سپر پاور) جنھوں نے ایران کے آتش کدوں کو ٹھنڈا کردیا تھا۔جو دین کی خاطر اپنے گھڑے دریا میں اتار دیتے تھے، وہ جن کے لیے دولت کچھ نہ تھی، وہ جن سے منگول اور صلیبی خوف کھاتے تھے،جو یہودیوں کو دربدر کر دیتے تھے، جن کے سینوں میں قرآن اور ہاتھ میں تلوار ہوتی تھی۔ جن کے لیے اپنی زندگی سے زیادہ دوسرے مسلمانوں کی زندگی اہم ہوتی یھی۔جو اللہ کی خاطر اپنے سر تن سے جدا کروادیتے تھے۔ وہ جن کے لیے گیدڑ کی سو سالہ زندگی سے اہم شیر کی ایک دن کی زندگی ہوتی تھی اور وہ جو کشتیاں جلا دیتے تھے اور ایک مظلوم عورت کی پکار پر اپنی زندگی داؤ پر لگادیتے تھے۔

آخر کہاں گئے وہ مسلمان جو دینِ اسلام کی عزت، وقار اور بقا کی خاطر خون اور آگ کے سمندر پار کرتے تھے۔ کہاں ہیں وہ عظیم جرنیل اور سپاہی، کہاں ہیں اسلام کے بیٹے؟؟ کہاں ہیں محمود غزنوی طارق بن زیاد ، سلطان عبدالحمید ، محمد بن قاسم، ٹیپوسلطان ، سلطان محمد فاتح ، یوسف بن تاشقین اور مجدد الف ثانی؟؟ تھے تو آبا وہ تمھارے ہی مگر تم کیا ہو ہاتھ پہ ہاتھ دھرے منتظرِفرد ا ہو آج ہمارا المیہ یہ ہے کہ کل تک جو ہم سے ڈرتے تھے جن کے دلوں پر ہماری ہیبت طاری تھی آج وہ مسلمانوں کو اپنے اشاروں پر چلا رہے ہیں۔اور اس سب کا ایک سبب ہے جو اقبالؒ نے کیا کمالِ مہارت سے بیان کیا ہے۔

وہ زمانے میں معزز تھے مسلماں ہوکر
اور تم خوار ہوئے تارکِ قرآن ہوکر

یہ سب قرآن سے دوری کا نتیجہ ہے نہ ہی ہم میں حیدرِ کرّارؓ کا سا فقر ہے کہ دنیاوی سازو سامان نہ ہوتے ہوئے بھی صبرو شکر سے زندگی گزاریں نہ ہی عثمان غنیؓ کی سی دولت ہے جو ہر پل اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کو تیار رہتے تھے،اور نہ ہی ہم نے کہیں عمر بن خطابؓ جیسا عدل و انصاف قائم کیا ہے۔ ہم صرف نام نہاد مسلمان ہیں جن سے افغانستان، کشمیر اور فلسطین کے لیے دو روپے بھی جیب سے نہیں نکلتے، ہم وہ ہیں جو موت کے نام سے ڈرتے ہیں۔جن کی روح جہاد کا نام سن کر فنا ہو جاتی ہے اور افسوس! ہم ہو ہیں جن کا نہ تو روحانی اور نہ عملی طور پر اپنے آباؤ اجداد سے تعلق ہے۔ہمارے آباؤ اجداد تو چلتے پھرتے قرآن تھے وہ ہر معاملے میں قر آن سے رہنمائی لیتے تھے۔ اور ہم!! ہم تو سونے چاندی کے بدلے قرآن کی آیات اور اسلام کی عزت بیچ دیتے ہیں۔

کیا ہم اہل ہیں ان کے مقام کے؟ اقبالؒ نے کیا خوب کہا ہے

باپ کا علم نہ بیٹے اگر ازبر ہو
پھر پسر قابلِ میراث پدر کیوں کر ہو

رومان علی(جماعت: دہم)
(ہم خوار ہوئے تارکِ قرآن ہو کر)

ہیں آ ج کیوں ذلیل کہ کل تک نہ تھی پسند
گستاخیِ فرشتہ ہماری جناب میں

آ ج مسلمان کہیں ظلم کا شکار ہیں تو کہیں عیش و عشرت کو پانے کے لیے کبھی اپنے بھائیوں کا حق مار رہے ہیں تو کبھی اسرائیل کو ایک آزاد ریاست کے طور پر ماننے کے لیے تیار ہیں۔ کہیں اگر کوئی مسلم ملک مسلمانوں کے حق کے لیے آواز اٹھائے تو وہیں یا تو ” آئی ایم ایف“ کا چابک پڑتا ہے یا پھر جنگ کی دھمکیاں ملنے لگتی ہیں۔ غرض اسلام اور مسلمان اپنی زوال کی آخری حد تک جا پہنچے ہیں۔

وہ مسلمان کہاں ہیں جن کی ہیبت سلطنتِ روم پر بیٹھی تھی (سپر پاور) جنھوں نے ایران کے آتش کدوں کو ٹھنڈا کردیا تھا۔جو دین کی خاطر اپنے گھڑے دریا میں اتار دیتے تھے، وہ جن کے لیے دولت کچھ نہ تھی، وہ جن سے منگول اور صلیبی خوف کھاتے تھے،جو یہودیوں کو دربدر کر دیتے تھے، جن کے سینوں میں قرآن اور ہاتھ میں تلوار ہوتی تھی۔ جن کے لیے اپنی زندگی سے زیادہ دوسرے مسلمانوں کی زندگی اہم ہوتی یھی۔جو اللہ کی خاطر اپنے سر تن سے جدا کروادیتے تھے۔ وہ جن کے لیے گیدڑ کی سو سالہ زندگی سے اہم شیر کی ایک دن کی زندگی ہوتی تھی اور وہ جو کشتیاں جلا دیتے تھے اور ایک مظلوم عورت کی پکار پر اپنی زندگی داؤ پر لگادیتے تھے۔

آخر کہاں گئے وہ مسلمان جو دینِ اسلام کی عزت، وقار اور بقا کی خاطر خون اور آگ کے سمندر پار کرتے تھے۔ کہاں ہیں وہ عظیم جرنیل اور سپاہی،کہاں ہیں اسلام کے بیٹے؟؟ کہاں ہیں محمود غزنوی، طارق بن زیاد ، سلطان عبدالحمید ، محمد بن قاسم ، ٹیپوسلطان ، سلطان محمد فاتح ، یوسف بن تاشقین اور مجدد الف ثانی؟؟

تھے تو آبا وہ تمھارے ہی مگر تم کیا ہو
ہاتھ پہ ہاتھ دھرے منتظرِفرد ا ہو

آج ہمارا المیہ یہ ہے کہ کل تک جو ہم سے ڈرتے تھے جن کے دلوں پر ہماری ہیبت طاری تھی آج وہ مسلمانوں کو اپنے اشاروں پر چلا رہے ہیں۔اوراس سب کا ایک سبب ہے جو اقبالؒ نے کیا کمالِ مہارت سے بیان کیا ہے۔

آج ہمارا المیہ یہ ہے کہ کل تک جو ہم سے ڈرتے تھے جن کے دلوں پر ہماری ہیبت طاری تھی آج وہ مسلمانوں کو اپنے اشاروں پر چلا رہے ہیں۔اوراس سب کا ایک سبب ہے جو اقبالؒ نے کیا کمالِ مہارت سے بیان کیا ہے۔

وہ زمانے میں معزز تھے مسلماں ہوکر
اور تم خوار ہوئے تارکِ قرآن ہوکر

یہ سب قرآن سے دوری کا نتیجہ ہے نہ ہی ہم میں حیدرِ کرّارؓ کا سا فقر ہے کہ دنیاوی سازو سامان نہ ہوتے ہوئے بھی صبرو شکر سے زندگی گزاریں نہ ہی عثمان غنیؓ کی سی دولت ہے جو ہر پل اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کو تیار رہتے تھے، اور نہ ہی ہم نے کہیں عمر بن خطابؓ جیسا عدل و انصاف قائم کیا ہے۔ ہم صرف نام نہاد مسلمان ہیں جن سے افغانستان، کشمیر اور فلسطین کے لیے دو روپے بھی جیب سے نہیں نکلتے، ہم وہ ہیں جو موت کے نام سے ڈرتے ہیں۔

جن کی روح جہاد کا نام سن کر فنا ہو جاتی ہے اور افسوس! ہم ہو ہیں جن کا نہ تو روحانی اور نہ عملی طور پر اپنے آباؤ اجداد سے تعلق ہے۔ ہمارے آباؤ اجداد تو چلتے پھرتے قرآن تھے وہ ہر معاملے میں قر آن سے رہنمائی لیتے تھے۔ اور ہم!! ہم تو سونے چاندی کے بدلے قرآن کی آیات اور اسلام کی عزت بیچ دیتے ہیں۔ کیا ہم اہل ہیں ان کے مقام کے؟ اقبالؒ نے کیا خوب کہا ہے

باپ کا علم نہ بیٹے اگر ازبر ہو
پھر پسر قابلِ میراث پدر کیوں کر ہو

رومان علی (جماعت: دہم)